جانے کتنے راز کھلیں جس دن چہروں کی راکھ دھلے لیکن…

جانے کتنے راز کھلیں جس دن چہروں کی راکھ دھلے
لیکن سادھو سنتوں کو دکھ دے کر پاپ کمائے کون
..
عزیز جہاں، داراب بانو وفا کا یومِ وفات
January 13, 2005

مشہور ترقی پسند شاعرہ عزیز بانو داراب وفا 23 اگست 1926 کو بدایوں میں پیدا ہوئیں ۔801ء میں ان کے پر دادا فارسی کے مشہور استاد شاعر عزیزالدین آٹھ سال کی عمر میں اپنے والد صاحب کے ساتھ ہجرت کر کے لکھنؤ آئے اور یہیں مقیم ہوئے۔ ان کے دادا خواجہ وصی الدین ڈپٹی کلکٹر اور والد شریف الدین داراب ڈاکٹر تھے۔ ان کا گھرانا اپنی قدیم روایات کے باوجود تعلیم نسواں کا حامی تھا۔ انہوں نے بی اے تھوبرن کالج سے اور ایم اے انگریزی سے 1949 میں لکھنؤ یونیورسٹی سے کیا، کجھ عرصہ بعد ایک گرلز کالج میں انگریزی کی لکچرر ہوئیں۔
انہوں نے 23 سال کی عمر میں شعر کہنا شروع کیا، شروع میں ان کا رجحان افسانے اور ناول لکھنے کی طرف تھا۔ مرحومہ نے اپنا دیوان چھپوانے کی طرف کبھی توجہ نہ دی، وہ تو شعر اپنی تسلی و تشفی کے لئے کہتی تھیں۔ وہ 13 جنوری 2005ء کو لکھنؤ میں انتقال کر گئیں۔
منتخب اشعار
میں جمالِ فطرتِ حسن ہوں مری ہر ادا ہے حسین تر
جو جھکوں تو شاخ گلاب ہوں جو اٹھوں تو ابر بہار ہوں
…………
کتاب زیست میں تھے یوں تو لاکھ افسانے
بس ایک حرفِ وفا تھا جو معتبر ٹھہرا
………..
گئے موسم میں میں نے کیوں نہ کاٹی فصل خوابوں کی
میں اب جاگی ہوں جب گل کھو چکے ہیں ذائقہ اپنا
…………….
میری خلوت میں جہاں گرد جمی پائی گئی
انگلیوں سے تری تصویر بنی پائی گئی
…………
ہم ایسے پیڑ ہیں جو چھاؤں بانٹ کر اپنی
شدید دھُوپ میں خود سائے کو ترستے ہیں
…………
میں اس کی گرد ہٹاتے ہوئے بھی ڈرتی ہوں
وہ آئینہ ہے، مجھے خود شناس کر دے گا
…………
ہم ہیں احساس کے سیلاب زدہ ساحل پر
دیکھئے ہم کو کہاں لے کے کنارا جائے
…………
ساز ہر شاخ کو جب دستِ صبا دیتا ہے
درِ زنداں کی بھی زنجیر ہلا دیتا ہے
…………
زرد چہروں کی کتابیں بھی ہیں کتنی مقبول
ترجمے ان کے جہاں بھر کی زبانوں میں ملے
…………
میں اپنے جسم میں رہتی ہوں اس تکلف سے
کہ جیسے اور کسی دوسرے کے گھر میں ہوں
…………
میں کس زبان میں اس کو کہاں تلاش کروں
جو میری گونج کا لگظوں میں ترجمہ کر دے
…………
میں روشنی ہوں تو میری چمک کہاں تک ہے
کبھی چراغ کے نیچے بکھر کے دیکھوں گی
…………
وہ اک تھکا ہوا راہی میں ایک بند سرائے
پہنچ بھی جائے گا مجھ تک تو مجھ سے کیا لے گا
…………
میں اپنے آپ سے ٹکرا گئی تھی، خیر ہوئی
کہ آ گیا مری قسمت سے درمیان میں وہ
…………
میں نے اس ڈر سے لگائے نہیں خوابوں کے درخت
کون جنگل میں اگے پیڑ کو پانی دے گا
…………
ہماری بے بسی شہروں کی دیواروں پہ چپکی ہے
ہمیں ڈھونڈھے گی کل دنیا پرانے اشتہاروں میں
…………
اور کہیں بکھیر نہ دے مجھ کو زندگی میری
میں مشت خاک ہوں اور دستِ با ہنر میں ہوں

مُجھ کو بیتے ہوئے لمحوں کی نشانی دے گا
اپنی تصویر بھی دے گا تو پُرانی دے گا

یہ فیصلہ بھی مرے اس کے درمیاں کر دے
مجھے سراب بنا، اس کو کارواں کر دے
وہ لوٹ کر نہیں آتا تو انتقاماً ہی
مجھے بھی اس کی فقط عمر رائگاں کر دے
کسی طرح تو وہ شامل ہو زندگی میں مری
جو ہو سکے تو اسے میری داستاں کر دے
وہ آفتاب سہی اک نئے سویرے کا
مجھے چراغ سے اٹھتا ہوا دھُواں کر دے
بنا کے دھُوپ مجھے شب کی چاندنی دن کی
مرے وجود میں مجھ کو کہیں نہاں کر دے
میں شاخ سبز ہوں، مجھ کو اتار کاغذ پر
مری تمام بہاروں کو بے خزاں کر دے

Don't know how many secrets will be revealed the day when the ashes of faces
But who earns pop by hurting the Sadhu oranges?
..
Dear Jahan, the death anniversary of Darab Bano Wafa
January 13, 2005

Famous progressive poet Aziz Bano Darab Wafa was born in Badayun on 23 August 1926 In 801, a famous teacher of his grandfather Farsi poet Azizuddin migrated with his father at the age of eight to Lucknow. Came and lived here. His grandfather Khwaja Wasiuddin was deputy collector and father Sharifuddin Darab Doctor. His family was a supporter of women education despite his ancient traditions. He was from BA Thuburn College and MA English 1949 I did from Lucknow University, after some time I became an English lecturer in a girls college.
He started saying poetry at the age of 23, initially his trend was towards writing myths and novels. The Prophet never paid attention to hiding his diwan, he used to say poetry for his comfort and comfort. She died on 13 January 2005 in Lucknow.
Selected outfits
I am the beauty of nature, my every style is beautiful.
If I bow, I am a rose branch, if I rise, I am a spring cloud.
…………
There were so many stories in the book of life
It was just a word of loyalty that was trusted
………..
Why didn't I reap the harvest of dreams in the past season
I am awake now when I have lost my taste
…………….
In my seclusion, where I was found around
Your picture was made with fingers.
…………
We are such trees that distribute their shade
They themselves long for shadow in extreme sunshine.
…………
I'm scared to even pull her around
He is a mirror, he will make me know myself
…………
We are on the flooded beach of Ehsas
See where we should be taken away
…………
When the instrument gives the hand of the morning to every branch
It shakes the chain of the prison door too.
…………
The books of yellow faces are also so popular
Translation is found in the languages of the world.
…………
I live in my body with this pretender
Like I'm in someone else's house
…………
In which language and where do I find it
The one who translates my resonance into lags
…………
If I am light, how far is my shine?
I will see you scattered under the lamp sometimes.
…………
He's a closed in a tired rahi
Even if it reaches me, what will you take from me?
…………
I was hit by myself, well done
He came in the middle of my destiny
…………
I did not plant the trees of dreams because of this fear.
Who will water the tree next in the woods
…………
Our helplessness is sticking to the walls of the cities.
Tomorrow the world will find us in old advertisements
…………
And may my life not scatter me anywhere
I am masturbated and I am in my hand.

Will give me the sign of the past moments
Even if he gives his picture, he will give it old

Make this decision between the dead and him
Make me a mirage, make it a caravan
If he doesn't come back, it's a revenge.
Just make me waste his life too
Somehow he is involved in my life.
If possible, make him my story
That sun may be of a new dawn
Make me smoke rising from the lamp
Make me the sunlight of the night and the moonlight of the day
Make me bath somewhere in my existence
I'm the green branch, take me off on paper
Make all my spring fall

Translated


جواب چھوڑیں