آئیں پسند کیا اسے دنیا کی راحتیں جو لذت آشنائے س…

آئیں پسند کیا اسے دنیا کی راحتیں
جو لذت آشنائے ستم ہائے ناز تھا

جگت موہن لال رواںؔ کا یومِ ولادت
January 14, 1889

نام جگت_موہن_لال اور تخلص رواںؔ تھا۔ 14؍جنوری 1889ء کو مورانواں ضلع سیتا پور میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد گنگا پرشاد کا انتقال ان کے بچپن میں ہی ہوگیا تھا۔ والد کی وفات کے بعد ان کی پرورش بڑے بھائی منشی کنہیا لال نے کی۔ رواںؔ بہت ذہین طالب علم تھے۔ ایل ایل بی کی سند حاصل کی اور وکالت کے پیشے سے وابستہ ہوگئے۔ رواںؔ کی طبیعت بچپن ہی سے شاعری کی طرف مائل تھی، عزیزؔ لکھنوی سے کلام پر اصلاح لی۔ رواںؔ کی نظموں، غزلوں اور رباعیوں کا مجموعہ ’روح رواں‘ کے نام سے شائع ہوا۔
جگت موہن لال رواںؔ 26؍ستمبر 1934ء کو اناؤ یو پی میں انتقال کر گئے۔

جگت موہن لال رواںؔ کے یومِ ولادت پر منتخب اشعار

وہ خوش ہو کے مجھ سے خفا ہو گیا
مجھے کیا امیدیں تھیں کیا ہو گیا
———-
پیش تو ہوگا عدالت میں مقدمہ بیشک
جرم قاتل ہی کے سر ہو یہ ضروری تو نہیں
———-
اس کو خزاں کے آنے کا کیا رنج کیا قلق
روتے کٹا ہو جس کو زمانہ بہار کا
———-
توڑا ہے دم ابھی ابھی بیمار ہجر نے
آئے مگر حضور کو تاخیر ہو گئی
———-
سامنے تعریف غیبت میں گلہ
آپ کے دل کی صفائی دیکھ لی
———-
اگر کچھ روز زندہ رہ کے مر جانا مقدر ہے
تو اس دنیا میں آخر باعث تخلیق جاں کیا تھا
———-
ہنسے بھی روئے بھی لیکن نہ سمجھے
خوشی کیا چیز ہے دنیا میں غم کیا
———-
ابھی تک فصل گل میں اک صدائے درد آتی ہے
وہاں کی خاک سے پہلے جہاں تھا آشیاں میرا
———-
وہ بادہ نوش حقیقت ہے اس جہاں میں رواںؔ
کہ جھوم جائے فلک گر اسے خمار آئے
———-
یہی ہستی اسی ہستی کے کچھ ٹوٹے ہوئے رشتے
وگرنہ ایسا پردہ میرے ان کے درمیاں کیا تھا
———-
آئیں پسند کیا اسے دنیا کی راحتیں
جو لذت آشنائے ستم ہائے ناز تھا
———-
کچھ اضطراب عشق کا عالم نہ پوچھئے
بجلی تڑپ رہی تھی کہ جان اس بدن میں تھی
#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام
💠♦️🔹🎊🔹♦️💠
🌹 جگت موہن لال رواںؔ 🌹
✍️ انتخاب : شمیم ریاض

Let's like it the comforts of the world
The pleasure that was known to be tortured, was proud.

Birthday of Jagat Mohan Lal Rawan
January 14, 1889

The name was Jagat _ Mohan _ Lal and Takhlis Rawan. Born on 14 / January 1889 in Moranwan district Sitapur. His father Ganga Prashad died in his childhood. After his father died. Raised by elder brother Munshi Kanhaya Lal. He was a very intelligent student. Received LLB certificate and attached to the profession of advocacy. His nature was inclined to poetry since childhood, reformed to Kalam from Aziz Lucknowi. The collection of poems, ghazals and rabaiyas of Lee-Rawan was published in the name of 'Rouh Roan'.
Jagat Mohan Lal Rawan, died on September 26, 1934 in Anao UP.

Selected poems on the birthday of Jagat Mohan Lal Rawan

He became angry with me after being happy
What was my hopes, what happened?
———-
The case will be presented in the court, of course.
It is not necessary that the crime is the head of the killer.
———-
What is the pain of the arrival of autumn?
The one who is crying for spring time
———-
Sick separation has just broken the breath.
He came but the Prophet was delayed.
———-
Complaint in front of praise and backbiting
Saw the cleanliness of your heart
———-
If it is destiny to live and die for a few days
So what was the reason for the creation in this world?
———-
I laughed and cried but did not understand
What is happiness, what is sorrow in the world?
———-
There is still a sound of pain in the crop.
Before the dust of there, where was my erect.
———-
That bad drink is the reality in this world.
So that the sky may be pleasantly, if it gets hanged
———-
Some broken relationships of the same person
Otherwise what was such a veil between me and them
———-
Let's like it the comforts of the world
The pleasure that was known to be tortured, was proud.
———-
Don't ask about some disorder of love
Electricity was tormenting that life was in this body
#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام
💠♦️🔹➖➖🎊➖➖🔹♦️💠
🌹 Jagat Mohan Lal is running 🌹
✍️ Selection: Shamim Riaz

Translated


جواب چھوڑیں