پہلا سا حال، پہلی سی وحشت نہیں رہی شاید کہ تیرے ہ…

پہلا سا حال، پہلی سی وحشت نہیں رہی
شاید کہ تیرے ہجر کی عادت نہیں رہی

شہروں میں ایک شہر مرے رَت جگوں کا شہر
کوچے تو کیا دِلوں ہی میں وسعت نہیں رہی

لوگوں میں میرے لوگ وہ دل داریوں کے لوگ
بچھڑے تو دُور دُور رقابت نہیں رہی

شاموں میں ایک شام وہ آوارگی کی شام
اب نیم وَا دریچوں کی حسرت نہیں رہی

راتوں میں ایک رات مِرے گھر کی چاند رات
آنگن کو چاندنی کی ضرورت نہیں رہی

راہوں میں ایک راہ وہ گھر لَوٹنے کی راہ
ٹھہرے کسی جگہ وہ طبیعت نہیں رہی

یادوں میں ایک یاد کوئی دل شکن سی یاد
وہ یاد اب کہاں ہے کہ فرصت نہیں رہی

ناموں میں ایک نام سوال آشنا کا نام
اب دل پہ ایسی کوئی عبارت نہیں رہی

خوابوں میں ایک خواب تری ہمرَہی کا خواب
اب تجھ کو دیکھنے کی بھی صورت نہیں رہی

رنگوں میں ایک رنگ تری سادگی کا رنگ
ایسی ہَوا چلی کہ وہ رنگت نہیں رہی

باتوں میں ایک بات تیری چاہتوں کی بات
اور اب یہ اِتّفاق کہ چاہت نہیں رہی

یاروں میں ایک یار وہ عیّاریوں کا یار
مِلنا نہیں رہا تو شکایت نہیں رہی

فصلوں میں ایک فصل وہ جاندادگی کی فصل
بادل کو یاں زمین سے رغبت نہیں رہی

زخموں میں ایک زخم متاعِ ہنر کا زخم
اب کوئی آرزوئے جراحت نہیں رہی

سنّاٹا بولتا ہے صدا مت لگا نصیرؔ
آواز رہ گئی ہے سماعت نہیں رہی

(نصیر ترابی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

The first situation, the first horror is no more
Perhaps your separation is no more habit.

A city in the cities, the city of my night and places.
There is no extension in the hearts of the street.

My people among the people, they are the people of heart.
The parting is not far away.

An evening in the evening, that evening of wandering
No longer longing for semi-windows

One night in the night, the moon night of my house
The courtyard does not need moonlight

One way in the way, that way to return home
She stayed anywhere, she was not in the nature.

A memory in memories, a heartbreaking memory
Where is that memory now that there is no time left

A name in the names, the name of the question, the name of the familiar.
Now there is no such text on the heart

A dream in dreams, a dream of your companion
Now I don't even see you

One color in colors, the color of your simplicity.
The wind blows that it's no more color

One thing in words is your love
And now it's a coincidence that love is no more

One friend among friends and he is the friend of the lovers
If we are not meeting then there is no complaining.

A crop in the crops, that is the harvest of life.
Clouds don't like the earth or the earth.

A wound in the wounds, the wound of the gain of skill
Now there is no desire to be safe

Listen speaks, don't shout Naseer.
The voice is left, the hearing is no more.

(Naseer Turabi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated


جواب چھوڑیں