سر جس پہ نہ جھک جائے اسے در نہیں کہتے ہر در پہ جو…

سر جس پہ نہ جھک جائے اسے در نہیں کہتے
ہر در پہ جو جھک جائے اسے سر نہیں کہتے
..
بسمل_سعیدی کا یومِ ولادت
January 06, 1901
نام #عیسٰی_میاں اور تخلص #بسملؔ_سعیدی تھا۔ 06؍جنوری 1901ء کو ٹونک میں پیدا ہوئے۔ مدرسہ عالیہ سے عربی اور فارسی کی تعلیم حاصل کرنے کے بعد ریاست ٹونک میں ملازم ہوگئے ۔ 1940ء میں جے پور چلے گئے اور ممتازالدولہ نواب مکرم علی خاں رئیس کے مصاحبین میں شامل ہوئے۔ یہاں سات سال قیام کیا اس کے بعد مستقل طور پر دہلی آگئے۔ بسملؔ سعیدی کا شمار بیسوی صدی کے خالص کلاسیکی طرز کے شاعروں میں ہوتا ہے۔ ان کی غزلوں میں روایتی مضامین نئے رنگ اور نئی آب وتاب کے ساتھ نظر آتے ہیں۔ لیکن ان کی نظمیں ان کی ایک اور ہی تخلیقی جہت کا پتا دیتی ہیں۔ یہ نظمیں ان تمام مسائل وموضوعات کو محیط ہیں جو ان کے عہد کے پیدا کئے ہوئے تھے۔ بسملؔ سعیدی
سیمابؔ اکبر آبادی کے ممتاز شاگروں میں سے تھے۔ 26؍اگست 1976ء کو دہلی میں ہی انتقال کر گئے۔
#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام

بسملؔ سعیدی کے یومِ ولادت پر منتخب اشعار

ہم نے کانٹوں کو بھی نرمی سے چھوا ہے اکثر
لوگ بے درد ہیں پھولوں کو مسل دیتے ہیں
———-
سر جس پہ نہ جھک جائے اسے در نہیں کہتے
ہر در پہ جو جھک جائے اسے سر نہیں کہتے
———-
کیا تباہ تو دلی نے بھی بہت بسملؔ
مگر خدا کی قسم لکھنؤ نے لوٹ لیا
———-
خوشبو کو پھیلنے کا بہت شوق ہے مگر
ممکن نہیں ہواؤں سے رشتہ کئے بغیر
———-
ادھر ادھر مری آنکھیں تجھے پکارتی ہیں
مری نگاہ نہیں ہے زبان ہے گویا
———-
نا امیدی ہے بری چیز مگر
ایک تسکین سی ہو جاتی ہے
———-
ٹھوکر کسی پتھر سے اگر کھائی ہے میں نے
منزل کا نشاں بھی اسی پتھر سے ملا ہے
———-
حسن بھی کمبخت کب خالی ہے سوز عشق سے
شمع بھی تو رات بھر جلتی ہے پروانے کے ساتھ
———-
تم جب آتے ہو تو جانے کے لیے آتے ہو
اب جو آ کر تمہیں جانا ہو تو آنا بھی نہیں
———-
کعبے میں مسلمان کو کہہ دیتے ہیں کافر
بت خانے میں کافر کو بھی کافر نہیں کہتے
———-
سکوں نصیب ہوا ہو کبھی جو تیرے بغیر
خدا کرے کہ مجھے تو کبھی نصیب نہ ہو
———-
کسی کے ستم اس قدر یاد آئے
زباں تھک گئی مہرباں کہتے کہتے
———-
میرے دل کو بھی پڑا رہنے دو
چیز رکھی ہوئی کام آتی ہے
———-
رو رہا ہوں آج میں سارے جہاں کے سامنے
روئے گا کل دیکھنا سارا جہاں میرے لیے
———-
دہرائی جا سکے گی نہ اب داستان عشق
کچھ وہ کہیں سے بھول گئے ہیں کہیں سے ہم
———-
محبت میں خدا جانے ہوئیں رسوائیاں کس سے
میں ان کا نام لیتا ہوں وہ میرا نام لیتے ہیں
———-
دو دن میں ہو گیا ہے یہ عالم کہ جس طرح
تیرے ہی اختیار میں ہیں عمر بھر سے ہم
———-
زمانہ سازیوں سے میں ہمیشہ دور رہتا ہیں
مجھے ہر شخص کے دل میں اتر جانا نہیں آتا
———-
عشق بھی ہے کس قدر بر خود غلط
ان کی بزم ناز اور خودداریاں

✍️ انتخاب : شمیم ریاض

The one whom the head does not bow down is not called a door.
The one who bows down at every door is not called head
..
Bismil _ Saeedi's birthday
January 06, 1901
The name was #Isa _ Mian and Takhlis #Bismil _ Saeedi. Born in Tonk on 06 / January 1901 After studying Arabic and Persian from Madrasa Alia, became employed in Tonk State. 1940 He moved to Jaipur and Mumtazuddola joined the companions of Nawab Mukarram Ali Khan Rais. Stayed here for seven years then returned to Delhi permanently. Bismil Saeedi is counted among the pure classical poets of the twentieth century. Traditional articles in the ghazals are seen with new colors and new water. But their poems show a more creative dimension of them. These poems cover all the issues and contemplations that their covenant created. Were. Bismil Saeedi
Seemab Akbar was one of the prominent pupils of Abadi. He died in Delhi on 26 / August 1976
#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام

Selected poems on the birthday of Bismil Saeedi

We have touched the thorns very often.
People are helpless, they blush flowers.
———-
The one whom the head does not bow down is not called a door.
The one who bows down at every door is not called head
———-
What destroyed, even the heart has destroyed a lot.
But I swear to God, Lucknow robbed me
———-
I am very fond of spreading the fragrance but
It is not possible without having a relationship with the winds.
———-
Here and there my eyes call you
It's not my sight, it's like my tongue
———-
Hopelessness is a bad thing but
It becomes a comfort
———-
If I have stumbled with a stone
The sign of the destination is also found with the same stone.
———-
Beauty is also unfortunate, when is it empty from the inhuman love
Even the candle burns all night with the moth
———-
When you come, you come to go
Now if you want to come and go, don't even come
———-
In Kaaba, Muslims are called infidels
Even an infidel is not called an infidels in the idol.
———-
Have I ever got peace without you
I wish I never get lucky
———-
I remember someone's torture so much
Tongue got tired of saying kind
———-
Let my heart be lying too
Thing put comes to work
———-
Today I am crying in front of the whole world
Tomorrow the whole world will cry for me
———-
Now the story of love will not be repeated
They have forgotten something from somewhere and we from somewhere.
———-
In love, God knows from whom the disgrace happened.
I name them they call my name
———-
The way this world has become in two days
We are in your control for the whole life
———-
I always stay away from the world's tricks.
I don't know how to get into everyone's heart
———-
Love is also so wrong.
Their meetings of pride and self-respect

✍️ Selection: Shamim Riaz

Translated


جواب چھوڑیں