'اے وطن کے سجیلے جوانو میرے نغمے تمہارے لیے ہ…

'اے وطن کے سجیلے جوانو میرے نغمے تمہارے لیے ہیں'، 'جیوے جیوے جیوے پاکستان'، 'ہم مصطفوی مصطفوی ہیں'، 'میرا پیغام پاکستان' اور 'ہم مائیں ہم بہنیں ہم بیٹیاں' جیسے خوبصورت ملی نغمات کے خالق
جمیل الدین عالیؔ کا یومِ پیدائش
Jan 20, 1926
آج 20 جنوری کو معروف شاعر، سفر نامہ نگار اور کالم نگار، جناب جمیل الدین عالی کی سالگرہ ہے۔
جمیل الدین عالی کا اصل نام مرزا جمیل الدین احمد خاں اور عالی تخلص ہے۔ آپ 20 جنوری 1926ء کو دہلی میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم دہلی میں ہی حاصل کی اور 1940ء میں اینگلو عریبک کالج دریا گنج دہلی سے میٹرک کا امتحان پاس کیا۔ 1945ء میں معاشیات، تاریخ اور فارسی میں بی اے کیا۔ قیامِ پاکستان کے بعد آپ اپنے خاندان کے ہمراہ کراچی میں مقیم ہوئے۔
جناب جمیل الدین عالی ایک ممتاز شاعر ہیں۔ آپ نے غزلیں، نظمیں، گیت اور دوہے لکھے۔ آپ کے لکھے ہوئے ملی نغمے بھی بے حد مقبول ہوئے جمیل الدین عالی کا انتقال 23 نومبر، 2015ء کو کراچی میں ہوا۔
….
جمیل الدین عالی – دوہے
……
دھیرے دھیرے کمر کی سختی کرسی نے لی چاٹ
چپکے چپکے من کی شکتی افسر نے دی کاٹ
….
دوہے کبت کہہ کہہ کر عالؔی من کی آگ بجھائے
من کی آگ بجھی نہ کسی سے اسے یہ کون بتائے
….
ایک بدیسی نار کی موہنی صورت ہم کو بھائی
اور وہ پہلی نار تھی بھیا جو نکلی ہرجائی
….
ہر اک بات میں ڈالے ہے ہندو مسلم کی بات
یہ نا جانے الھڑ گوری پریم ہے خود اک ذات
…..
اک گہرا سنسان سمندر جس کے لاکھ بہاؤ
تڑپ رہی ہے اس کی اک اک موج پہ جیون ناؤ

اس دیوانی دوڑ میں بچ بچ جاتا تھا ہر بار
اک دوہا سو اسے بھی لے جا تو ہی خوش رہ یار

کچے محل کی رانی آئی رات ہمارے پاس
ہونٹ پہ لاکھا گال پہ لالی آنکھیں بہت اداس
….
نا کوئی اس سے بھاگ سکے اور نا کوئی اس کو پائے
آپ ہی گھاؤ لگائے سمے اور آپ ہی بھرنے آئے
….
نیند کو روکنا مشکل تھا پر جاگ کے کاٹی رات
سوتے میں آ جاتے وہ تو نیچی ہوتی بات

پہلے کبھی نہیں گزری تھی جو گزری اس شام
سب کچھ بھول چکے تھے لیکن یاد رہا اک نام

پیار کرے اور سسکی بھرے پھر سسکی بھر کر پیار
کیا جانے کب اک اک کر کے بھاگ گئے سب یار

روٹی جس کی بھینی خوشبو ہے ہزاروں راگ
نہیں ملے تو تن جل جائے ملے تو جیون آگ
….
روز اک محفل اور ہر محفل ناریوں سے بھرپور
پاس بھی ہوں تو جان کے بیٹھیں عالؔی سب سے دور

ساجن ہم سے ملے بھی لیکن ایسے ملے کہ ہائے
جیسے سوکھے کھیت سے بادل بن برسے اڑ جائے
….
شہر میں چرچا عام ہوا ہے ساتھ تھے ہم اک شام
مجھے بھی جانیں تجھے بھی جانیں لوگ کریں بد نام

سورؔ کبیرؔ بہاریؔ میراؔ ؔرحمنؔ تلسیؔ داس
سب کی سیوا کی پر عالؔی گئی نہ من کی پیاس
….
اردو والے ہندی والے دونوں ہنسی اڑائیں
ہم دل والے اپنی بھاشا کس کس کو سکھلائیں

' O the stylish youth of the country, my songs are for you ', ' Long live Pakistan ', ' We are Mustafavi Mustafavi ', ' My message Pakistan ' and ' We mothers, we sisters, we daughters ' are the creator of beautiful songs.
Birthday of Jameeluddin Aali
Jan 20, 1926
Today, January 20, is the birthday of renowned poet, travel writer and columnist, Mr. Jameeluddin Aali.
Jameeluddin Aali's real name is Mirza Jameeluddin Ahmed Khan and Aali Taklas. He was born in Delhi on 20 January 1926 He received early education in Delhi and in 1940 Anglo Aribak College Darya Ganj Delhi Passed matric examination from. BA in Economics, History and Persian in 1945 After the establishment of Pakistan, he lived in Karachi with his family.
Mr. Jameeluddin Aali is a prominent poet. He wrote lyrics, poems, songs and two. The songs you wrote became very popular. Jameeluddin Aali died on November 23, 2015 in Karachi.
….
Jameeluddin Aali – Two
……
Slowly the hardness of the waist, the chair licked it
Secretly the shakti officer cut the heart.
….
Say two Kabat and extinguish the fire of the world.
The fire of the heart did not extinguish from anyone, who will tell him that
….
The beautiful face of a bad person to us brother
And that was the first telor that came out
….
In every word, Hindu and Muslim are put in words.
He doesn't know that he is a fair love himself.
…..
A deep deserted sea with millions of flows.
I am suffering from every wave of her life now

In this crazy race, I used to survive every time.
One Doha, so take him too, you will be happy

The queen of raw palace came to us at night
Red eyes on the lips and red eyes on the cheek, very sad
….
No one can run away from him and no one can find him
You have hurt me and you have come to fill me.
….
It was difficult to stop sleep but spent the night awake.
If she would have come to sleep, it would have been low.

I had never passed before that evening.
I had forgotten everything but I remembered a name

Love and soaky and then soaky full of love
Who knows when all the friends ran away one by one

The bread which has the fragrance of thousands of raga
If you don't get it, your body will burn, if you get it
….
Everyday a gathering and every gathering is full of women.
Even if I am close, I will sit with my life. The scholars are far away from everyone.

Sweetheart met me but met me like that
Like a cloud flies away from a dry field without rain
….
There is a public discussion in the city, we were together one evening
Know me too, know you too, people make bad name

Surah Kabir, Bihari, My, Rahman, Tulsi Das
Except for everyone, the Lord has not gone, the thirst of the heart.
….
Urdu people and Hindi people both make fun of them
Whom should we teach our language, the people of the heart?

Translated


جواب چھوڑیں