خوشبوؤں کی دشت سے ہمسائیگی تڑپائے گی جس کو بھی ح…

خوشبوؤں کی دشت سے ہمسائیگی تڑپائے گی
جس کو بھی حاصل ہوئی یہ آگہی تڑپائے گی

روشنی کو گنگ ہوتے جس نے دیکھا ہو کبھی
کس حوالے سے اسے تیرہ شبی تڑپائے گی

کاڑھتا تھا میں ہی سنگ سخت پر ریشم سے پھول
کیا خبر تھی یہ نظر شائستگی تڑپائے گی

خواب تھے پایاب اس کا دکھ نہیں کب تھی خبر
مجھ کو تعبیروں کی اک بے قامتی تڑپائے گی

میں نہ کہتا تھا کہ شعلوں سے نہ کرنا دوستی
میں نہ کہتا تھا کہ یہ دریا دلی تڑپائے گی

زاویہ در زاویہ منظر بدلتے جائیں گے
آنکھ ساری آنکھ بھر یہ زندگی تڑپائے گی

نغمے چپ ہیں اور رت بھی کہہ رہی ہے چپ رہو
کس کو اب دل کی یہ نا آسودگی تڑپائے گی

اور اک دن دشت بادل سے چرائیں گے نظر
اور مجھ کو اس کی یہ بے خانگی تڑپائے گی

کچھ نہ کچھ منظورؔ دل سے رابطہ رہ جائے گا
اس کو مجھ سے دوستی یا دشمنی تڑپائے گی

(حکیم منظور)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

Neighbourhood will suffer from the desert of fragrance
Whoever gets this will suffer

Who has ever seen the light being ganged
In what way will he be hurt by thirteen shabi

I used to cut flowers from silk on hard stone.
What was the news, this sight will hurt you.

I had dreams, I didn't know when I was sad.
I will suffer an unrealism of the tabirs.

I didn't say don't make friendship with flames
I didn't say that this river will hurt my heart.

Angle and angle will change the scene
Eyes will be full of eyes, this life will suffer.

The songs are silent and the night is also saying, keep quiet
Who will now suffer this disqualification of heart

And one day we will steal our eyes from the desert clouds.
And I'm going to have this uncomfortable

Something will remain in contact with the heart.
He will suffer friendship or enmity with me

(Hakeem Manzoor)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں