میری مرقد پہ تم ہرگز نہ آنا ( By: Mary Elizabeth …

میری مرقد پہ تم ہرگز نہ آنا
( By: Mary Elizabeth Frye)

میری مرقد پہ تم ہرگز نہ آنا
کھڑے ہو کے نہ ہی آنسو بہانا
کہ میں اس قبر میں سوئی نہیں ہوں
نہیں ہے یہ جگہ میرا ٹھکانہ

جو مجھ کو ڈھونڈنا چاہو
تو سن لو

نسیم سحر میں پاو گے مجھ کو
چمکتی برف کے ذروں میں دیکھو
میں ہوں جاڑے کی ٹھنڈی دھوپ اندر
میں ہوں پت جھڑ ہلکی ہلکی بارش

میں ہوں کوئل کی لہراتی ہوئی ڈار
میں ہوں تاریکی میں روشن ستارہ
میں لمبی رات کی ٹوٹی خموشی
جسے سن سکتا ہے کوئی سحر خیز

سنو تم یاد رکھنا

نہ اس مرقد پہ تم آنسو بہانا
کہ میں اس قبر میں سوئی نہیں ہوں
نہیں ہے یہ جگہ میرا ٹھکانہ

(ترجمہ: عاصم فرید)


بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2988292471401266

جواب چھوڑیں