رضی اختر شوق کا یومِ وفات 22 Jan , 1999 22 جنوری…

رضی اختر شوق کا یومِ وفات
22 Jan , 1999

22 جنوری 1999ء کو اردو کے ایک معروف شاعر رضی اختر شوق کراچی میں وفات پاگئے۔ رضی اختر شوق کا اصل نام خواجہ رضی الحسن انصاری تھا اور وہ 23اپریل 1933ء کو سہارنپور میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم حیدر آباد دکن سے حاصل کی اور جامعہ عثمانیہ سے گریجویشن کیا۔ قیام پاکستان کے بعد انہوں نے جامعہ کراچی سے ایم اے کا امتحان پاس کیا اور پھر ریڈیو پاکستان سے اپنی عملی زندگی کا آغاز کیا، جہاں انہوں نے اسٹوڈیو نمبر نو کے نام سے بے شمار خوب صورت ڈرامے پیش کئے۔ رضی اختر شوق جدید لب و لہجے کے شاعر تھے اور ان کے شعری مجموعوں میں مرے موسم مرے خواب اورجست کے نام شامل ہیں۔ مرے موسم مرے خواب پر انہیں اکادمی ادبیات پاکستان نے ہجرہ ایواڈ بھی عطا کیا تھا۔ وہ کراچی میں عزیز آباد کے قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔ ان کا ایک شعر ملاحظہ ہو:

ہم روح سفر ہیں ہمیں ناموں سے نہ پہچان
کل اور کسی نام سے آجائیں گے ہم لوگ
……

ایک ہی آگ کے شعلوں میں جلائے ہوئے لوگ
روز مل جاتے ہیں دو چار ستائے ہوئے لوگ

وہی میں ہوں، وہی آسودہ خرامی میری
اور ہر سمت وہی دام بچھائے ہوئے لوگ

خواب کیسے کہ اب آنکھیں ہی سلامت رہ جائیں
وہ فضا ہے کہ رہیں خود کو بچائے ہوئے لوگ

تیرے محرم تو نہیں اے نگہِ ناز مگر
ہم کو پہچان کہ ہیں تیرے بُلائے ہوئے لوگ

زندگی دیکھ یہ انداز تری چاہت کا
کن صلیبوں کو ہیں سینے سے لگائے ہوئے لوگ

پھر وہی ہم ہیں وہی حلقہ ٴ یاراں بھی ہے شوقؔ
پھر وہی شہر، وہی سنگ اُٹھائے ہوئے لوگ

Death anniversary of Razi Akhtar Shaq
22 Jan, 1999

On January 22, 1999, a renowned Urdu poet Riza Akhtar Shaq died in Karachi. Razi Akhtar Shaq's original name was Khwaja Rzi ul Hasan Ansari and was born on 23 April 1933 in Saharanpur. He received his early education from Hyderabad Deccan and graduated from Ottoman University. After the establishment of Pakistan, he passed the MA examination from the University of Karachi and then started his practical career from Radio Pakistan, where he started studio number He presented many beautiful dramas by his name. Razi Akhtar Shaq was a poet of modern lips and tone and his poetry collections include the names of my seasons, my dreams and my dreams. He was also awarded the Hajra Award by the Academy of Literature Pakistan. What was it? He is a comfortable dust in the graveyard of Azizabad in Karachi. See one of his poetry:

We are the soul journey, do not recognize us by names
Tomorrow we will come by some other name
……

People burnt in the same flames
Two or four persecuted people meet everyday.

That's me, the same richness of mine
And the same people everywhere.

How to dream that now eyes remain safe
It's an atmosphere that people should save themselves.

You are not your Muharram, but you are proud.
We are recognized by the people you called

Life, see this style of your love
Which crusaders are the people who are holding their chest

Then we are the same, the same circle of friends are also fond of
Again the same city, the same stone lifted people

Translated


جواب چھوڑیں