داغِ دل ہم کو یاد آنے لگے لوگ اپنے دیئے جلانے لگ…

داغِ دل ہم کو یاد آنے لگے
لوگ اپنے دیئے جلانے لگے

باقی صدیقی کی وفات
Jan 08, 1972

8 جنوری 1972ء کو اردو اور پنجابی کے نامور شاعر اور ادیب جناب باقی صدیقی انتقال کرگئے۔ باقی صدیقی کا اصل نام محمد افضل تھا اور وہ 20 دسمبر 1908ء کو سہام راولپنڈی میں پیدا ہوئے تھے۔ باقی صدیقی کے شعری مجموعوں میں کچے گھڑے، جم جم، دارو سن، زخم بہار، بار سفر اور زاد راہ کے نام سرفہرست ہیں۔ وہ راولپنڈی میں قبرستان قریشیاں، سہام میں آسودئہ خاک ہیں۔ ان کی لوح مزار پر انہی کے یہ دو اشعار کندہ ہیں :

دیوانہ اپنے آپ سے تھا بے خبر تو کیا
کانٹوں میں ایک راہ بنا کر چلا گیا
باقیؔ، ابھی یہ کون تھا موج صبا کے ساتھ
صحرا میں اک درخت لگا کر چلا گیا

داغِ دل ہم کو یاد آنے لگے
لوگ اپنے دیئے جلانے لگے
کچھ نہ پا کر بھی مطمئن ہیں ہم
عشق میں ہاتھ کیا خزانے لگے
یہی رستہ ہے اب یہی منزل
اب یہیں دل کسی بہانے لگے
خود فریبی سی خود فریبی ہے
پاس کے ڈھول بھی سہانے لگے
اب تو ہوتا ہے ہر قدم پہ گماں
ہم یہ کیسا قدم اٹھانے لگے
اس بدلتے ہوئے زمانے میں
تیرے قصے بھی کچھ پرانے لگے
رخ بدلنے لگا فسانے کا
لوگ محفل سے اٹھ کے جانے لگے
ایک پل میں وہاں سے ہم اٹھے
بیٹھنے میں جہاں زمانے لگے
اپنی قسمت سے ہے مفر کس کو
تیر پر اڑ کے بھی نشانے لگے
ہم تک آئے نہ آئے موسم گل
کچھ پرندے تو چہچہانے لگے
شام کا وقت ہو گیا باقیؔ
بستیوں سے شرار آنے لگے
..

We started remembering the stains of heart.
People started lighting their lamps

Death of the rest of Siddiqui
Jan 08, 1972

On January 8, 1972, a renowned poet of Urdu and Punjabi and Adeeb Mr. Baqi Siddiqui died. The real name of the rest of Siddiqui was Muhammad Afzal and he was born in Saham Rawalpindi on 20 December Siddiqui's poetry collections top the names of raw pitchers, Jim Jim, Daro Sun, Zam Bahar, Bar Saafar and Zad Raah. They are the cemetery of Qureshian in Rawalpindi, Aasudaiah Dust in Saham. These two of their poems are engraved on their holy Are:

He was crazy about himself, so what if he was unaware
He made a way among the thorns and went away
Baqi, who was this with Moj Saba right now
He planted a tree in the desert.

We started remembering the stains of heart.
People started lighting their lamps
We are satisfied even after not getting anything
What treasures are there in love?
This is the way, now this is the destination.
Now the heart has started some excuses here
Self-deception is self-deception.
Even the drums of the nearby seem to be beautiful
Now there is assumptions at every step
What kind of step we started taking
In this changing time
Your stories seem to be somewhat old
The direction of the story started changing
People got up from the gathering and started leaving
In a moment we rise from there
Where it took time to sit
Who is free from his destiny?
Even after flying on the arrow, the target started.
The weather may not come to us.
Some birds started shouting
It's time for the evening
Evils started coming from the towns
..

Translated


جواب چھوڑیں