بڑے شوق سے سن رہا تھا زمانہ ہمی سو گئے داستاں کہت…

بڑے شوق سے سن رہا تھا زمانہ
ہمی سو گئے داستاں کہتے کہتے
..
ثاقب لکھنوی کی پیدائش
January 02, 1869

ثاقب لکھنوی کا اصل نام مرزا ذاکر حسین قزلباش تھا اور وہ 2 جنوری 1869ء کو آگرہ میں پیدا ہوئے تھے۔ بچپن ہی سے انہیں شعر و شاعری کا شوق تھا جو عمر کے ساتھ ساتھ بڑھتا رہا یہاں تک کہ ہر وقت فکر سخن میں غلطیاں رہنے لگے۔ اپنے اس شوق کی وجہ سے زندگی کے راستے میں اکثر ٹھوکریں کھائیں اور تکالیف اٹھائیں۔ حصولِ معاش کے لیے پہلے کچھ تجارت کا سلسلہ شروع کیا مگر اس میں گھر کی ساری جمع پونجی گنوادی۔ پھر 1906ء میں سفارت خانہ ایران میں ملازم ہوگئے۔ 1908ء میں مہاراجہ محمود آباد سے تعلق ہوگیا اور میر منشی کا عہدہ ملا تقسیم ہند کے بعد جب ریاست ختم ہوئی تو ثاقب صاحب بھی گوشہ نشین ہوگئے اور یاد الٰہی میں دن گزار کر 24 نومبر 1949ء کو انتقال کیا۔ شاعری کا ایک دیوان ’’ دیوان ثاقب‘‘ یادگار چھوڑا۔ ثاقب لکھنوی کے بعض اشعار اردو شاعری میں ضرب المثل کی حیثیت رکھتے ہیں۔ مثلاً
بڑے شوق سے سن رہا تھا زمانہ
ہمی سو گئے داستاں کہتے کہتے
……٭٭٭……
نشیمن نہ جلتا، نشانی تو رہتی
ہمارا تھا کیا ٹھیک، رہتے نہ رہتے
……٭٭٭……
باغ باں نے آگ دی جب آشیانے کو مرے
جن پہ تکیہ تھا، وہی پتے ہوا دینے لگے
……٭٭٭……
مٹھیوں میں خاک لے کر دوست آئے وقت دفن
زندگی بھر کی محبت کا صلا دینے لگے
……٭٭٭……
کہنے کو مشت پر کی اسیری تو تھی،
مگر خاموش ہوگیا ہے چمن بولتا ہوا
……٭٭٭……
دل کے قصے کہاں نہیں ہوتے ہاں،
وہ سب سے بیاں نہیں ہوتے

The world was listening with great interest
We slept telling the story
..
The birth of Saqib Lucknowi
January 02, 1869

Saqib Lucknowi's original name was Mirza Zakir Hussain Qazlbash and was born in Agra on 2 January 1869 He was fond of poetry and poetry since his childhood which grew with age even thought all the time. Mistakes started to remain in words. Often stumble and suffer in the way of life because of my passion. Started a few trades in the first way to achieve livelihood but lost all the household deposit. Then in 1906 The embassy was employed in Iran. In 1908, he belonged to Maharaja Mahmoodabad and Mir Munshi got the position after partition of India. When the state ended, Saqib Sahib also became a retreat and spent the day in remembrance of Allah on November 24 Died on 1949 A diwan of poetry ′′ Diwan Saqib ′′ left a memorable one. Some of Saqib Lucknowi's poems are multiplicated in Urdu poetry. For example
The world was listening with great interest
We slept telling the story
……٭٭٭……
The aina would not burn, the sign would have remained
What was our right, we would not have lived
……٭٭٭……
The garden set fire when the nest died.
Those who were leaning on, the same leaves started giving air
……٭٭٭……
Friends came with dust in their fist and buried at the time
Started giving the reward of life's love
……٭٭٭……
To say, it was the captivity of masturbation.
But the garden has become silent while speaking.
……٭٭٭……
There are no stories of heart, yes,
They don't express at all

Translated


جواب چھوڑیں