جلوہ بے مایہ سا تھا چشم و نظر سے پہلے زیست اک حا…

جلوہ بے مایہ سا تھا چشم و نظر سے پہلے
زیست اک حادثہ تھی قلب و جگر سے پہلے

ملنگ شاعر شیر افضلؔ جعفری کا یومِ وفات
22؍جنوری 1989

نام شیر محمد اور تخلص افضلؔ تھا۔ یکم؍ستمبر 1909ء کو جھنگ، برطانوی ہند کے صوبہ پنجاب میں پیدا ہوئے۔ وہ اردو اور پنجابی زبان کے ایک منفرد لب و لہجے کے شاعر تھے خصوصاً وہ اپنی اردو شاعری کو جس طرح پنجابی زبان کے خوب صورت الفاظ سے ہم آمیز کرتے تھے وہ انہی کا خاصا تھا۔ ان کے شعری مجموعوں میں "سانولے من بھانولے، چناب رنگ، شہر سدا رنگ اور موج موج کوثر" کے نام شامل ہیں۔
شیر افضلؔ جعفری، 22؍جنوری 1989ء کو جھنگ، پاکستان میں وفات پاگئے۔ وہ جھنگ میں قبرستان شہیدین میں آسودۂ خاک ہیں۔

مشہور شاعر شیر افضلؔ جعفری کے یومِ وفات پر منتخب کلام
.
ندی کنارے جو نغمہ سرا ملنگ ہوئے
حباب موج میں آ آ کے جل ترنگ ہوئے
ارم کے پھول ازل کا نکھار طور کی لو
سخی چناب کی وادی میں آ کے جھنگ ہوئے
کبھی جو ساز کو چھیڑا بہار مستوں نے
تو گنگ گنگ شجر ہم زبان چنگ ہوئے
عطا کیا ترے ماتھے نے جن کو عید کا چاند
نثار ان پہ ستاروں کے راگ رنگ ہوئے
شب حیات میں انساں کے ولولے افضلؔ
ابھر کے تارے بنے کہکشاں کے سنگ ہوئے
….
نطق پلکوں پہ شرر ہو تو غزل ہوتی ہے
آستیں آگ سے تر ہو تو غزل ہوتی ہے
ہجر میں جھوم کے وجدان پہ آتا ہے نکھار
رات سولی پہ بسر ہو تو غزل ہوتی ہے
کوئی دریا میں اگر کچے گھڑے پر تیرے
ساتھ ساتھ اس کے بھنور ہو تو غزل ہوتی ہے
مدت عمر ہے مطلوب ریاضت کے لیے
زندگی بار دگر ہو تو غزل ہوتی ہے
لازمی ہے کہ رہیں زیرِ نظر غیب و حضور
دونوں عالم کی خبر ہو تو غزل ہوتی ہے
قاب قوسین کی ارمانِ پیمبر کی قسم
حسن چلمن کے ادھر ہو تو غزل ہوتی ہے
ہاتھ لگتے ہیں فلک ہی سے مضامیں افضلؔ
دل میں جبریل کا پر ہو تو غزل ہوتی ہے

✍️ انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ

The glow was a bit unconditional before the eyes and eyes.
Life was an accident before heart and liver

Death anniversary of Malang poet Sher Afzal Jafri
22 / January 1989

The name was Sher Muhammad and Takhlis Afzal. Born on 1909st / September 1909 in Jhang, British India Province Punjab. He was a unique poet of Urdu and Punjabi language, especially his Urdu poetry as Punjabi. We used to mix with the beautiful words of the language, that was special to them. Their poetry collections include the names of ′′ Sanolay Mann Bhanolay, Chenab Rang, City Sada Rang and Moj Muj Kausar
Sher Afzal Jafri, died on January 22, 1989 in Jhang, Pakistan. He is a rich man in the graveyard of martyrs in Jhang.

Selected poetry on the death anniversary of famous poet Sher Afzal Jafri
.
The song that was made by the river
Hababab came in the waves and got burnt
Flowers of Iram, look for eternity.
Sakhi came to the valley of Chenab and went to Jhang
When the spring intoxicants teased the instrument
So ganggang tree we tongue chung
To whom your forehead gave the moon of Eid
Nisar, the stars have colored them.
In the night of life, people's love is Afzal
The stars of emerging became with the galaxy.
….
If there is a lion on the eyelashes, it is a poem.
If the sleeves are filled with fire, then it is a poem.
In separation, it comes to the stimulant of pleasurable.
If you live at night, it is a poem.
If someone is in the river on a raw pitcher for you
If there is a sailor along with it, it is a poem.
The age is for the required endeavour.
Life is a poem if it's hard again and again
It is necessary to stay under the sight of the unseen and the Prophet
If there is news of both the worlds, it is a poem.
I swear by the desire of the Prophet (PBUH)
If the beauty is beside the blind, it is a poem.
My hands are in the sky, Afzal.
If Gabriel is in the heart, then it is a poem

✍️ Selection: Ejaz Z H

Translated


جواب چھوڑیں