رس میں ڈوبا ہوا لہرایا بدن، کیا کہنا کروٹیں …

رس میں ڈوبا ہوا لہرایا بدن، کیا کہنا
کروٹیں لیتی ہوئی صبحِ چمن، کیا کہنا

باغِ جنت پہ گھٹا جیسے برس کر کھل جائے
یہ سہانی تری خوشبوئے بدن، کیا کہنا

روپ سنگیت نے دھارا ہے بدن کا یہ رچاؤ
تجھ پہ لہلوٹ ہے بے ساختہ پن، کیا کہنا

جیسے لہرائے کوئی شعلہ بدن کی یہ لچک
سربسر آتشِ سیالِ بدن ، کیا کہنا

جس طرح جلوۂ فردوس ہواؤں سے چھنے
پیرہن میں ترے رنگینئ تن، کیا کہنا

جلوہ و پردہ کا یہ رنگ، دمِ نظارہ
جس طرح ادھ کھلے گھونگھٹ میں دلہن،کیا کہنا

چشمِ مخمور، صراحی بہ بغل، جام بہ کف
نغمۂ حافظِ شیراز ، بدن کیا کہنا

زلفِ شبگوں کی چمک، پیکرِ سیمیں کی دمک
دیپ مالا ہے سرِ گنگ و جمن، کیا کہنا

(فراق گورکھپوری)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

Wave body drowned in juice, what to say
The morning garden taking sides, what to say

As the clouds open on the garden of Paradise.
This beautiful fragrance of your body, what to say

The form of music has made the body's fuss.
There is a lot of blood on you, what to say

Like a flame of the body waving, this flexibility
What to say, the fire of the body.

Just like the light of Firdous touch the winds
Your colorful body is in your garment, what to say

This color of light and veil, the trail of view
The way the bride is in an open ghat, what to say

The eyes are dazzled, the armpit to the armpit, the wine to the cuff
Song of Hafiz Shiraz, what to say about the body

The glow of the hair of the hair, the glow of the packer of the sea.
The lamp is like a lamp, what to say

(Separation of Gorakhpuri)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated

جواب چھوڑیں