جو اپنی خواہشوں میں تو نے کچھ کمی کر لی تو پھر یہ…

جو اپنی خواہشوں میں تو نے کچھ کمی کر لی
تو پھر یہ جان کہ تو نے پیمبری کر لی

تجھے میں زندگی اپنی سمجھ رہا تھا مگر
ترے بغیر بسر میں نے زندگی کر لی

پہنچ گیا ہوں میں منزل پہ گردشِ دوراں
ٹھہر بھی جا کہ بہت تو نے رہبری کر لی

جو میرے گاؤں کے کھیتوں میں بھوک اگنے لگی
مرے کسانوں نے شہروں میں نوکری کر لی

جو سچی بات تھی وہ میں نے برملا کہہ دی
یوں اپنے دوستوں سے میں نے دشمنی کر لی

مشینی عہد میں احساسِ زندگی بن کر
دکھی دلوں کے لیے میں نے شاعری کر لی

غریب شہر تو فاقے سے مر گیا عارفؔ
امیر شہر نے ہیرے سے خودکشی کر لی
عارفؔ شفیق

You have reduced your desires a bit.
Then know that you have done a pambris

I thought you were my life but
I lived my life without you.

I have reached the destination of rotation.
Wait, you have guided me a lot

The hunger that started growing in the fields of my village
My farmers have done their job in the cities

What was true, I said it brutally.
This is how I made enmity with my friends

In the machining covenant, by becoming the feeling of life
I did poetry for the sad hearts.

The poor city died of hunger Arif
Rich city committed suicide with diamonds
Arif Shafiq

Translated


جواب چھوڑیں