مری غزل میں تھیں اس کی نزاکتیں ساری اسی کے رُوئے…

مری غزل میں تھیں اس کی نزاکتیں ساری
اسی کے رُوئے حسیں کی صباحتیں ساری

وہ بولتا تھا تو ہر اک تھا گوش بر آواز
وہ چپ ہوا تو ہیں بہری سماعتیں ساری

وہ کیا گیا کہ ہر اک شخص رہ گیا تنہا
اسی کے دم سے تھیں باہم رفاقتیں ساری

ڈبو گیا وہ مرا لفظ لفظ دریا میں
وہ غرق کر گیا میری علامتیں ساری

وہ ایک لمحہ سرِ دار جو چمک اٹّھا
اس ایک لمحے پہ قربان ساعتیں ساری

جہاں پہ دفن ہے اس کے بدن کا تاج محل
ادھر دریچے رکھیں گی عمارتیں ساری

(منظور عارف)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

All his words were in my poem
All the conditions of beauty are in front of him.

When he used to speak, everyone was a gosh voice.
When he is silent, all the hearings are deaf.

It was done that every person was left alone
All the friendships were with him

He drowned my word in the river
He drowned all my signs

That one moment that shines
All the moments are sacrificed for this one moment

The Taj Mahal of the body where it is buried.
All the buildings will keep windows here

Manzoor Arif)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated


جواب چھوڑیں