" پسِ چلمن " چھپا کے منہ کو جو آنچل میں…

" پسِ چلمن "

چھپا کے منہ کو جو آنچل میں رو رہی ہو تم
مچلتے اشک کہیں دل کا راز کھول نہ دیں

تمہیں یہ رنج کہ رسم و رواج کی دنیا
تمہارے خواب کی رعنائیوں کو لوٹ گئیں
مجھے یہ غم کہ تمنا کی وہ حسیں جنت
جو ایک عمر کا حاصل تھی، مل کے چھوٹ گئی

بہار آتے ہی پھولوں کا نام لے لے کر
سمو دئے گئے شعلے تمہارے سینے میں
مجھے بھی بادۂ گلگوں کا آسرا دے کر
جلا دیا گیا برسات کے مہینے میں

تمہارے ہونٹ پہ مہریں، مری زباں پہ سکوت
تمہارا درد بھی رسوا، مری وفا بھی نڈھال
میں ایک ٹوٹا ستارہ، تم اک اداس سی رات
میں اک تپا ہوا صحرا، تم ایک زخمی غزال

قریب آؤ کہ ان بے قرار راتوں میں
مری نگاہ نئے خواب بن رہی ہے آج
تمہارے ماتھے پہ میری بجھی بجھی امید
کچھ ایسا لگتا ہے افشاں سی چن رہی ہے آج

تم اپنے جوڑے میں گوندھو مری اداس شبیں
میں اپنی نظم کے اشعار میں پرو لوں تمہیں
تم اپنے ہونٹوں کی محراب میں سجا لو مجھے
میں اپنے فن کی جواں روح میں سمو لوں تمہیں

تمہارا تلخ تبسم ، مرے حزیں نغمے
نفس کی آگ میں تپ کر شرارا بن جائیں
تمہاری شام پہ میری دھواں دھواں صبحیں
جھلک کے میکدۂ نو بہار بن جائیں

(ظفر گورکھپوری)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

′′ Behind the blinds ′′

Hiding your face that you are crying in the veil
Let the tears not open the secret of the heart

You are sad that the world of customs and customs
The dreams of your dreams have been robbed.
I have this beautiful paradise of sorrow and desire
What was the gain of a lifetime, left after meeting

As soon as spring comes, take the name of flowers
The flames have been put in your chest
Give me the support of the clouds.
Burnt in the month of rainy

Stamp on your lips, silence on my tongue
Your pain is also disgraceful, my loyalty is also nervous
I am a broken star, you are a sad night
I am a hot desert, you are an injured Ghazal

Come closer to these restless nights
My eyes are becoming new dreams today
My extinguished hope on your forehead
It seems that she is picking up a little sky today.

My sad nights are lost in your couple.
I will take you in the poetry of my poem
You decorate me in the arch of your lips
I will hold you in the young soul of my art

Your bitter smile, my beautiful songs
Become a lion by burning in the fire of your soul
My smoke smoke morning on your evening
Become a new spring by glimpse of a glimpse

Zafar Gorakhpuri)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں