بہت سہی غمِ گیتی، شراب کم کیا ہے غلام…

بہت سہی غمِ گیتی، شراب کم کیا ہے
غلامِ ساقیٔ کوثر ہوں، مُجھ کو غم کیا ہے

تمہاری طرز و روش جانتے ہیں ہم، کیا ہے
رقیب پر ہے اگر لطف تو ستم کیا ہے

کٹے تو شب کہیں کاٹے تو سانپ کہلاوے
کوئی بتاؤ کہ وہ زُلفِ خم بہ خم کیا ہے

لِکھا کرے کوئی احکامِ طالعِ مولود
کِسے خبر ہے کہ واں جُنبشِ قلم کیا ہے

نہ حشر و نشر کا قائل نہ کیش و ملت کا
خُدا کے واسطے ایسے کی پھر قسم کیا ہے

وہ داد و دید گراں مایہ شرط ہے ہمدم
وگرنہ مہرِ سلیمان و جامِ جم کیا ہے

سخن میں خامۂ غالبؔ کی آتش افشانی
یقیں ہے ہم کو بھی،لیکن اب اُس میں دم کیا ہے

(مرزا اسد اللہ غالبؔ)

المرسل: فیصل خورشید

There is a lot of grief, I have lessened alcohol.
I am a slave of Kausar, what is my sorrow

We know your style, what it is
If you have fun on the opponent, then what is torture?

If the night is cut, then the night is cut somewhere, then it is called a snake
Someone tell me what is that hair of submissive

Someone write the commandments of the distracted.
Who knows what is the th passion of pen?

Neither I believe in the Day of Resurrection nor of cash and nation
For God's sake, what is the oath of this?

He is a great condition, Hdm.
Otherwise, what is the Seal of Sulaiman and Jim?

The fire of Khama Ghalib in words.
We also believe, but what is the power in it now

(Mirza Asadullah Ghalib)

Marsal: Faisal Khursheed

Translated


جواب چھوڑیں