یہ حسن ہے جھرنوں میں نہ ہے بادِ چمن میں جس حسن سے…

یہ حسن ہے جھرنوں میں نہ ہے بادِ چمن میں
جس حسن سے ہے چاند رواں نیل گگن میں

اے کاش کبھی قید بھی ہوتا مرے فن میں
وہ نغمۂ دلکش کہ ہےآوارہ پَوَن میں

اٹھ کر تری محفل سے عجب حال ہوا ہے
دل اپنا بہلتا ہے نہ بستی میں نہ بَن میں

اک حُسنِ مجسم کا وہ پیراہنِ رنگیں
ڈھل جائے دھنک جیسے کسی چندر کرن میں

اے نکہتِ آوارہ !! ذرا تُو ہی بتا دے
ہے تازگی پھولوں میں کہ اُس شوخ کے تَن میں

دیکھا تھا کہاں اس کو ہمیں یاد نہیں ہے
تصویر سی پھرتی ہے مگر اب بھی نَیَن میں

اس دور میں آساں تو نہ تھی ایسی غزل بھی
کچھ فن ابھی زندہ ہے مگر ملکِ دکن میں

(بشر نواز)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

This is beauty, not in the rains, not in the garden.
The beauty of which the moon is running in the Nile Gagan

I wish I could have been imprisoned in my art.
That beautiful song is in the wanderer

A strange situation happened after getting up from your gathering.
My heart is happy neither in the town nor in the forest

Those dressed colors of a beautiful beauty
Let the rainbow fall like a Chandra Karen

O the wanderer!! Just tell me
There is freshness in the flowers or in the body of that vibrant

We don't remember where he saw
She roams like a picture but still in the eyes

Such a poem was not easy in this era.
Some art is still alive but in the country of Deccan

(Bashar Nawaz)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں