ہری چنداختر ۔۔۔۔ جو ٹھوکر ہی نہیں کھاتے وہ سب کچھ…

ہری چنداختر ۔۔۔۔
جو ٹھوکر ہی نہیں کھاتے وہ سب کچھ ہیں مگر واعظ
وہ جن کو دست رحمت خود سنبھالے اور ہوتے ہیں
معرفت بھرا یہ شعر پنڈت ہری چند اختر کا ہے
منیر نیازی ، حبیب جالب ، اور حفیظ ہوشیار پوری کی طرح پنڈت ہری چند اختر کا تعلق بھی ہوشیار پور سے تھا آپ اختر ہوشیار پوری کے نام سے معروف تھے۔ان کی شاعری حیران کن حد تک متاثر کرتی ہے۔ آپ اردو ، عربی اور انگریزی پر مکمل عبور رکھتے تھے۔وہ صحافی تھے اور ان کے ادارئیے لوگ نہ صرف شوق سے پڑھتے بلکہ اس دور میں محفوظ کر لیتے جب سوائے ہاتھ سے لکھنے کے کوئی ذریعہ نہ تھا۔۔۔۔اختر صاحب نے بہت عرصہ لاہور میں رہنے کے باوجود ترقی پسند تحریک اور حلقہ اربابِ ذوق میں دلچسپی نہیں لی اور اپنے قلم کی حرمت کو قائم رکھا۔ لکھنے والوں کے لئے ان کا ایک فرمان بےحد اہمیت رکھتا ہے۔۔۔۔۔
کہ " لکھنے والے کو یہ تو علم ہوتا ہے کہ کیا لکھنا ہے مگر اس بات سے بہت سے لکھنے والے نا آشنا ہوتے ہیں کہ کیا نہیں لکھنا" ۔۔۔۔
ہری چند اختر ایک مرتبہ جوش سے ملنے گئے جاتے ہی پوچھا کہ " جناب! آپ کے مزاج کیسے ہیں"۔۔۔۔جوش نے کہا کہ اختر صاحب! آپ کو اردو بالکل نہیں آتی ، میرا مزاج تو ایک ہی ہے لیکن آپ نے بہت سے مزاجوں کا پوچھ لیا"۔۔۔ کچھ دن گزرے تو دونوں پِھر ملے تو جوش نے پنڈت جی کو گفتگو میں بتایا " جگن ناتھ آزاد کے والد صاحب تشریف لائے تھے تو آپ کا ذکر بھی ہُوا"۔۔۔۔۔پنڈت نے جھٹ سے پوچھا کہ " آزاد کے کتنے والد آئے تھے"۔۔۔۔۔۔ 😊۔۔۔پنڈت ہری چند اختر نامور قومی شاعر جناب حفیظ جالندھری کے شاگرد تھے اس لئے پنڈت کی شاعری جہانِ حیرت کی حقیقتوں میں گم کر دیتی ہے۔ ۔۔۔۔ایک دل چسپ واقعہ اور بھی ملتا ہے۔۔۔۔۔۔۔
دہلی میں منعقدہ ایک مشاعرے میں معروف شاعر جناب عبدالحمید عدم کی ملاقات پنڈت جی سے پہلی بار ہُوئی۔۔۔عدمؔ فرطِ محبت کے باعث ان سے لپٹ گئے اور کہنے لگے" اختر! مَیں عدمؔ ہوں"۔۔۔۔۔ہری چند کی بذلہ سنجی مشہور تھی۔۔ کہنے لگے " اگر یہی عدمؔ ہے تو وجود کیا ہو گا"۔۔۔۔۔۔۔علاوہ ازیں ۔۔۔۔
مشفق خواجہ کو ہری چند اختر کے معروف کلام کا ایک شعر سنایا گیا جس میں پنڈت صاحب نے دوزخ کو مذکر باندھا ہے۔۔تو خواجہ صاحب بولے " اگر ہری چند نے دوزخ کو مذکر باندھا ہے تو دوزخ ان کے لئے مذکر لیکن ہمارے لئے مؤنث ثابت ہو گا"۔۔۔۔۔کچھ نقاد حضرات ایک جگہ بیٹھے ایک شاعر کی مدح سرائی میں مصروف تھے۔ایک نے کہا " موصوف" اتنے بڑے شاعر ہیں کہ حکومت نے انہیں بیرون ملک بھر بھجوایا ہے۔۔۔۔۔ہری چند اختر بھی اس محفل میں موجود تھے۔۔کہنے لگے کہ " اگر دوسرے مُلک میں جانے سے کوئی بڑا شاعر بن جاتا ہے تو میرے والد تو مُلک عدم جا چکے ہیں مگر خُدا گواہ ہے کہ وہاں ایک شعر بھی موزوں نہیں کر سکے"۔۔۔۔ پنڈت ہری چند اختر نے فَیض احمد فَیض کے اشعار پیروڈی میں بھی منتقل کئے۔اور بچوں کے لئے بھی لکھا ان کی ایک نعت۔۔۔
(سبز گنبد کے اشارے کھینچ لائے ہیں ہمیں۔۔۔۔) بھی بہت مشہور ہُوئی۔ ۔۔ آج ہری چند اختر کا یومِ وفات ہے۔۔۔۔ان کی ایک غزَل پیش خدمت ہے(حکیم خلیق الرحمٰن) 👎👎
جہاں تجھ کو بٹھا کر پوجتے ہیں پوجنے والے
وہ مندر اور ہوتے ہیں شوالے اور ہوتے ہیں
دہان زخم سے کہتے ہیں جن کو مرحبا بسمل
وہ خنجر اور ہوتے ہیں وہ بھالے اور ہوتے ہیں
جنہیں محرومیٔ تاثیر ہی اصل تمنا ہے
وہ آہیں اور ہوتی ہیں وہ نالے اور ہوتے ہیں
جنہیں حاصل ہے تیرا قرب خوش قسمت سہی لیکن
تری حسرت لیے مر جانے والے اور ہوتے ہیں
جو ٹھوکر ہی نہیں کھاتے وہ سب کچھ ہیں مگر واعظ
وہ جن کو دست رحمت خود سنبھالے اور ہوتے ہیں
تلاش شمع سے پیدا ہے سوز ناتمام اخترؔ
خود اپنی آگ میں جل جانے والے اور ہوتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔(اِنتخاب حکیم خلیق الرحمٰن)۔۔۔۔۔۔۔۔

Green Chandaktar
Those who do not stumble are everything but preacher
Those whom the hands of mercy take care of themselves.
This poetry is of Pandit Hari Chand Akhtar full of knowledge.
Like Munir Niazi, Habib Jalib, and Hafeez Hoshiar Puri, Pandit Hari Chand Akhtar belonged to Hoshiarpur. You were well known as Akhtar Hoshiar Puri. Their poetry affects astonishingly. You Urdu, Arabic He had a complete transition. He was a journalist and his agencies would not only read with passion but protected in an era when there was no source of writing except with hand Akhtar Sahib progressed despite living in Lahore for a long time Didn't take interest in the choice movement and the constituency of Arbab-e-Zauq and kept the sanctity of his pen. One of his words is very important for the writers
That ′′ The writer knows what to write, but many writers are unaware of what not to write
Hari Chand Akhtar once went to meet Josh and asked ′′ Sir! How are your mood Josh said Mr. Akhtar! You don't know Urdu at all, I have the same mood but you have asked about many moods After a few days, both of them met again, Josh told Pandit ji in a conversation ′′ Jaganath Azad's father had come. So you were also mentioned Pandit immediately asked, ′′ How many fathers of Azad had come 😊 Pandit Hari Chand Akhtar was a student of famous national poet Mr. Hafeez Jalandhari, that's why Pandit's poetry was amazing. It makes us lost in reality one more heart-hearted incident is found
In a poetry held in Delhi, the famous poet Mr. Abdul Hameed Adam met Pandit ji for the first time. Adam hugged him because of love and said ′′ Akhtar! I am Adam Hari Chand's Bazla Sanji was famous They said ′′ If this is Adam then what will be the existence except
Mushfiq Khawaja was recited a poetry of the well-known poetry of Hari Chand Akhtar in which Pandit Sahib has made hell a masculine. So Khwaja Sahib said, ′′ If Hari Chand has made hell a masculine, then hell is a masculine for them, but for us it is a It will be proved some critics were busy in singing a poet sitting at one place. One said ′′ The ′′ is such a great poet that the government has sent him abroad Hari Chand Akhtar also in this gathering. They were present. They said that ′′ If someone becomes a great poet by going to another country, my father has gone away from the country, but God is witness that he could not even make a single poetry suitable there Pandit Hari Chand Akhtar has fayez Ahmad Fayez's poems were also transferred to parody and wrote a Naat for the children
(We have drawn the gestures of the green dome) also became very famous Today is the death anniversary of Hari Chand Akhtar Presenting a Ghazal of him (Hakim Khaliq-ur-Rehman) 👎👎
Where those who worship you sit and worship you
Those temples are different, they are different.
Those who are called welcome to the wound
Those daggers are different, they are different spears.
Those who have the real desire of deprived effectiveness
Those sighs are different, those canals are different.
Those who get close to you may be lucky but
There are others who die for your longing.
Those who do not stumble are everything but preacher
Those whom the hands of mercy take care of themselves.
The search is born from the candle. Inhuman Akhtar.
There are others who burn in their own fire.
(Waiting for Hakim Khaliq-ur-Rehman)

Translated


جواب چھوڑیں