طلاق دے تو رہے ہو عتاب و قہر کے ساتھ میرا شباب بھ…

طلاق دے تو رہے ہو عتاب و قہر کے ساتھ
میرا شباب بھی لوٹا دو میرے مہرکے ساتھ
وہ کہہ رہا ہے کہ لاؤں گا گھر میں سوتن کو
پلا رہا ہے وہ آب_حیات زہر کے ساتھ
میں اس لئے یہاں آتی ہوں تم جو رہتے ہو
مجھے ہے اتنا تعلق تمہارے شہر کے ساتھ
بزار جانے کی جلدی نہ جانے کون سی تھی
مجھے جو لے نہ گئے وہ ذرا سا ٹھہر کے ساتھ
میں جا کے اُن کو اٹھا لائی اُس کی محفل سے
وہ دیکھتی رہی مجھکو نگاہ_قہر کے ساتھ
شاعر: ساجد سجنی لکھنوی
کتاب: نگوڑیات
….
ریختی ایک صنف شاعری ہے جس میں مرد شاعر خواتین کے انداز میں شاعری کرتا ہے۔۔۔ یہ شعر پروین شاکر سے اُن کے حالاتِ زندگی کے تحت منسوب ضرور رہا ہے مگر یہ شعر پروین شاکر کا نہیں ہے۔
طلاق دے تو رہے ہو ، غرور و قہر کے ساتھ
مرا شباب بھی لوٹا دو مرے مہر کے ساتھ

If you divorce me, you are living with anger and anger.
Return my youth with my mehrk
He is saying that he will bring the sotan in the house
He is drinking water of life with poison.
This is why I come here you live
I have so much relation with your city
Don't know which one was in a hurry to go to the market
Those who didn't take me, they are with a little bit of wait.
I went and picked them up from his party
She kept looking at me with anger.
Poet: Sajid Sajni Lucknowi
Book: Niggodiat
….
Rekhti is a genre poetry in which a man poet performs poetry in the style of women This poetry has been attributed to Parveen Shakir under his circumstances but this poetry is not of Parveen Shakir.
You are divorcing me with pride and anger.
Return my youth with my seal.

Translated


جواب چھوڑیں