حفیظ جالندھری کا یومِ پیدائش January 14, 1900 من…

حفیظ جالندھری کا یومِ پیدائش
January 14, 1900

منتخب اشعار حفیظ جالندھری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حفیظ اہل زباں کب مانتے تھے
بڑے زوروں سے منوایا گیا ہوں
۔۔۔
دیکھا جو کھا کے تیر کمیں گاہ کی طرف
اپنے ہی دوستوں سے ملاقات ہو گئی
۔۔۔
تشکیل و تکمیل فن میں جو بھی حفیظ کا حصہ ہے
نصف صدی کا قصہ ہے دو چار برس کی بات نہیں
۔۔۔
ارادے باندھتا ہوں سوچتا ہوں توڑ دیتا ہوں
کہیں ایسا نہ ہو جائے کہیں ایسا نہ ہو جائے
۔۔۔
آنے والے کسی طوفان کا رونا رو کر
ناخدا نے مجھے ساحل پہ ڈبونا چاہا
۔۔۔
لے چل ہاں منجدھار میں لے چل ساحل ساحل کیا چلنا
میری اتنی فکر نہ کر‘ میں خوگر ہوں طوفانوں کا
۔۔۔
پیاروں کی موت نے مری دنیا اجاڑ دی
یاروں نے دور جا کے بسائی ہیں بستیاں
۔۔۔
ہاں بڑے شوق سے شمشیر کے اعجاز دکھا
ہاں بڑے شوق سے دعویٰ مسیحائی کر
۔۔۔
یہ عجب مرحلہ عمر ہے یارب کہ مجھے
ہر بُری بات‘ بُری بات نظر آتی ہے
۔۔۔
جس نے اس دور کے انسان کیے ہیں پیدا
وہی میرا بھی خدا ہو مجھے منظور نہیں
۔۔۔
میری چپ رہنے کی عادت جس کارن بدنام ہوئی
اب وہ حکایت عام ہوئی ہے سنتا جا ‘ شرماتا جا
۔۔۔
قافلہ کس کی پیروی میں چلے
کون سب سے بڑا لٹیرا ہے
…..
آخر کوئی صورت تو بنے خانہٴ دل کی
کعبہ نہیں بنتا ہے تو بت خانہ بنا دے
…..
مجھے شاد رکھنا کہ ناشاد رکھنا
مرے دیدہ و دل کو آباد رکھنا
ملیں گے تمہیں راہ میں بت کدے بھی
ذرا اپنے اللہ کو یاد رکھنا

عشق نہ ہو تو واقعی موت نہ ہو تو خودکشی
یہ نہ کرے تو آدمی آخر کار کیا کرے
….
دل ابھی تک جواں ہے پیارے
کس مصیبت میں جان ہے پیارے
تلخ کر دی ہے زندگی اس نے
کتنی میٹھی زبان ہے پیارے

تمہیں نہ سن سکے اگر قصہٴ غم سنے گا کون
کس کی زباں کھلے گی پھر ہم نہ اگر سنا سکے

ہر قدم جس کو نئی چال نہ چلنی آئے
وہ تو رہزن بھی نہیں راہنما کیا ہو گا
….
آنے والے کسی طوفاں کا رونا رو کر
نا خدا نے مجھے ساحل پہ ڈبونا چاہا
….
گزرے ہوئے زمانے کااب تذکرہ ہی کیا
اچھا گزر گیا بہت اچھا گزر گیا

Birthday of Hafiz Jalandhari
January 14, 1900

Selected poetry Hafiz Jalandhari
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
When did Hafeez listen to the people of language?
I have been celebrated with great strength.
۔۔۔
When I saw the arrow after eating it, I saw it towards the ground.
Met my own friends
۔۔۔
Whoever is a part of Hafeez in formation and completion of art
It's a story of half century, not a matter of two or four years.
۔۔۔
I make intentions, I think I break them.
Lest this happen lest it happen
۔۔۔
Crying for a coming storm
Sailor wanted me to dip on the beach
۔۔۔
Take it to Manjdhar, take it to the Sahil Sahil, what
Don't worry about me so much, I am a fear of storms.
۔۔۔
The death of loved ones destroyed my world
Friends have settled the towns by going far away
۔۔۔
Yes, with great interest, show the ejaz of Shamsheer
Yes, claim with great interest.
۔۔۔
This is a strange phase of age, O God, for me
Every bad thing seems to be bad
۔۔۔
Who created humans of this era
He is also my God, I don't accept it
۔۔۔
The corn which got infamous in my habit of silence
Now that narrative has become public. Listen and be shy.
۔۔۔
Who should the caravan follow?
Who is the biggest robber
…..
At last, there should be some face of the heart.
If Kaaba is not made, then make an idol house.
…..
Keep me happy or unhappy
Keep my vision and heart inhabited
You will find idols on the way.
Just remember your Allah

If there is no love, then there is no death, then suicide
If he doesn't do this, what should a man do?
….
My heart is still young dear
In which trouble is life dear
He has made my life bitter
What a sweet tongue dear

If I can't listen to you, who will listen to the story of sorrow?
Whose tongue will open then if we can't hear it

Every step that does not know how to make a new trick
He is not even a leader, what will he be a leader?
….
Crying of a coming storm
Nah God wanted me to drown on the beach
….
What is the mention of the past?
Well passed, well passed.

Translated


جواب چھوڑیں