سمجھ کے فرض کبھی دن کو رات مت کرنا گزرتے لمحوں …

سمجھ کے فرض کبھی دن کو رات مت کرنا
گزرتے لمحوں سے تقسیم ذات مت کرنا

بچا کر تیز ہوا میں بکھرنا پڑتا ہے
انا کو نذر غمِ حادثات مت کرنا

نہ جانے کون کہاں کیا سوال کر بیٹھے
غبارِ راہ گزر اپنے ساتھ مت کرنا

سمیٹنا نہ سرِ راہ خواب کی کِرچیں
لہو لہان کبھی اپنے ہاتھ مت کرنا

نہیں گناہ کسی شے کی آرزو لیکن
اس آرزو کو غمِ کائنات مت کرنا

ہیں درمیاں میں ابھی فاصلے اصولوں کے
قریب آ کے ابھی مجھ سے بات مت کرنا

زوالِ ذات تو پروازؔ سب کی قسمت ہے
یقینِ دل کو مگر بے ثبات مت کرنا

(نصیر پرواز)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

Don't ever do the day and night after understanding
Don't divide by the passing moments.

Have to scatter in the strong air by saving it
Don't give ego the grief of accidents.

I don't know who asked what questions
Don't pass the dust of the way with you

Don't gather the scratches of dreams on the way.
Never touch your hands bleeding

I don't wish for anything but sin.
Don't make this desire to be sad for the universe

There are still distances between the principles.
Don't come close and talk to me now

The downfall is the fate of everyone.
Don't make the faith of the heart unconditionally

(Naseer flight)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated


جواب چھوڑیں