اپنی طلب کا نام ڈبونے کیوں جائیں مے خانے تک تشنہ …

اپنی طلب کا نام ڈبونے کیوں جائیں مے خانے تک
تشنہ لبی کا اک دریا ہے شیشے سے پیمانے تک

حسن و عشق کا سوز- تعلق سمتوں کا پابند نہیں
اکثر تو خود شمع کا شعلہ بڑھ کے گیا پروانے تک

راہ- طلب کے پیچ و خم کا اندازہ آسان نہیں
اہل- خرد کیا چیز ہیں رستہ بھول گئے دیوانے تک

ساقی کو یہ خوش فہمی تھی ہم تک موج نہ آئے گی
پیاس کا جب پیمانہ چھلکا ڈوب گئے مے خانے تک

مٹی سے جب پھول کھلائے کار- جنوں کی محنت نے
شہر کچھ اس انداز سے پھیلے جا پہنچے ویرانے تک

زخمِ ہنر کا رنگ سلامت سب کو خبر ہو جائے گی
کتنے چہرے ہم نے تراشے ہاتھ قلم ہو جانے تک

اس غربت کی دھوپ میں شاعر اپنوں کا سایہ بھی نہیں
جس غربت کی دھوپ میں ہم کو یاد آئے بیگانے تک

(شاعر لکھنوی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

Why should we go to the house to drown the name of our demand
Tashna is a river of Libby from glass to scale

The inhuman relationship of beauty and love is not bound by directions.
Often the flame of the candle itself increased to the moth.

It is not easy to guess the path of demand.
What are the wise people, they have forgotten the path to the crazy

The bartender had such a good thought that we wouldn't enjoy
When the measure of thirst overflows, it sinks to the house.

When the hard work of the jinns blossomed flowers from the soil
The city spread in such a way that it reached the deserted

Everyone will know the color of the wound of skill.
How many faces have we carved until our hands were pen

In the sun of this poverty, there is no shadow of the poet's own people
The poverty in which we remember till strangers

(Poet Lucknowi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated

جواب چھوڑیں