ایک زمین ۔۔۔ دو شاعر غزل ۔۔۔1 جس دن سے ہم بلن…

ایک زمین ۔۔۔ دو شاعر

غزل ۔۔۔1

جس دن سے ہم بلند نشــــــانوں میں آئے ہیں
ترکش کے سارے تیــر کمـانوں میں آئے ہیں

لہجے کی تلخیوں سے نمایاں ہے دل کا زہر
اندر کے سارے خوفــــ زبانوں میں آئے ہیں

More

روشن ہوا ہے ذہن تو دل کی گِــــرہ کُھـــلی
پہـلے پہَــل یقین۔ ۔ ۔ گمـانوں میں آئے ہیں

گَـرد و غبارِ وقت سے الجھے ہیں ایک عمر
تب جـــا کے عکس آئنہ خانوں میں آئے ہیں

اُفتاد اب کے ایسـی پڑی ہے کہ شـہر میں
دنیا طلب بھی سُــوختہ جــۤانوں میں آئے ہیں

میرؔ و انیسؔ و غالبؔ و اقبالؔ سب کے سب
بے مِہــر’ بے لحـــاظ زمانوں میں آئے ہیں

( افتخــــار عارفـــــــؔ )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

More


Image may contain: 1 personImage may contain: 1 person

جواب چھوڑیں