طفیل ہوشیار پوری کی برسی January 04, 1993 طفیل ہ…

طفیل ہوشیار پوری کی برسی
January 04, 1993

طفیل ہوشیار پوری 17 جولائی 1914 کو پیدا ہوئےاور 4 جنوری 1993 کو انتقال ہوا۔
واسطہ ای رب دا توں جاویں وے کبوترا،___چٹھی میرے ڈھول نوں پچاویں وے کبوترا
اللہ کی رحمت کا سایا، توحید کا پرچم لہرایا___اے مردِ مجاہد جاگ ذرا، اب وقتِ شہادت ہے آیا

آج ان نغموں کے خالق طفیل ہوشیار پوری کی25 ویں برسی ہے
طفیل ہوشیار پوری 17 جولائی 1914 کو پیدا ہوئےاور 4 جنوری 1993 کو انتقال ہوا۔
طفیل ہوشیار پوری نےعملی زندگی کا آغاز معلمی سے کیا۔ بعد میں فلمی دنیا اور مشاعروں کے ہوگئے۔ ماہنامہ ’’محفل‘‘ اور ہفت روزہ ’’صاف گو‘‘ جاری کئے ۔ کوئی مشاعرہ ان کے بغیر مکمل نہیں ہوتا تھا۔ حکومتِ پاکستان نے انہیں بعد از مرگ تمغۂ حسنِ کارکردگی کا اعزاز دیا ۔

بے قرار، ریحانہ، چپکے چپکے، پرائے دیس مین، گلنار، شمی، دلا بھٹی، چن ماہی، سر فروش، روحی، وعدہ، شہری بابو، مٹی دیاں مورتاں، قسمت کی کامیابی میں طفیل ہوشیار پوری کے گانوں کا بھی حصہ تھا۔
طفیل ہوشیار پوری کے مجموعہ ہائے کلام :
میرے محبوب وطن، جامِ مہتاب، ساغرِ خورشید، شعلۂ جام، تجدیدِ جام، تجدیدِ شکوہ، رحمتِ یزداں

کچھہ اور مقبول نغمات :
نی سوہے چوڑے والئے ( شمی)
راتاں میریاں بنا کے ربا نھیریاں، نصیباں والے تارے ڈب گئے ( شہری بابو)
اکھاں کھول کے پچھان، میں ہوگئی آں جوان ( گڈی گڈا)
ساڈے انگ انگ وچ پیار نے پینگھاں پائیاں نے (چن ماہی)
بُندے چاندی دے سونے دی نتھہ لے کے (چن ماہی)
تینوں چم چم دل نال لاواں ، چٹھئیے سجناں دئیے (چن ماہی)
ماہی موت دا سنیہا دتا گھل وے (چن ماہی)
ساڈیاں نظراں توں ہویوں کاہنوں دور دس جا ( زلفاں)
ناں ناں ناں چھڈ میری بانہہ (زلفاں)
کرے ناں بھروسہ کوئی دنیا دے پیار دا ( مٹی دیاں مورتاں )


جواب چھوڑیں