صدا کسے دیں نعیمیؔ کسے دکھائیں زخم اب اتنی رات گئ…

صدا کسے دیں نعیمیؔ کسے دکھائیں زخم
اب اتنی رات گئے کون جاگتا ہوگا

جگرؔ مرادآبادی کے شاگرد معروف شاعر عبدالحفیظ_نعیمیؔ کا یومِ ولادت

نام عبدالحفیظ اور تخلص نعیمیؔ تھا۔ 15؍جنوری 1911ء کو موضع کرگناں ، ضلع پیلی بھیت (یوپی) میں پیدا ہوئے۔ تعلیم کی ابتدا ایک مکتب سے ہوئی جہاں کچھ اردو اور فارسی کی تعلیم حاصل کی۔ ان کے گاؤں سے دو میل کے فاصلے پر ایک اسکول تھا۔ اس اسکول سے ساتویں درجے کا امتحان پاس کرکے مزید تعلیم کے لیے 1926ء میں گورنمنٹ ہائی اسکول ، پیلی بھیت میں داخلہ ہوا۔ اپریل 1930ء میں اول پوزیشن حاصل کرکے ہائی اسکول پاس کیا۔ اپریل 1936ء میں پرائیویٹ طور پر بی اے پاس کیا۔ ان کے اصرار پر ان کے والد نے ان کو علی گڑھ بھیج دیا جہاں انھوں نے ایم اے اور قانون کے امتحانات پاس کیے۔ تعلیم سے فارغ ہونے کے بعد وکالت کے پیشے سے منسلک ہوگئے۔زمانہ طالب علمی ہی میں نعیمی نے شاعری شروع کردی تھی۔ جگر مراد آبادی سے تلمذ حاصل تھا۔ ان کی تصانیف کے نام یہ ہیں:
نظم : ’نجم درخشاں‘، ’مرتبہ اندلس‘(حصہ اول)، ’محراب گل ‘(شعری مجموعہ)، ’روزن خواب‘(شعری مجموعہ)۔
نثر : ’سرشار محبت‘، ’مجاہد اسلام‘۔
بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد اول)،محمد شمس الحق،صفحہ:421

عبدالحفیظ نعیمیؔ کے یومِ ولادت پر منتخب اشعار

تمہارے سنگ تغافل کا کیوں کریں شکوہ
اس آئنے کا مقدر ہی ٹوٹنا ہوگا
———-
صدا کسے دیں نعیمیؔ کسے دکھائیں زخم
اب اتنی رات گئے کون جاگتا ہوگا
———-
کھڑا ہوا ہوں سر راہ منتظر کب سے
کہ کوئی گزرے تو غم کا یہ بوجھ اٹھوا دے
———-
مرے خلوص پہ شک کی تو کوئی وجہ نہیں
مرے لباس میں خنجر اگر چھپا نکلا
———-
میں بھی اس صفحۂ ہستی پہ ابھر سکتا ہوں
رنگ تو تم مری تصویر میں بھر کر دیکھو
———-
ماضی کے ریگ زار پہ رکھنا سنبھل کے پاؤں
بچوں کا اس میں کوئی گھروندا بنا نہ ہو
———-
سجدہ کے ہر نشاں پہ ہے خوں سا جما ہوا
یارو یہ اس کے گھر کا کہیں راستہ نہ ہو
———-
حسن اک دریا ہے صحرا بھی ہیں اس کی راہ میں
کل کہاں ہوگا یہ دریا یہ بھی تو سوچو ذرا
———-
یہ ہاتھ راکھ میں خوابوں کی ڈالتے تو ہو
مگر جو راکھ میں شعلہ کوئی دبا نکلا
———-
مرے خوابوں کی چکنی سیڑھیوں پر
نہ جانے کس کا بت ٹوٹا پڑا ہے
———-
سو بار اک گلی میں مجھے لے گیا یہ وہم
کھڑکی سے کوئی مصلحتاً جھانکتا نہ ہو
———-
ہر ایک درد کا درماں ہے لوگ کہتے ہیں
مگر وہ درد نعیمیؔ جو خود مسیحا دے

#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام

️ انتخاب : شمیم ریاض

Whom should I call Naeemi, whom should I show my wounds
Now who will be awake after so many nights

Birthday of famous poet Abdul Hafeez _ Naeemi, student of Jigar Muradabadi

The name was Abdul Hafeez and Takhlis Naeemi. Born on 15 / January 1911 in Mangi Kargana, Peli Bheet (UP). Education started from a school where some studied Urdu and Persian. Their villages There was a school about two miles from the school. Passed the seventh grade examination from the school and admitted to Government High School, Pali Bheet in 1926 for further education. In April 1930, he got the first position in the high school. Passed. Passed BA privately in April 1936 On his insisting his father sent him to Aligarh where he passed MA and law exams. Advocacy after getting fired from education. He got connected to the profession. Naeemi started poetry in the age of student. Jigar Murad Abadi was attached. Here are the names of his books:
Poem: ' Najam Darkshan ', ' Bar Andalusia ' (Part), ' Mehrab Gul ' (Poetry Collection), ' Rozan Khawab ' (Poetry Collection
Prose: ' Dedicated love ', ' Mujahid Islam '.
Recruitment: The poem (first soon), Muhammad Shams ul Haq, page: 421

Selected poems on the birthday of Abdul Hafiz Naeemi

Why complain about your indifference?
The fate of this mirror will be broken
———-
Whom should I call Naeemi, whom should I show my wounds
Now who will be awake after so many nights
———-
I have been standing on the way since long.
If someone passes, he can bear this burden of sorrow
———-
There is no reason to doubt my sincerity.
If the dagger was hidden in my dress
———-
I can also emerge on this page of entity
Look at the color in my picture.
———-
Keep your feet carefully on the regulations of the past.
There should be no house for children in this
———-
Every sign of prostration is steady like blood.
Friends, this should not be any way to his house
———-
Beauty is a river, desert is also in its way.
Where will this river be tomorrow? Think about this too.
———-
If you put these hands of dreams in ashes
But when a flame came out to be pressed in ashes
———-
On the slippery stairs of my dreams
I don't know whose idol is broken
———-
This illusion took me to a street hundred times
No one should peep out the window
———-
Every pain is a pain, people say.
But the pain of Naeemi who himself gives the Messiah

#بشکریہ_ریختہ_ڈاٹ_کام

️ Selection: Shamim Riaz

Translated


جواب چھوڑیں