" ناداروں کی عید " زردار نمازی عید کے د…

" ناداروں کی عید "

زردار نمازی عید کے دن کپڑوں میں چمکتے جاتے ہیں
نادار مسلماں مسجد میں جاتے بھی ہوئے شرماتے ہیں

ملبوس پریشاں دل غمگیں افلاس کے نشتر کھاتے ہیں
مسجد کے فرشتے انساں کو انسان سے کمتر پاتے ہیں

قرآں سے دھواں سا اٹھتا ہے ایمان کا سر جھک جاتا ہے
تسبیح سے اٹھتے ہیں شعلے سجدوں کو پسینہ آتا ہے

ہو واسطہ جس کو فاقوں سے روزے وہ بیچارہ کیا رکھے
دن دیکھ چکا شب دیکھ چکا قسمت کا سہارا کیا رکھے

خالی ہوں لہو سے جس کی رگیں وہ دل کا شرارہ کیا رکھے
ایمان کی لذت دیں کا بھرم افلاس کا مارا کیا رکھے

تاریک دکھائی دیتی ہے دنیا یہ مہ و خورشید اسے
روزی کا سہارا ہو جس دن وہ روز ہے روز عید اسے

اک مادر مفلس عید کے دن بچوں کو لئے بہلاتی ہے
سر ان کا کبھی سہلاتی ہے نرمی سے کبھی سمجھاتی ہے

قسمت پہ کبھی جھنجھلاتی ہے جینے سے کبھی تنگ آتی ہے
زردار پڑوسن خوش ہو کر سب دیکھتی ہے اور کھاتی ہے

پیسے کا پجاری دنیا میں سچ پوچھو تو انساں ہو نہ سکا
دولت کبھی ایماں لا نہ سکی سرمایہ مسلماں ہو نہ سکا

نوخیز دلہن اور عید کا دن کپڑوں سے نمایاں بد حالی
کمہلائے ہوئے سے غنچے اور مرجھائی ہوئی سی ہریالی

سوکھا ہوا چہرہ غربت سے اتری ہوئی ہونٹوں کی لالی
مایوس نظر ٹوٹا ہوا دل اور ہاتھ بھی پیسے سے خالی

شوہر کی نظر حسرت سے بھری اٹھتی ہے تو خود جھک جاتی ہے
احساسِ محبت کی دنیا اس منظر سے نتھرّاتی نہے

خوں چوس رہا ہے پودوں کا اک پھول جو خنداں ہوتا ہے
پامال بنا کر سبزوں کو اک سرو خراماں ہوتا ہے

چربی مل کر انسانوں کی اک چہرہ درخشاں ہوتا ہے
یہ عید کے جلوے بنتے ہیں جب خون غریباں ہوتا ہے

مفلس کی جوانی عید کے دن جب صبح سے آہیں بھرتی ہے
دنیا یہ امیروں کی دنیا تب عید کی خوشیاں کرتی ہے

(نشور واحدی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

′′ Eid of the needy ′′

Zardar prayer shines in clothes on Eid day
The poor Muslims feel shy even while going to the mosque

Dressing, distressed, sad, sad, eat the nishtar of poverty.
The angels of the mosque find humans less than humans.

Smoke rises from the Quran, the head of faith bows down
The flames of prostrations rise from Tasbeeh, and the prostrations sweat.

The one who fasts with hunger, how can he keep poor
The day has seen, the night has seen, what should be the support of luck

Whose veins are empty with blood, how can he keep the heart of the heart?
The illusion of giving the pleasure of faith, what is the use of poverty?

The world looks dark to him.
The day when there is support of livelihood, it is Eid everyday.

A poor mother makes her children happy on Eid day.
His head sometimes tolerates and sometimes explains it gently.

Sometimes it irritates the luck, sometimes it gets tired of living
Zardar neighbor sees everything and eats happily.

The priest of money in the world, if you ask the truth, you could not be a human being.
Wealth could never bring faith, wealth could not be a Muslim

A beautiful bride and Eid day is prominent misery with clothes.
From the washed to the gourd and the withering greenery

Dry face, the redness of lips descended from poverty
Disappointed eyes, broken heart and hands are also empty of money

When the husband's eyes are filled with longing, he himself bows down.
The world of love is not afraid of this scene.

A flower of plants is sucking blood which is a tender.
By crushing the vegetables, a serpent is bad.

After mixing fat, one face of humans shines.
These are made of Eid when the blood is poor

When the youth of the poor sighs from the morning on Eid day
This world is the world of the rich, then it is the joy of Eid.

(Nashwar Wahdi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں