ساقی فاروقی کا منتخب کلام: ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ کیا ط…

ساقی فاروقی کا
منتخب کلام:
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیا طلسم ہے کیوں رات بھر سسکتا ہوں
وہ کون ہے جو دیوں میں جلا رہا ہے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے خبر تھی مرا انتظار گھر میں رہا
یہ حادثہ تھا کہ میں عمر بھر سفر میں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مدت ہوئی اک شخص نے دل توڑ دیا تھا
اس واسطے اپنوں سے محبت نہیں کرتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدا کے واسطے موقع نہ دے شکایت کا
کہ دوستی کی طرح دشمنی نبھایا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب گھر بھی نہیں گھر کی تمنا بھی نہیں ہے
مدت ہوئی سوچا تھا کہ گھر جائیں گے اک دن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی
تجھ سے بچھڑ کے زندگی دنیا سے جا ملی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے چاہا تھا کہ اشکوں کا تماشا دیکھوں
اور آنکھوں کا خزانہ تھا کہ خالی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک یاد کی موجودگی سہہ بھی نہیں سکتے
یہ بات کسی اور سے کہہ بھی نہیں سکتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پیاس بڑھتی جا رہی ہے بہتا دریا دیکھ کر
بھاگتی جاتی ہیں لہریں یہ تماشا دیکھ کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس کی ہوس کے واسطے دنیا ہوئی عزیز
واپس ہوئے تو اس کی محبت خفا ملی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قتل کرنے کا ارادہ ہے مگر سوچتا ہوں
تو اگر آئے تو ہاتھوں میں جھجک پیدا ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ان سے بھی ملا کرتا ہوں جن سے دل نہیں ملتا
مگر خود سے بچھڑ جانے کا اندیشہ بھی رہتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے شہر سے مایوس ہو کے لوٹ آیا
پرانے سوگ بسے تھے نئے مکانوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری آنکھوں میں انوکھے جرم کی تجویز تھی
صرف دیکھا تھا اسے اس کا بدن میلا ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری عیار نگاہوں سے وفا مانگتا ہے
وہ بھی محتاج ملا وہ بھی سوالی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آگ ہو دل میں تو آنکھوں میں دھنک پیدا ہو
روح میں روشنی لہجے میں چمک پیدا ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل ہی عیار ہے بے وجہ دھڑک اٹھتا ہے
ورنہ افسردہ ہواؤں میں بلاوا کیسا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اور کسی کے ہو تو ہم اور کسی کے
اور دونوں ہی قسمت کی شکایت نہیں کرتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لوگ لمحوں میں زندہ رہتے ہیں
وقت اکیلا اسی سبب سے ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناموں کا اک ہجوم سہی میرے آس پاس
دل سن کے ایک نام دھڑکتا ضرور ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کھل نہیں سکا کہ مجھے نم نہیں ملا
ساقی مرے مزاج کا موسم نہیں ملا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم تنگنائے ہجر سے باہر نہیں گئے
تجھ سے بچھڑ کے زندہ رہے مر نہیں گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عجب کہ صبر کی میعاد بڑھتی جاتی ہے
یہ کون لوگ ہیں فریاد کیوں نہیں کرتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈوب جانے کا سلیقہ نہیں آیا ورنہ
دل میں گرداب تھے لہروں کی نظر میں ہم تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے سمجھنے کی کوشش نہ کی محبت نے
یہ اور بات ذرا پیچ دار میں بھی تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کے وارث نظر نہیں آئے
شاید اس لاش کے پتے ہیں بہت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ خدا ہے تو مری روح میں اقرار کرے
کیوں پریشان کرے دور کا بسنے والا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حادثہ یہ ہے کہ ہم جاں نہ معطر کر پائے
وہ تو خوش بو تھا اسے یوں بھی بکھر جانا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنی آنکھوں سے اپنا زوال دیکھتا ہوں
میں بے وفا ہوں مگر بے خبر نہ جان مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی نظر میں ٹھہر دھیان سے اتر کے نہ جا
اس ایک آن میں سب کچھ تباہ کر کے نہ جا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خاک میں اس کی جدائی میں پریشان پھروں
جب کہ یہ ملنا بچھڑنا مری مرضی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہی جینے کی آزادی وہی مرنے کی جلدی ہے
دوالی دیکھ لی ہم نے دسہرے کر لیے ہم نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ میں سات سمندر شور مچاتے ہیں
ایک خیال نے دہشت پھیلا رکھی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نئے چراغ جلا یاد کے خرابے میں
وطن میں رات سہی روشنی منایا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر ان سیپیوں میں پانیوں کا شور کیسا تھا
سمندر سنتے سنتے کان بہرے کر لیے ہم نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح تک رات کی زنجیر پگھل جائے گی
لوگ پاگل ہیں ستاروں سے الجھنا کیسا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہی آنکھوں میں اور آنکھوں سے پوشیدہ بھی رہتا ہے
مری یادوں میں اک بھولا ہوا چہرا بھی رہتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے اندر اسے کھونے کی تمنا کیوں ہے
جس کے ملنے سے مری ذات کو اظہار ملے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حیرانی میں ہوں آخر کس کی پرچھائیں ہوں
وہ بھی دھیان میں آیا جس کا سایہ کوئی نہ تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مٹ جائے گا سحر تمہاری آنکھوں کا
اپنے پاس بلا لے گی دنیا اک دن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے چہرے پہ اجالے کی سخاوت ایسی
اور مری روح میں نادار اندھیرا ایسا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حادثہ یہ ہے کہ ہم جاں نہ معطر کر پائے
وہ تو خوش بو تھا اسے یوں بھی بکھر جانا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حیرانی میں ہوں آخر کس کی پرچھائیں ہوں
وہ بھی دھیان میں آیا جس کا سایہ کوئی نہ تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خاک میں اس کی جدائی میں پریشان پھروں
جب کہ یہ ملنا بچھڑنا مری مرضی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے چاہا تھا کہ اشکوں کا تماشا دیکھوں
اور آنکھوں کا خزانہ تھا کہ خالی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری آنکھوں میں انوکھے جرم کی تجویز تھی
صرف دیکھا تھا اسے اس کا بدن میلا ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب گھر بھی نہیں گھر کی تمنا بھی نہیں ہے
مدت ہوئی سوچا تھا کہ گھر جائیں گے اک دن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی نظر میں ٹھہر دھیان سے اتر کے نہ جا
اس ایک آن میں سب کچھ تباہ کر کے نہ جا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بجھے لبوں پہ ہے بوسوں کی راکھ بکھری ہوئی
میں اس بہار میں یہ راکھ بھی اڑا دوں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل ہی عیار ہے بے وجہ دھڑک اٹھتا ہے
ورنہ افسردہ ہواؤں میں بلاوا کیسا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ایک کر کے لوگ بچھڑتے چلے گئے
یہ کیا ہوا کہ وقفۂ ماتم نہیں ملا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاؤں مارا تھا پہاڑوں پہ تو پانی نکلا
یہ وہی جسم کا آہن ہے کہ مٹی نکلا
میرے ہمراہ وہی تہمتِ آزادی ہے
میرا ہر عہد وہی عہدِ اسیری نکلا
ایک چہرہ ہے کہ اب یاد نہیں آتا ہے
ایک لمحہ تھا وہی جان کا بیری نکلا
میں اسے ڈھونڈ رہا تھا کہ تلاش اپنی تھی
اک چمکتا ہوا جذبہ تھا کہ جعلی نکلا
ایک مات ایسی ہے جو ساتھ چلی آئی ہے
ورنہ ہر چال سے جیتے ہوئے بازی نکلا
میں عجب دیکھنے والا ہوں کہ اندھا کہلاؤں
وہ عجب خاک کا پتلا تھا کہ نوری نکلا
میں وہ مردہ ہوں کہ آنکھیں مری زندوں جیسی
بین کرتا ہوں کہ میں اپنا ہی ثانی نکلا
جان پیاری تھی مگر جان سے بیزاری تھی
جان کا کام فقط جان فروشی نکلا
خاک میں اس کی جدائ میں پریشان پھروں
جب کہ یہ ملنا بچھڑنا مری مرضی نکلا
اک نئے نام سے پھر اپنے ستارے الجھے
یہ نیا کھیل نئے خواب کا بانی نکلا
وہ مری روح کی الجھن کا سبب جانتا ہے
جسم کی پیاس بجھانے پہ بھی راضی نکلا
میری بجھتی ہوئی آنکھوں سے کرن چُنتا ہے
میری آنکھوں کا کھنڈر شہرِ معانی نکلا
میری عیار نگاہوں سے وفا مانگتا ہے
وہ بھی محتاج ملا، وہ بھی سوالی نکلا
میں نے چاہا تھا کہ اشکوں کا تماشا دیکھوں
اور آنکھوں کا خزانہ تھا کہ خالی نکلا
صرف حشمت کی طلب، جاہ کی خواہش پائی
دل کو بے داغ سمجھتا تھا، جذامی نکلا
اک بلا آتی ہے اور لوگ چلے جاتے ہیں
اک صدا کہتی ہے ہر آدمی فانی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ لوگ جو زندہ ہیں وہ مر جائیں گے اک دن
اک رات کے راہی ہیں، گزر جائیں گے اک دن
یوں دل میں اٹھی لہر، یوں آنکھوں میں بھرے رنگ
جیسے مرے حالات سنور جائیں گے اک دن
دل آج بھی جلتا ہے اسی تیز ہوا میں
اے تیز ہوا دیکھ، بکھر جائیں گے اک دن
یوں ہے کہ تعاقب میں ہے آسائشِ دنیا
یوں ہے کہ محبت سے مُکر جائیں گے اک دن
یوں ہوگا کہ ان آنکھوں سے آنسو نہ بہیں گے
یہ چاند ستارے بھی ٹھہر جائیں گے اک دن
اب گھر بھی نہیں، گھر کی تمنّا بھی نہیں ہے
مدت ہوئی سوچا تھا کہ گھر جائیں گے اک دن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی
تجھ سے بچھڑ کے زندگی دنیا سے جا ملی
اک قلزم حیات کی جانب چلی تھی عمر
اک دن یہ جوئے تشنگی صحرا سے آ ملی
یہ کیسی بے حسی ہے کہ پتھر ہوئی ہے آنکھ
ویسے تو آنسوؤں کی کمک بارہا ملی
میں کانپ اٹھا تھا خود کو وفادار دیکھ کر
موج وفا کے پاس ہی موج فنا ملی
دیوار ہجر پر تھے بہت صاحبوں کے نام
یہ بستی فراق بھی شہرت سرا ملی
پھر رود بے وفائی میں بہتا رہا یہ جسم
یہ رنج ہے کہ تیری طرف سے دعا ملی
وہ کون خوش نصیب تھے جو مطمئن پھرے
مجھ کو تو اس نگاہ سے عسرت سوا ملی
یہ عمر عمر کوئی تعاقب میں کیوں رہے
یادوں میں گونجتی ہوئی کس کی صدا ملی
جس کی ہوس کے واسطے دنیا ہوئی عزیز
واپس ہوئے تو اس کی محبت خفا ملی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

The bartender of Farooqi
Selected words:
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
What is this magic why can I sleep all night
Who is the one who is burning me in the lamps
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I knew my wait was at home
It was an accident that I lived on a journey all my life
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
It's been a long time since a person had broken my heart
That's why you don't love your own people
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
For God's sake, don't give me a chance
Fulfill enmity like friendship
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Now I don't even wish for a home, not even a home.
It's been a long time since I thought that I will go home one day
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I got double punishment for my defeat
After leaving you, I got my life from the world.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I wanted to see the spectacle of tears.
And it was the treasure of eyes that came out empty
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Can't even bear the presence of a memory
Can't even say this to anyone else
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Thirst is increasing after seeing the flowing river
The waves run away after seeing this spectacle
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
For whose lust the world became dear
When he returned, his love got angry.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I want to kill but I think
So if you come, your hands will be born
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I also meet those who don't meet my heart
But there is a fear of getting separated from oneself.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I returned from my city after being disappointed
Old mourning lived in new houses
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
My eyes had a unique crime proposal
Just saw him get his body mixed up
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
My love asks for loyalty from my eyes
He also found needy, he also turned out to be a questioner.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
If there is fire in the heart, then rainbow in the eyes
Let the soul shine in the tone of light
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The heart is crafty, it beats for no reason
Otherwise how to call in depressed winds
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
If you belong to someone else, then we belong to someone else
And both don't complain about luck
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
People live in moments
This is why time is alone
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
There is a crowd of names around me
A name beats after listening to the heart
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I couldn't open that I didn't get wet
Bartender, I didn't get the weather of my
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
We did not go out of separation.
I am alive after leaving you, but not dead.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Strange that the period of patience increases
Who are these people, why don't they cry?
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I did not know how to drown otherwise
There were vortex in the heart, we were in the eyes of the waves
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Love did not try to understand me
This was another thing even in the patch
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
His heirs were not seen
Perhaps this dead body has many leaves.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
He is God so confess in my soul
Why should the inhabitant of far away distant disturb
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The accident is that we couldn't make our lives dead.
He was a fragrance, he had to scatter like this
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I see my downfall with my eyes
I am unfaithful but don't know me
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Don't go down carefully, just stay in your eyes.
Don't destroy everything in this one day
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I wander in the dust in his separation.
When this meeting and separation turned out to be my choice
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Same freedom to live, same hurry to die
We have seen the Dawali, we have done it.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The seven seas in me make a noise
One thought has spread terror
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Burn new lamps in the bad memory
Celebrate the light at night in the homeland
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
But how was the noise of water in these sepis
Listening to the sea, we made our ears deaf.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The night chain will melt by morning
People are crazy, how to mess with the stars
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
He remains hidden in the eyes and also from the eyes
There is a forgotten face in my memories.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Why do I wish to lose her inside
The one who meets me gets the expression of my soul
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I am surprised, whose cover I am
He also noticed who had no shadow
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The dawn of your eyes will be erased
One day the world will call to itself
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The generosity of light on your face is such
And my soul has such a poor darkness.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The accident is that we couldn't make our lives dead.
He was a fragrance, he had to scatter like this
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I am surprised, whose cover I am
He also noticed who had no shadow
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I wander in the dust in his separation.
When this meeting and separation turned out to be my choice
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I wanted to see the spectacle of tears.
And it was the treasure of eyes that came out empty
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
My eyes had a unique crime proposal
Just saw him get his body mixed up
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Now I don't even wish for a home, not even a home.
It's been a long time since I thought that I will go home one day
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Don't go down carefully, just stay in your eyes.
Don't destroy everything in this one day
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The ashes of kisses are scattered on the fused lips.
I'll be blowing this ashes this spring too
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The heart is crafty, it beats for no reason
Otherwise how to call in depressed winds
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
One by one people left
What happened that the mourning was not found?
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I had hit the mountains and the water came out
This is the same body that turned out to be mud
I have the same accusation of freedom.
My every pledge turned out to be the same promise of captivity
There is a face that I don't remember anymore
There was a moment, he turned out to be the berry of life
I was looking for him that the search was mine
There was a shining passion that turned out to be fake
There is a defeat that has come along.
Otherwise, every trick came out to win.
I'm weird to be called blind
He was a strange thin of dust that he turned out to be a light
I am that dead that my eyes are like living
I think I turned out to be my own second
Life was lovely but was bored of life
The work of life turned out to be only prostitution.
Let me roam around in the dust in his separation
When this meeting and separation turned out to be my choice
The stars are entangled with a new name again.
This new game turned out to be the founder of a new dream
He knows the cause of confusion in my soul
He was happy to quench the thirst of the body.
Karen picks out of my fitting eyes
The ruins of my eyes turned out to be the city of meaning
My love asks for loyalty from my eyes
He also found needy, he also turned out to be a questioner
I wanted to see the spectacle of tears.
And it was the treasure of eyes that came out empty
Only demanding glory, got the desire of Jah
He thought my heart was stainless, but turned out to be an emotion
A calamity comes and people go
One voice says that every man turned out to be mortal
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Those who are alive will die one day
One night's rahi, one day will pass
This is how the wave came in the heart, so the eyes filled with colors
As my circumstances will improve one day
The heart still burns in the same strong wind
O wind, see, one day you will scatter
It is like that the world is in pursuit of happiness
It is like that one day we will deny love.
It will happen that tears will not flow from these eyes
These moon and stars will also stop one day
Now I don't even have a home, I don't even wish for a home
It's been a long time since I thought that I will go home one day
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
I got double punishment for my defeat
After leaving you, I got my life from the world.
Omar was going towards life.
One day this betting came from the desert.
What kind of apathy is this that the eye has turned into stone
By the way, I got a lot of tears.
I was shivering after seeing myself loyal
The wave of loyalty has been destroyed.
The names of many people were on the wall of separation.
This town of separation also got fame.
Again this body was flowing in disloyalty
It's sad that I received a prayer from you
Who were the lucky ones who were satisfied
I got this glance except for the love.
Why should someone be in pursuit of this age?
Whose voice was found echoing in memories
For whose lust the world became dear
When he returned, his love got angry.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Translated


جواب چھوڑیں