وہ ہوچکا تھا وطن سے غافل وہ زر پرستوں کے کام آیا …

وہ ہوچکا تھا وطن سے غافل وہ زر پرستوں کے کام آیا
جسے نہ تھی کچھ وطن کی قیمت اسی کے ہاتھوں نظام آیا

صغر ا عالم کا یومِ پیدائش
اصلی نام صغرا بیگم۔ اٹھارہ جنوری، 1938پیدائش۔ گلبرگہ، کرناٹک۔ ان کے سات شعری مجموعے شائع ہوچکے ہیں – جہاں وہ ایک کامیاب شاعرہ اور نثر نگار ہیں وہیں بہترین استاد بھی۔ان کو طویل غزلیں کہنے پر ملکہ حاصل تھا۔
دید کا اصرار موسیٰ لن ترانی کوہ طور
ہم نے آنکھیں بند کیں اور آ گئے تیرے حضور

اب حنائی دست کی ہوں گی اجارہ داریاں
آنکھ میں شبنم جبیں کے نور میں رنگ شعور

بات کرنا موسم برسات کی پہلی جھڑی
مسکرا کے دیکھنا قوس قزح کا ہے ظہور

پھول بستی میں چلیں ہمجولیوں کا ساتھ ہے
شہروں شہروں بڑھ گیا ہے سنگ زادوں کا فتور

پیش خدمت ہے یہ اپنی بات اپنا ادعا
دیکھنا حرف سخن پر کس کو حاصل ہے فتور

حمد کے اشعار:
صدائے کن سے ابد تک شباب تیرا ہے
عیاں بھی تو ہی ہے پنہاں حجاب تیرا ہے
کسی بھی در سے اجالوں کی بھیک کیا مانگیں
اندھیری شب بھی تیری آفتاب تیرا ہے

نعتیہ اشعار:
میرے سرکار کی توصیف میں دفتر لکھنا
صاحب ِلوح وقلم علم کے مرکز لکھنا
خاک بطحا میں مرے تن کو ملا کر لکھنا
میری تقدیر محمد کو سنا کر لکھنا
….
مجھ کو حاصل ہوں مدینے کے اجالے یا رب
اک مرا نام بھی اب کے سر محضر لکھنا
میں نہ لکھ پائوں گی توصیفِ محمد صغٰریؔ
اتنا آسان نہیں توصیفِ پیمبر لکھنا

دل دہل جائے گا اور روح تڑپ اٹھے گی
اب اذانوں کی صدا بن کے ابھرنا ہوگا
ناخدا اپنے سفینے کا بھرم رکھ لینا
آگ دریا کا ہے اس پار اترنا ہوگا

He had become negligent of the homeland. He was useful to the fiaters.
The one who didn't have the price of the country, the system came to his

Birthday of Saghar Alam
Original name Saghara Begum. January 1938, 1938 Born. Gulbarga, Karnataka. Her seven poetry collections have been published – where she is a successful poet and prose writer and best teacher. She had a queen for long lyrics.
The insistence of seeing Musa Lyn Tarani Mount Tor
We closed our eyes and came to you

Now the monopoly will be of Hannai Dasta
The dew in the eyes, the color of consciousness in the light of the lips

Talking about the first shower of rainy season
Smile and see, it is the appearance of rainbow.

Let's go to the flower town, we are with our friends.
Cities and cities have increased, the intoxication of the sons of stone has increased

Presenting your words, your prayer
See who gets the fetus on the word of words

Poetry of praise:
From the voice of Kun, your youth is forever.
You are exposed, the hijab is yours.
Beg for light from any door
Even the dark night is yours, the sun is yours.

Poetry of poetry:
Write an office in the Tauseef of my master
Writing the center of knowledge
Write my body together in the dust of Batha
Write my fate after reciting Muhammad
….
May I get the light of Madinah O Lord
Write my name as well now.
I will not be able to write Tauseef Muhammad Saghari
It's not easy to write Tauseef of Prophet.

The heart will hurt and the soul will tremble
Now we will have to rise as the voice of Azan
Sailor, keep the illusion of your bed.
The fire is of the river, we have to get across it.

Translated


جواب چھوڑیں