شفیق خلشؔ چلے بھی آؤ کہ فُرقت سے دِل دُہائی دے غ…

شفیق خلشؔ

چلے بھی آؤ کہ فُرقت سے دِل دُہائی دے
غمِ جہاں بھی، نہ اِس غم سے کُچھ رہائی دے

کبھی خیال، یُوں لائے مِرے قریب تُجھے !
ہرایک لحظہ، ہراِک لب سے تُو سُنائی دے

کبھی گُماں سے ہو قالب میں ڈھل کے اِتنے قریب
تمھارے ہونٹوں کی لرزِش مجھے دِکھائی دے

ہے خوش خیالیِ دل سے کبھی تُو پہلُو میں
کُچھ اِس طرح ، کہ تنفس تِرا سُنائی دے

نسیمِ صُبح کے جَھونکوں سے ہلتے پُھولوں میں
ہمیشہ تُو ہی خِراماں مُجھے دِکھائی دے

گُلوں کے پتّوں پہ بارش کے ننّھے قطروں سے
ہمیشہ، تیری ہی آہٹ مُجھے سُنائی دے

درودریچے سے خوشبو لیے گھر آئی ہَوا
یُوں گُنگُنائے، کہ آمد تِری سُجھائی دے

ہُوں مُنتظر میں کسی ایسے معجزے کا خَلِشؔ
جو میرے خواب کو تعبیر تک رسائی دے

شفیق خَلِشؔ

Shafiq Anxiety

Come on too, let's give heart a cry in free time.
Wherever the sorrows of the world, don't give some relief from this sorrow

Ever thought, bring you closer to me!
Every moment, you should be heard from every lips

Have you ever been so close to being in your heart with a thought?
Let me see the trembling of your lips

You are in the side of my heart with happiness.
In such a way, that your breath can be heard

Naseem in the flowers moving with the sound of morning.
Always let me see you

From the little drops of rain on the leaves of flowers
Always, let me hear your sound

The wind came home with fragrance from the doorstep
Sing in such a way, that your arrival will be seen

I am waiting for such miracles.
Who gives my dream access to interpretation

Shafiq Khalish

Translated


جواب چھوڑیں