بحوالہ کتاب: نوبیل خطبات مترجم : یاسر جواد ~ہی…

بحوالہ کتاب: نوبیل خطبات
مترجم : یاسر جواد

~ہیرتا موہلر Herta Muller ~

کیا تمہارے پاس رومال ہے؟ہر صبح کو جب میں
گلی میں جانے لگتی تو میری ماں گھر کے دروازے
میں کھڑے ہوکر مجھ سے سوال کرتی میرے پاس
رومال نہیں ہوتا تھا اور اس وجہ سے میں واپس
اندر جاکر رومال لاتی میرے پاس رومال کبھی نہ
ہوتا کیونکہ میں ہمیشہ اُس کے سوال کی منتظر
ہوتی رومال اس بات کا ثبوت ہوتا تھا کہ میری
صبح کے وقت مجھے اچھی طرح تیار کرتی تھی
بقیہ سارا دن میں خود اپنی ذمہ دار ہوتی کیا
تمہارے پاس رومال ہے؟کا سوال محبت کا بلواسطہ
اظہار تھا اس سے زیادہ براراست بات باعث شرمندگی
ہوتی اور کاشت کار اس کے عادی نہیں تھے محبت ایک
سوال کا بھیس دھار لیتی تھی یہ صرف اسی طرح سے
بیان کی جاسکتی تھی تحکمانہ انداز میں یاپھر نفیس
مہارت کے ساتھ آواز کی رُکھائی شفقت کو اور بھی
زیادہ اجاگر کرتی میں ہر صبح کو ایک مرتبہ رومال لیے
بغیر گیٹ تک جاتی اور دوسری مرتبہ رومال لے کر اس
کے بعد ہی مجھے گلی میں نکلنے کی اجازت ملتی جیسے
رومال کا مطلب ہو کہ میری ماں بھی موجود ہے!

ہیرتا موہلر تاریخ پیدائش 17 اگست 1953ء
رومانیائی شاعرہ اور ادیبیہ اسے 2009 میں
نوبیل انعام براے ادب ملا ،
Shams Ullah Khan


بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2983421008555079

جواب چھوڑیں