اب عمر کی نقدی ختم ہوئی اب ہم کو ادھار کی حاجت ہے…

اب عمر کی نقدی ختم ہوئی
اب ہم کو ادھار کی حاجت ہے
ہے کوئی جو ساھو کار بنے
ہے کوئی جو دیون ہار بنے
کچھ سال مہینے لوگو
پر سود بیاج کے دن لوگو
ہاں اپنی جان کے خزانے سے
ہاں عمر کے توشہ خانے سے
کیا کوئی بھی ساھو کار نہیں
کیا کوئی بھی دیون ہار نہیں
جب نام ادھار کا آیا ہے
کیوں سب نے سر کو جھکایا ہے
کچھ کام ہمیں بھی نپٹانے ہیں
جنھیں جاننے والے جانیں ہیں
کچھ پیار دلار کے دھندے ہیں
کچھ جگ کے دوسرے دھندے ہیں
ہم مانگتے نہیں ہزار برس
دس پانچ برس دو چار برس
ہاں سود بیاج بھی دے لیں گے
ہاں اور خراج بھی دے لیں گے
آسان بنے دشوار بنے
پر کوئی تو دیون ہار بنے
تم کون تمہارا نام ہے کیا
کچھ ہم سے تم کو کام ہے کیا
کیوں اس مجمعے میں آئی ہو
کچھ مانگتی ہو کچھ لائی ہو
یا کاروبار کی باتیں ہیں
یہ نقد ادھار کی باتیں ہیں
ہم بیٹھے ہیں کشکول لئے
سب عمر کی نقدی ختم کئے
گر شعر کے رشتے آئی ہو
تب سمجھو جلد جدائی ہو
اب گیت گیا سنگیت گیا
ہاں شعر کا موسم بیت گیا
اب پت جھڑ آئی پات گریں
کچھ صبح گریں کچھ رات گریں
یہ اپنے یار پرانے ہیں
اک عمر سے ہم کو جانیں ہیں
ان سب کے پاس ہے مال بہت
ہاں عمر کے ماہ و سال بہت
ان سب نے ہم کو بلایا ہے
اور جھولی کو پھیلایا ہے
تم جاؤ ان سے بات کریں ہم
تم سے نہ ملاقات کریں
کیا بانجھ برس کیا اپنی عمر کے پانچ برس
تم جان کی تھیلی لائی ہو کیا پاگل ہو
جب عمر کا آخر آتا ہے ہر دن صدیاں بن جاتا ہے
جینے کی ہوس ہی نرالی ہے ، ہے کون جو اس سے خالی ہے
کیا موت سے پہلے مرنا ہے تم کو تو بہت کچھ کرنا ہے
پھر تم ہو ہماری کون بھلا ہاں تم سے ہمارا رشتہ کیا
کیا سود بیاج کا لالچ ہے کسی اور اخراج کا لالچ ہے
تم سوہنی ہو من موہنی ہو تم جا کر پوری عمر جیو
یہ پانچ برس یہ چار برس چِھن جائیں تو لگیں ہزار برس
سب دوست گئے سب یار گئے تھے جتنے ساھو کار گئے
بس یہ اک ناری بیٹھی ہے یہ کون ہے کیا ہے کیسی ہے
ہاں عمر ہمیں درکار بھی ہے ہاں جینے سے ہمیں پیار بھی ہے
جب مانگیں جیون کی گھڑیاں گستاخ انکھیاں کتھے جا لڑیاں
ہم قرض تمہارا لوٹا دیں گے کچھ اور بھی گھڑیاں لا دیں گے
جو ساعتِ ماہ و سال نہیں وہ گھڑیاں جن کو زوال نہیں
جو اپنے جی میں اتار لیا لو ہم نے تم سے ادھار لیا
( ابنِ انشاء )

Now the age cash is over
Now we need a loan
Is there anyone who can become a sahoo car
Is there anyone who can become Deon Necklace
Few years months guys
On the day of interest, people.
Yes from the treasure of my life
Yes from the toilet of age
Isn't there any sahoo car
Isn't there any Deon defeat?
When the name of borrowed has come
Y ' all have bowed their heads
We also have to do some work.
Those who know know know
Some love are the povs of heart
Some of the world are other povs
We don't ask for a thousand years
Ten five years two four years
Yes, we will also give interest and interest.
Yes and will pay tribute too
Become easy and become difficult
But someone should be defeated.
Who are you, what is your name?
Do you have any work with us?
Why did you come to this gathering?
You ask for something, have you brought something?
Or are they talking about business
These are the talks of cash loan
We are sitting for Kashkol
Finished the cash of all ages
If there is a relationship of poetry
Then understand that there should be separation soon
Now the song is gone, the song is gone.
Yes, the season of poetry has passed.
Now Panipat has fallen, the caste has fallen.
Some mornings fall some nights
These are our old friends
We have known from an age.
They all have a lot of wealth
Yes, months and years of age are very much
They all have called us
And spread the swing
You go talk to them, we
Don't meet you
What a barren year, what five years of his age
You have brought the bag of life, are you mad?
When the end of age comes, every day becomes centuries
The lust of living is unique, who is empty from it
Do you have to die before death, you have to do a lot.
Then you are mine, who is good? Yes, what is our relationship with you?
Is it the greed of interest and interest? Is it the greed of another elimination?
You are beautiful, you are beautiful, you go and live your whole life
If these five years and these four years are snatched, it will take thousand years.
All the friends went, all the friends went, all the friends went away.
This woman is just sitting, who is she, what is she, how is she?
Yes, we need age, yes, we also love living.
When you ask for the watches of life, where did you fight with the rude eyes
We will repay your debt and bring some more watches
Those watches which do not fall for the month and year.
Whatever you take in your heart, we have borrowed it from you
(Son of Insha)

Translated


جواب چھوڑیں