ﯾﮧ ﻣﺮﺍ ﮔﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ’ ﮔﮭﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ہے اس ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﺳﻤﺖ ﺳﻔﺮ…

ﯾﮧ ﻣﺮﺍ ﮔﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ’ ﮔﮭﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ہے
اس ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﺳﻤﺖ ﺳﻔﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ﮨﮯ

ﺩﺷﺖ ﻣﯿﮟ ﺩُﻭﺭﻭﮦ ﭨﯿﻠا ﺩﯾﮑﮭﻮ
ﺍﯾﮏ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﺑﮭﻨﻮﺭ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ﮨﮯ

ﺍﯾﮏ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ﮨﮯ ﻓﻘﻂ
ﺍﯾﮏ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ہے
۔
ﯾﮧ ﺟﻮ ﭼُﺒﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺑﮩﺖ ﻟﻮﮔﻮں کو
مجھ ﭘﮧ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﺍ ﺍﺛﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ﮨﮯ
۔
ﺩﮨﺮ ﺑﮯ ﺭﻧﮓ ﻧﻄﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ
ﺟﯿﺴﮯﯾﮧ ﺧﻮﺍﺏ ﻧﮕﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ﮨﮯ

ﭼِﮑﻨﯽ ﻣﭩّﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ لگتا ہے
ﺗﯿﺮﺍ ﮐﺮﺩﺍﺭﻣﮕﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ہے

سنّت ِقیس ادا کرتی ہے
دشت در سفر ریت کا ہے

ﯾﮧ ﺑﮕُﻮﻟا ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺗﻮﻗﯿﺮ!
ﻏﻮﺭسےدیکھ ﺷﺠﺮ ﺭﯾﺖ ﮐﺎ ﮨﮯ۔

(ﺗﻮﻗﯿﺮ ﻋﺒﺎّﺱ)



جواب چھوڑیں