وہ بھلا کیسے بتائے کہ غم ہجر ہے کیا جس کو آغوش مح…

وہ بھلا کیسے بتائے کہ غم ہجر ہے کیا
جس کو آغوش محبت کبھی حاصل نہ ہوا
..
مشہور آئی اے ایس افسر اور شاعر حبیبؔ احمد صدیقی کا یومِ ولادت
January 15, 1908

نام حبیب_احمد_صدیقی اور تخلص حبیبؔ تھا۔ 15؍جنوری 1908ء کو سیوہارہ، ضلع بجنور(یوپی) میں پیدا ہوئے۔ مسلم یونیورسٹی علی گڑھ سے 1929ء میں ایم اے انگریزی اور ایل ایل بی کے امتحانات پاس کیے۔ ملازمت کا آغاز ڈپٹی کلکٹری کے عہدے سے ہوا۔ ملازمت کے سلسلے میں گورکھپور، کان پور، لکھنؤ مختلف مقامات میں رہے۔ ترقی کرکے نینی تال کے کمشنر کے عہدے پر فائز رہے۔ یوپی پبلک سروس کمیشن کے ممبر بھی رہے۔ 1969ء میں پاکستان چلے گئے۔ آپ کے کلام کے دو مجموعے’’جلوۂ صد رنگ‘‘ اور ’’گل صد برگ‘‘ شائع ہوچکے ہیں۔ آپ وفات پاچکے ہیں۔
بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد اول)،محمد شمس الحق،صفحہ:398

حبیبؔ احمد صدیقی کے یومِ ولادت پر منتخب اشعار

مجھ کو احساس رنگ و بو نہ ہوا
یوں بھی اکثر بہار آئی ہے
———-
وہ بھلا کیسے بتائے کہ غم ہجر ہے کیا
جس کو آغوش محبت کبھی حاصل نہ ہوا
———-
آپ شرمندہ جفاؤں پہ نہ ہوں
جن پہ گزری تھی وہی بھول گئے
———-
رعنائی بہار پہ تھے سب فریفتہ
افسوس کوئی محرم راز خزاں نہ تھا
———-
اپنے دامن میں ایک تار نہیں
اور ساری بہار باقی ہے
———-
اب بہت دور نہیں منزل دوست
کعبے سے چند قدم اور سہی
———-
گلوں سے اتنی بھی وابستگی نہیں اچھی
رہے خیال کہ عہد خزاں بھی آتا ہے
———-
یا دیر ہے یا کعبہ ہے یا کوئے بتاں ہے
اے عشق تری فطرت آزاد کہاں ہے
———-
عافیت کی امید کیا کہ ابھی
دل امیدوار باقی ہے
———-
ہر قدم پر ہے احتساب عمل
اک قیامت پہ انحصار نہیں
———-
کبھی بے کلی کبھی بے دلی ہے عجیب عشق کی زندگی
کبھی غنچہ پہ جاں فدا کبھی گلستاں سے غرض نہیں
———-
میرے لئے جینے کا سہارا ہے ابھی تک
وہ عہد تمنا کہ تمہیں یاد نہ ہوگا
———-
ہزاروں تمناؤں کے خوں سے ہم نے
خریدی ہے اک تہمت پارسائی
———-
موت کے بعد بھی مرنے پہ نہ راضی ہونا
یہی احساس تو سرمایۂ دیں ہوتا ہے
———-
جس کے واسطے برسوں سعئ رائیگاں کی ہے
اب اسے بھلانے کی سعئ رائیگاں کر لیں
———-
نگاہ لطف کو الفت شعار سمجھے تھے
ذرا سے خندۂ گل کو بہار سمجھتے تھے
———-
تسلیم ہے سعادت ہوش و خرد مگر
جینے کے واسطے دل ناداں بھی چاہئے
———-
بصد ادائے دلبری ہے التجائے مے کشی
یہ ہوش اب کسے کہ مے حرام یا حلال ہے
———-
جب کوئی فتنۂ ایام نہیں ہوتا ہے
زندگی کا بڑی مشکل سے یقیں ہوتا ہے
———-
ہائے بیداد محبت کہ یہ ایں بربادی
ہم کو احساس زیاں بھی تو نہیں ہوتا ہے
———-
ہے نوید بہار ہر لب پر
کم نصیبوں کو اعتبار نہیں

#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام

️ انتخاب : شمیم ریاض

How can he tell what is the grief of separation?
The one who never got the arms of love
..
Birthday of famous ISS officer and poet Habib Ahmed Siddiqui
January 15, 1908

The name was Habib _ Ahmad _ Siddiqui and Takhlis Habib. Born on 15 / January 1908 in Sewhara, Bajnor District (UP). From Muslim University Aligarh in 1929 MA English and LLBK Passed the exams. Started the job as Deputy Collector. Stayed in different places in Gorakhpur, Kanpur, Lucknow for the job. Developed and appointed as Commissioner of Nani Tal. Also a member of UP Public Service Commission. Moved to Pakistan in 1969 Two collections of your words ′′ Jalwah Sad Rang ′′ and ′′ Gul Sadburg ′′ have been published. You have died.
Recruitment: The poem (first soon), Muhammad Shams ul Haq, page: 398

Selected poems on the birthday of Habib Ahmad Siddiqui

I didn't feel the color and smell
Spring has often come like this
———-
How can he tell what is the grief of separation?
The one who never got the arms of love
———-
Don't be ashamed of the unfaithfulness
Those who had passed on have forgotten
———-
All were busy in spring.
Alas, there was no autumn secret in Muharram.
———-
Not a string in my own feet
And the whole spring is left
———-
Destination is not far now friend
Few steps more from Kaaba
———-
This much affiliation with the throats is not good
Keep thinking that autumn promise also comes.
———-
Is it late or Kaaba or someone tell me?
O love, where is your nature free?
———-
Expecting wellness right now
The candidate is left with a heart
———-
Accountability is at every step.
I don't depend on the day of judgement.
———-
Sometimes the life of a strange love is unconditional and sometimes heartless.
Sometimes it is not necessary to die on a garden, sometimes it is not necessary for a garden.
———-
I still have the support to live
The promise of desire that you will not remember
———-
With the blood of thousands of wishes
I have bought a slander of piousness
———-
Don't be happy to die even after death
This is the feeling of SARMAI.
———-
For whom I have been wasted for years
Now waste the way to forget him
———-
The sight of joy was considered as love
We used to consider the trench of Gul as spring.
———-
I accept the blessing of senses and wisdom but
You need an innocent heart to live.
———-
It's a purpose of heartbreak, it's a request for suicide.
Who is this conscious now that it is forbidden or halal?
———-
When there is no mischief days
Life is very difficult to believe
———-
Alas, this is the destruction of love.
We don't even realize the loss
———-
Naveed Spring is on every lips
The less fortunate don't trust

#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام

️ Selection: Shamim Riaz

Translated


جواب چھوڑیں