بدن کے دونوں کناروں سے جل رہا ہوں میں کہ چھو رہا …

بدن کے دونوں کناروں سے جل رہا ہوں میں
کہ چھو رہا ہوں تجھے اور پگھل رہا ہوں میں
..
عرفانؔ صدیقی کا یومِ ولادت
January 08, 1939

نام عرفا ن صدیقی, ٨ جنوری ۱۹۳۹ء کو بدایوں میں پیدا ہوئے۔ بریلی کالج، آگرہ یونیورسٹی سے تعلیم مکمل کی۔۱۹۶۲ء میں وزارت اطلاعات ونشریات کی مرکزی اطلاعاتی سروس سے وابستہ ہوگئے۔ ملازمت کے سلسلے میں دلی، لکھنؤ وغیر ہ قیام رہا۔یہ نیاز بدایونی کے چھوٹے بھائی تھے۔
عرفان صدیقی، ١٥ اپریل ٢٠٠٤ء کو لکھنؤ میں انتقال کر گئے ۔
..
معروف شاعر عرفانؔ صدیقی کے یوم ولادت پر منتخب اشعار
.
بدن میں جیسے لہو تازیانہ ہو گیا ہے
اسے گلے سے لگائے زمانہ ہو گیا ہے

اٹھو یہ منظر شبِ تاب دیکھنے کے لیے
کہ نیند شرط نہیں خواب دیکھنے کے لیے

رات کو جیت تو پاتا نہیں لیکن یہ چراغ
کم سے کم رات کا نقصان بہت کرتا ہے

بدن کے دونوں کناروں سے جل رہا ہوں میں
کہ چھو رہا ہوں تجھے اور پگھل رہا ہوں میں

ہوشیاری دلِ نادان بہت کرتا ہے
رنج کم سہتا ہے اعلان بہت کرتا ہے

عجب حریف تھا میرے ہی ساتھ ڈوب گیا
مرے سفینے کو غرقاب دیکھنے کے لیے

سر اگر سر ہے تو نیزوں سے شکایت کیسی
دل اگر دل ہے تو دریا سے بڑا ہونا ہے

میرے ہونے میں کسی طور سے شامل ہو جاؤ
تم مسیحا نہیں ہوتے ہو تو قاتل ہو جاؤ

اپنے کس کام میں لائے گا بتاتا بھی نہیں
ہم کو اوروں پہ گنوانا بھی نہیں چاہتا ہے

ہمیں تو خیر بکھرنا ہی تھا کبھی نہ کبھی
ہوائے تازہ کا جھونکا بہانہ ہو گیا ہے

ایک میں ہوں کہ اس آشوبِ نوا میں چپ ہوں
ورنہ دنیا مرے زخموں کی زباں بولتی ہے

کچھ عشق کے نصاب میں کمزور ہم بھی ہیں
کچھ پرچۂ سوال بھی آسان چاہیئے

اداس خشک لبوں پر لرز رہا ہوگا
وہ ایک بوسہ جو اب تک مری جبیں پہ نہیں

شعلۂ عشق بجھانا بھی نہیں چاہتا ہے
وہ مگر خود کو جلانا بھی نہیں چاہتا ہے

ہم کون شناور تھے کہ یوں پار اترتے
سوکھے ہوئے ہونٹوں کی دعا لے گئی ہم کو

اے لہو میں تجھے مقتل سے کہاں لے جاؤں
اپنے منظر ہی میں ہر رنگ بھلا لگتا ہے

وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا
میری بستی کسی صحرا میں بسا دی گئی کیا

خدا کرے صفِ سر دادگاں نہ ہو خالی
جو میں گروں تو کوئی دوسرا نکل آئے

یہ ہم نے بھی سنا ہے عالم اسباب ہے دنیا
یہاں پھر بھی بہت کچھ بے سبب ہوتا ہی رہتا ہے

سر تسلیم ہے خم اذنِ عقوبت کے بغیر
ہم تو سرکار کے مداح ہیں خلعت کے بغیر

اس کی تمثال کو پانے میں زمانے لگ جائیں
ہم اگر آئینہ خانوں ہی میں جانے لگ جائیں

ناچیز بھی خوباں سے ملاقات میں گم ہے
مجذوب ذرا سیر مقامات میں گم ہے

*انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ

I am burning from both sides of my body
That I am touching you and I am melting
..
Irfan Siddiqui's birthday
January 08, 1939

Nam Irfan Siddiqui, born in Badayon on 8 January 1939 Completed from Bareilly College, Agra University. In 1962, he was associated with the Central Information Service of the Ministry of Information and Participation. Delhi for jobs. He was the younger brother of Niaz Badauni and Lucknow.
Irfan Siddiqui, died on 15 April 2004 in Lucknow.
..
Selected poems on the birthday of famous poet Irfan Siddiqui
.
Like the blood in the body has become fresh
It's been a long time since I hugged him.

Wake up to see this scene on the night of night
That sleep is not a condition to dream

You can't win at night but this lamp
At least it hurts a lot at night

I am burning from both sides of my body
That I am touching you and I am melting

Intelligence is a lot of foolish heart.
Grief suffers less, announces a lot

He was a strange rival, he drowned with me
To see my Safina drowned

If the head is the head, then why complain to the spears
If the heart is the heart, it has to be bigger than the river.

Join my being somehow
If you are not a Messiah, then become a killer.

I don't even tell what will he bring for me
He doesn't even want to lose us on others

We had to spread good sometimes.
The breeze has become an excuse.

I am the one who is silent in this Ashob-e-Nawa
Otherwise the world speaks the tongue of my wounds

We are also weak in the curriculum of love
Some questions should also be easy.

Sad must be trembling on dry lips
A kiss that is not yet on my body

The flame of love does not even want to extinguish
He doesn't even want to burn himself

Who did we know that we would cross like this
The prayer of dry lips took us away

O blood, where should I take you from the holy place?
Every color looks good in its own view

That was a condition of horror, was it lifted?
Was my town settled in a desert?

May the line of head not be empty
If I fall, someone else will come out

We have also heard that the world is the reason for the world.
Still a lot of things happen here for no reason

The head is accepted without the permission of love.
We are fans of the government without Khilat.

It will take a long time to find his parable
If we start going to the mirror chambers

Nothing is also lost in meeting the beautiful people.
Mujzoob is a bit lost in travel places

* Selection: Ejaz Z H

Translated


جواب چھوڑیں