صبا کا نرم سا جھونکا بھی تازیانہ ہوا …

صبا کا نرم سا جھونکا بھی تازیانہ ہوا
یہ وار مُجھ پہ ہوا بھی تو غائبانہ ہوا

اُسی نے مُجھ پہ اُٹھائے ہیں سنگ جس کے لئے
میں پاش پاش ہوا گھر نگار خانہ ہوا

جھلس رہا تھا بدن گرمئ نفس سے مگر
ترے خیال کا خورشید شامیانہ ہوا

خُود اپنے ہجر کی خواہش مُجھے عزیز رہی
یہ تیرے وصل کا قصہ تو اِک بہانہ ہوا

خُدا کی سرد مزاجی سما گئی مُجھ میں
مری تلاش کا سودا پیمبرانہ ہوا

میں اِک شجر کی طرح رہ گزر میں ٹھہرا ہوں
تھکن اُتار کے تو کس طرف روانہ ہوا

وہ شخص جس کے لئے شعر کہہ رہا ہوں نصیرؔ
غزل سنائے ہوئے اُس کو اِک زمانہ ہوا

(نصیرؔ ترابی)

المرسل: فیصل خورشید

The soft breeze of Saba also became fresh.
Even if this attack happened to me, it disappeared.

He has raised stones on me for whom
I'm shattered and shattered.

The body was burning with the heat of the soul but
The Khurshid of your thoughts became a Shamian.

The desire of my separation was dear to me.
This story of your meeting was just an excuse

God's cold consistency is in me.
The deal of my search has been done.

I'm like a tree in the way.
Where did you go after removing your tiredness?

The person for whom I am reciting poetry Naseer
It's been a long time since he recited a poem

(Naseer Turabi)

Marsal: Faisal Khursheed

Translated


جواب چھوڑیں