اُن لبوں نے نہ کی مَسیِحائی ہَم نے سَو سَو طرح سے…

اُن لبوں نے نہ کی مَسیِحائی
ہَم نے سَو سَو طرح سے مَر دیکھا
میر دردؔ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک زمین
احمد فرازؔ
محسنؔ نقوی
۔۔۔۔۔
فرازؔ

اِسی خیال میں تاروں کو رات بھر دیکُھوں
کہ تُجھ کو صُبحِ قِیامَت سے پَیشتر دیکُھوں

اُس اِک چراغ کی لَو چُبھ رہی ہے آنکھوں میں
تَمام شہر ہو رَوشن تو اَپنا گھر دیکُھوں

مُجھے خود اَپنی طَبِِیعَت پہ اِِعتماد نہیں
خُدا کرے کہ تُجھے اَب نہ عُمر بھر دیکُھوں

صدائے غولِ بیاباں نہ ہو یہ آوازہ
مِرا وُجُود ہے پتّھر جو لَوٹ کر دیکُھوں

نَظَر عذاب ہے پاؤں میں ہو اگر زَنجِیر
فضا کے رَنگ کو دیکُھوں کہ بال و پر دیکُھوں

جُدا سہی مِری مَنزِل بِچھڑ نہیں سکتا
مَیں کِس طَرح تُجھے اوروں کا ہَمسفر دیکُھوں

وہ لَب فرازؔ اَگر کر سکیں مَسِیحائی
بَقولِ دردؔ میں سَو سَو طرح سے مَر دیکُھوں۔۔۔!

۔۔۔۔۔
محسنؔ

ہَوس تو ہے بلندی پہ تیرا گھر دیکُھوں
نَظَر اُٹھاؤں تو اَپنے شِکَستَہ پر دیکُھوں

تِرے قرِیب سہی مُضطرِب ہے دِل کِتنا
ہَوا کی چاپ جو اُبھرے تو سُوۓ دَر دیکُھوں

کِسی طَرح تو یہ تَنہائیوں کا کَرب کٹے
بَلا سے اَپنے ہی ساۓ کو ہَمسفر دیکُھوں

کُچھ اِس لیے بھی اَندھیروں نے ڈَس لِیا مُجھ کو
مُجھے یہ شوق تھا رَنگِ رُخِ سَحَر دیکُھوں

وہ لَمس وہم سہی اُس سے دِل تو بہلاؤں
وہ جِسم خواب سہی اُس کو عُمر بھر دیکُھوں

مَیں لُٹ چُکا مِرے رَہزن بھی گُم ہُوۓ لیکِن
یہ کیسا خوف ہے پِھر بھی اِدھر اُدھر دیکُھوں

ہَواۓ شامِ سَفَر یہ سَفَر کہاں کا ہے
کہ ہر قَدم پہ نیا رَنگِ رَہگُزر دیکُھوں

فرازِ عَرش نہی گَر تو شاخِ دار سہی
کِسی طرح تو بلندی پہ اپنا سَر دیکُھوں

گنوا دیا اُنہیں اَب اُن کی یاد کیوں آۓ
مَیں دوستوں سے رِشتہ بھی توڑ کر دیکُھوں

دُھواں دُھواں مِری سانسیں ہیں زَخم زَخم بدن
خیال تھا کبھی اِخلاصِ چارہ گَر دیکُھوں

وہ کُنجِ لب ہو اگر وا مِرے لیے محسنؔ
بَقولِ دردؔ مَیں سَو سَو طرح سے مَر دیکُھوں۔۔۔!


جواب چھوڑیں