میں جس کو راہ دکھاؤں وہی ہٹائے مجھے میں نقشِ پا ہ…

میں جس کو راہ دکھاؤں وہی ہٹائے مجھے
میں نقشِ پا ہوں کوئی خاک سے اٹھائے مجھے

مہک اٹھے گی فضا میرے تن کی خوشبو سے
میں عود ہوں، کبھی آ کر کوئی جلائے مجھے

چراغ ہوں تو فقط طاق کیوں مقدر ہو
کوئی زمانے کے دریا میں بھی بہائے مجھے

میں مشتِ خاک ہوں، صحرا مری تمنا ہے
ہوائے تیز کسی طور سے اڑائے مجھے

اگر مِرا ہے تو اترے کبھی مرے گھر میں
وہ چاند بن کے نہ یوں دور سے لبھائے مجھے

وہ آئینے کی طرح میرے سامنے آئے
مجھے نہیں تو مرا عکس ہی دکھائے مجھے

امنڈتی یادوں کے آشوب سے میں واقف ہوں
خدا کرے کسی صورت وہ بھول جائے مجھے

وفا نگاہ کی طالب ہے، امتحاں کی نہیں
وہ میری روح میں جھانکے نہ آزمائے مجھے

(عارف عبدالمتین)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

Whomever I guide, he should remove me.
I am a footsteps, someone pick me up from the dust

The atmosphere will be fragrant with the fragrance of my body
I am Ara, someone come and burn me sometime

If I am a lamp then why should I be destined to be odd
Someone please flow me in the river of time

I am the masturbation of dust, the desert is my desire
Let the wind fly me somehow

If you are dead, come to my house sometime.
May he not be like the moon and make me feel like this from far away.

They came in front of me like a mirror
If not me then show me my reflection

I am aware of the tears of inviting memories.
May he forget me in any case

Loyalty is a seeker of sight, not of examination
May he peep into my soul and not test me

(Arif Abdul Mateen)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated


جواب چھوڑیں