یہ غم نہیں ہے کہ اب آہِ نارسا بھی نہیں یہ کیا ہوا…

یہ غم نہیں ہے کہ اب آہِ نارسا بھی نہیں
یہ کیا ہوا کہ مرے لب پہ التجا بھی نہیں

ستم ہے ، اب بھی امیدِ وفا پہ جیتا ہے
وہ کم نصیب کہ شائستۂ جفا بھی نہیں

نگاہِ ناز ، عبارت ہے زندگی جس سے
شریکِ درد تو کیا ، درد آشنا بھی نہیں

وہ کاروانِ نشاط و طرب کہاں ہمدم
جو ڈھونڈھیے تو کہیں کوئی نقشِ پا بھی نہیں

تمام حرف و حکایت مٹا گئی دل سے
نگاہِ ناز نے کہنے کو کچھ کہا بھی نہیں

وہ کُشتۂ کرمِ یار کیا کرے کہ جسے؟
بہ ایں تباھئ دل شکوۂ جفا بھی نہیں

(حبیب احمد صدّیقی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

It is not sad that now there is no sigh of anger
What happened that there is no plea on my lips

It's torture, still hope lives on loyalty
He is not even unfaithful that he is not unfaithful

The vision of pride, the text of life is from which
What is the partner of pain, not even the pain is familiar

Where is that caravan of Nishat and Tarb, Mdm
If you search, there is no footsteps anywhere.

All words and narratives have been erased from the heart
The eyes of pride did not say anything to say

What can the boat of my beloved do to whom?
My heart is destroyed, I am not even unfaithful.

(Habib Ahmed Sadiqi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated


جواب چھوڑیں