مے کشی کا لطف تنہائی میں کیا، کچھ بھی نہیں یار پ…

مے کشی کا لطف تنہائی میں کیا، کچھ بھی نہیں
یار پہلو میں نہ ہو جب تک، مزہ کچھ بھی نہیں

تم رہو پہلو میں میرے، میں تمہیں دیکھا کروں
حسرتِ دل اے صنم! اس کے سوا کچھ بھی نہیں

حضرتِ دل کی بدولت میری رسوائی ہوئی
اس کا شکوہ آپ سے اے دلربا!! کچھ بھی نہیں

قسمتِ بد دیکھئے، پوچھا جو اس نے حالِ دل
باندھ کے ہاتھوں کو میں نے کہہ دیا"کچھ بھی نہیں"

آپ ہی تو چھیڑ کر پوچھا ہمارا حالِ دل
بولے پھر منہ پھیر کر "ہم نے سنا کچھ بھی نہیں"

کوچۂ الفت میں انساں دیکھ کر رکھے قدم
ابتدا اچھی ہے اس کی، انتہا کچھ بھی نہیں

(حسین باندی شباب بنارسی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

Enjoyed suicide in loneliness, nothing
Nothing fun unless you're on the side

You stay beside me, I'll see you
The desire of heart O beloved! Nothing but this

I was disgraced because of the Hazrat heart
He complains to you O dear!! Nothing

Look at the bad luck, what he asked about the condition of heart
Tied hands I said ′′ nothing ′′

You teased me and asked me about my heart
Then they turned away and said ′′ We heard nothing ′′

In the love of love, look at the human being and take steps
The beginning is good, the end is nothing

(Hussain Bundy Shabab Banarsi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated

جواب چھوڑیں