غزل اس نے چھیڑی مجھے ساز دینا ذرا عمرِ رفتہ کو آو…

غزل اس نے چھیڑی مجھے ساز دینا
ذرا عمرِ رفتہ کو آواز دینا

صفی لکھنوی کا یومِ پیدائش
Jan 03, 1862

سید علی نقی نام۔ صفی تخلص، تاریخ ولادت ۳ جنوری ۱۸۶۲ء مطابق یکم رجب ۱۲۷۸ھ اور قدیم وطن لکھنو ہے۔ والد مولوی سید فضل حسین آخری تاجدار اودھ کے بھائی شاہزادہ سلیمان قدر بہادر کے معتمد تھے۔ ۵ سال کی عمر میں مکتب نشیں ہوئے اور مولوی نجم الدین کاکوروی سے فارسی اور مولوی احمد علی محمد آبادی سے درسیات عربی و فارسی کی تکمیل کی ۔ فن طب کی تعلیم حکیم سید باقر حسین صاحب سے ہوئی۔ امین آباد نائٹ اسکول اور کیننگ کالجیٹ اسکول لکھنو میں انٹرنس تک انگریزی پڑھی ۔ اس کے بعد لال اسکول اور برانچ اسکول متعلقہ کیننگ کالج لکھنو میں انگریزی پڑھانے پر مامور ہو گئے۔ جون ۱۸۸۳ء سے اودھ کے محکمہ دیوانی میں مستقل ملازمت کا سلسلہ شروع ہوا۔ اور سلطان پور رائے بریلی وغیرہ مقامات میں مختلف عہدوں پر رہ کر ۱۹۲۲ء میں سرکاری ملازمت سے پنشن حاصل کی۔ کلام پڑھنے کا طریقہ خاص رہاہے۔ جو تحت اللفظ اور ترنم کے بین بین ہے۔ انجمن بہار ادب کے صدر بھی رہ چکے ہیں۔ ان کی مثنوی تنظیم الحیات پر ہندستانی اکاڈمی الہ آباد نے بحیثیت اعلیٰ نمونہ شاعری کے پانچ سو کی رقم بطور صلہ مرحمت کی ہے۔ قومی نظموں کے اعتراف میں پبلک نے انہیں’’ لسان القوم‘‘ کا لقب دیا ہے اور کئی بار طلائی تمغے پیش کئے گئے ہیں۔ فارسی کلام کا خاصا مجموعہ ہے اور کافی تعداد میں متفرق نظمیں اور ایک دیوان طبع ہو چکا ہے۔صفی لکھنوی کی وفات 15 جون 1950 ء میں ہوئی۔

پیغام زندگی نے دیا موت کا مجھے
مرنے کے انتظار میں جینا پڑا مجھے
*
خود زباں دانی میں وہ اھل۔ زباں سے کم نہیں
جو زمیں شعر ہے ، وہ آسماں سے کم نہیں
*
آبِ حیات

دیکھئے کیوں،کوئی تربت ہوگی
دیکھ کر اور ندامت ہو گی

نزع کا وقت ہے بیٹھے رہیئے
آپ اُٹھے تو قیامت ہو گی

زنگ آلود اِک آئینہ سہی
دل کی آخر کوئی قیمت ہوگی

خواب دیکھا ہے کہ مرمر کے جئے
کسی کافر سے محبت ہو گی

نہ تو واعظ کو خبر ہے نہ مجھے
کسے دوزخ ، کسے جنت ہو گی

دل میں رکھئے تو کدورت کہلائے
مُنہ سے نکلے تو شکایت ہو گی

زہر ہے زہر صفی آبِ حیات
زندگی بڑھ کے مصیبت ہوگی
*
غزل اس نے چھیڑی مجھے ساز دینا
ذرا عمرِ رفتہ کو آواز دینا

قفس لے اڑوں میں، ہوا اب جو سنکے
مدد اتنی اے بال و پرواز دینا

نہ خاموش رہنا مرے ہم صفیرو
جب آواز دوں ، تم بھی آواز دینا

کوئی سیکھ لے دل کی بے تابیوں کو
ہر انجام میں رنگِ آغاز دینا

دلیلِ گراں باریِ سنگِ غم سے
صفی ٹوٹ کر دل کا آواز دینا
*
تڑپ کے رات بسر کی جو اک مہم سر کی
چھُری تھی میرے لئے جو شکن تھی بستر کی

ہوا گمان اسی شوخ سست پیماں کا
اگر ہو اسے بھی زنجیر ہل گئی درکی

اسی طرف ترے قرباں، نگاہ شرم آلود
مجھی پہ تیز ہو یہ باڑھ کند خنجر کی

سجائی حضرت ِ واعظ نے کس تکلف سے
متاعِ زہد و ورع سیڑھیوں پہ منبرکی

عبور بحرِ حقیقت سے جب نہیں ممکن
کنارے بیٹھ کے لہریں گنوں سمندر کی

سُنے گا کون ، سنی جائے گی صفی کس سے
تمہاری رام کہانی یہ زندگی بھر کی
*
کوئی آباد منزل، ہم جو ویراں دیکھ لیتے ہیں
بحسرت سو چرخِ فتنہ ساماں دیکھ لیتے ہیں

نظر حسن آشنا ٹھہری ، وہ خلوت ہو کہ جلوت ہو
جب آنکھیں بند کیں، تصویرِ جاناں دیکھ لیتے ہیں

وہ خود سر سے قدم تک ڈوب جاتے ہیں پسینے میں
بھری محفل میں جو ان کو پشیماں دیکھ لیتے ہیں

ٹپک پڑتے ہیں شبنم کی طرح بے اختیار آنسو
چمن میں جب کبھی گلہائے خنداں دیکھ لیتے ہیں

اسیران ستم کے پاسبانوں پر ہیں تاکیدیں
بدلتے ہیں جو پہرا قفل زنداں دیکھ لیتے ہیں

صفی رہتے ہیں جان و دل فدا کرنے پر آمادہ
مگر اُس وقت جب انساں کو انساں دیکھ لیتے ہیں
*
دردِ آغاز محبت کا اب انجام نہیں
زندگی کیا ہے، اگر موت کا پیغام نہیں

کیجئے غور تو ہر لذت دنیا ہے فریب
کون دانہ ہے یہاں پر جو تہِ دام نہیں

ہے تنزل کہ زمانے ترقی کی ہےکفر
وہ کفر اب اسلام وہ اسلام نہیں

کون آزاد نہیں حلقہ بگوشوں میں ترے
نقش ، کس دل کے نگینے پہ ترا نام نہیں

نارسیدہ ہے، ترا میوہ جنت ، زاہد
پختہ مغزوں کو تلاش ثمر خام نہیں

یہی جنت ہے جو حاصل ہو سکونِ خاطر
اور دوزخ یہی دنیا اگر آرام نہیں

شعر گوئی کے لئے بس وہی موزوں ہے صفی
جس کو جز فکر سخن اور کوئی کام نہیں
*
طالب ِ دید پہ آنچ آئے یہ منظور نہیں
دل میں ہے ورنہ وہ بجلی جو سرِ طور نہیں

دل سے نزدیک ہیں آنکھوں سے بھی کچھ دور نہیں
مگر اس پہ بھی ملاقات انہیں منظور نہیں

ہم کو پروانہ و بلبل کی رقابت سے غرض
گل میں وہ رنگ نہیں، شمع میں وہ نور نہیں

خلوت دل نہ سہی، کوچہ شہ رگ ہی سہی
پاس رہ کر نہ سہی آپ سے کچھ دور نہیں

ذوق پابند وفا کیوں رہے محروم جفا
عشق مجبور سہی حسن تو مجبور نہیں

تابشِ حسن نے جب ڈال دئیے ہوں پردے
ممکن آنکھوں سے علاج دل رنجور نہیں

لائو میخانے ہی میں کاٹ نہ دیں اتنی رات
مسجدیں ہو گئیں معمور، یہ معمور نہیں

چھیڑ دے ساز انا الحق جو دوبارہ سرِ دار
بزم رنداں میں اب ایسا کوئی منصور نہیں

کبھی، کیسے ہو صفی، پوچھ تو لیتا کوئی
دل وہی کامگر اس شہر میں دستور نہیں

He started the poem, give me instrument
Give a call to the slowly life.

Birthday of Safi Lucknowi
Jan 03, 1862

Syed Ali Naqi Nam. Safi Taklis, date of birth 3 January 1862 according to 1278st Rajab 5 AH and ancient homeland Lucknow. Father Maulvi Syed Fazal Hussain was the trustworthy of the brother of the last Tajdar Awadh, Shahzada Su He attended a school at the age of years and completed his education in Arabic and Persian from Maulvi Najamuddin Kakorwi and Maulvi Ahmad Ali Muhammad Abadi. He was taught the art of medicine by Hakim Syed Baqir Hussain Sahib. Aminabad Night School and Canning College School Lucknow I studied English till interns. After that lal school and branch schools became english in relevant canning college lucknow. From June 1883, a permanent job started in Dewani department of Awadh. And Sultanpur Rai Bareilly etc. Received pension from government job in 1922 by staying in various positions in places. The method of reading the poetry is special. The interpretation of Taht-al-tnẓy̰m and Tarnam. He has also been the president of Bihar Literature. His Masnavi Organization The Hindustani Academy on Al-Hayat Allahabad has given a reward of five hundred as a great sample of poetry. In the acknowledgement of national poems, the public has given them the title of ′′ Lisan Al-Qum ′′ and has been presented with gold medals many times. There is a special collection of Persian poetry and a number of different poems and a diwan. Safi Lucknowi died on June 15, 1950

Life gave me the message of death
I had to live waiting to die
*
He is not less than the people of the tongue in the tongue.
The earth which is poetry is no less than the sky
*
Water of life

See why, there will be a turbat
Seeing it will be more shameful

It's time for Naza, stay tuned.
If you get up, the doomsday will come.

Rusty is a mirror
There will be a price for the heart

I have dreamed that I should live a marble.
Will fall in love with an infidel

Neither the preacher knows nor me
Who will be hell, who will be heaven

If you keep it in your heart, you will be called power
There will be a complaint if it comes out of the mouth

Poison is poison, the water of life.
Life will be more trouble
*
He started the poem, give me instrument
Give a call to the slowly life.

The cage is in the fly, the wind is now listening to it
Help me so much O ball and flight

Don't be silent my friends
When I call you, you also call me

Someone learn the impatience of the heart
Giving a start in every end.

Heavy argument from the stone of sorrow
Safi break and call your heart
*
Spent the night in a long time, a campaign of head.
It was a knife for me that was broken in the bed

The thought of this vivid slow scale.
Even if it is, the chain will be shaken.

On the same side your closeness, your sight is shameful
This big dagger should be sharp on me.

How did the preacher decorate him?
The enjoyment of Zahid and the pulpit on the stairs.

When the transition from the sea of reality is not possible
The waves of the sea are sitting on the shore.

Who will listen, who will be heard from Safi
Your Ram story of a lifetime
*
Any inhabited destination, when we see the desolation
Hundreds of people see the sedition of mischief.

The sight of beauty is familiar, whether it is seclusion or light.
When I close my eyes, I see the picture of my beloved.

They themselves drown in sweat from head to step
Those who see them regret in a full gathering

Tears drop like dew.
Whenever you see the dungs in the garden

Emphasis are on the protectors of captivity.
Those who change the guards, they see the prison locks.

Safi stays ready to die.
But at that time when humans see humans
*
The beginning of the pain of love is not the end.
What is life, if not the message of death

If you think, every pleasure of the world is a deception
Who is the grain here that is not a price

It is a decay that the time of development is disbeliever
That disbelief is not Islam now.

Who is not free in your constituency?
Impression, on which heart your name is not there

Your fruit is heaven, Zahid
The search for the firm mugs is not Samar Kaw

This is Paradise which is achieved for peace.
And hell is this world if there is no rest

Safi, only he is suitable for poetry.
The one who has no other work to think about words.
*
It is not acceptable that there is a fire on the seeker of sight.
There is electricity in the heart, otherwise it is not in the head

We are close to the heart, not even far from the eyes
But they don't accept meeting on this too.

We need to get the love of the nightingale.
There is no color in the garden, there is no light in the candle

Don't be a sincerity of heart, even if it is a jugular
Don't stay close, nothing is far from you

Why should the taste of loyalty remain deprived of disloyalty
If love is helpless, beauty is not helpless.

When Tabish Hassan has put the curtains
It is possible to cure the eyes, the heart is not sad.

Don't spend so much night in the bar
Mosques have become full, they are not full

Tease the instrument Anna ul Haq who is the head again
There is no such Mansoor in Bazm-e-Randan

Sometimes, how are you Safi, someone would have asked
The heart is the same but there is no rule in this city.

Translated


جواب چھوڑیں