اگر پڑ جائے عادت آپ اپنے ساتھ رہنے کی یہ ساتھ ایس…

اگر پڑ جائے عادت آپ اپنے ساتھ رہنے کی
یہ ساتھ ایسا ہے کہ انسان کو تنہا نہیں کرتا

صغیر ملال کا یومِ وفات
Jan 26, 1992

26 جنوری 1992ء کو اردو کے معروف ادیب، شاعر اور مترجم صغیر ملال کراچی میں وفات پاگئے۔

ادیب ،شاعر اور مترجم صغیر ملال 15 فروری 1951 کو ضلع راولپنڈی میں پیدا ہوئے تھے صغیر ملال کے افسانوی مجموعے انگلیوں پرگنتی کا زمانہ بے۔ کار آمد، ناول آفرینش اور نابود، شعری مجموعہ اختلاف اور دنیا کی منتخب کہانیوں کا مجموعہ بیسویں صدی کے شاہکار افسانے کے نام سے اشاعت پذیر ہوئے تھے وہ 26 جنوری 1992 کو وفات پاگئے تھے۔

تمام وہم و گماں ہے تو ہم بھی دھوکہ ہیں
اسی خیال سے دنیا کو میں نے پیار کیا

کیوں ہر عروج کو یہاں آخر زوال ہے
سوچیں اگر تو صرف یہی اک سوال ہے

بالائے سر فلک ہے تو زیر قدم ہے خاک
اس بے نیاز کو مرا کتنا خیال ہے

لمحہ یہی جو اس گھڑی عالم پہ ہے محیط
ہونے کی اس جہان میں تنہا مثال ہے

آخر ہوئی شکست تو اپنی زمین پر
اپنے بدن سے میرا نکلنا محال ہے

سورج ہے روشنی کی کرن اس جگہ ملالؔ
وسعت میں کائنات اندھیرے کا جال ہے

If you get habitual of living with yourself
It is such a company that does not leave a man alone

Death anniversary of Sagheer Mulal
Jan 26, 1992

On January 26, 1992, Urdu renowned adeeb, poet and translator Sagheer Malal died in Karachi.

Adeeb, poet and translator Sagheer Malal was born on 15 February 1951 in Rawalpindi district. The legendary collections of Sagheer Mulal. The time of counting on fingers is useless, the novels, afresh and nabood, the collection of poetry collection of differences and the world's selected stories. Twentieth century masterpieces were published in the name of myths. He died on January 26, 1992

If we have all illusions, we are also deceived.
I loved the world with the same idea

Why is every rise and fall here?
Think if this is the only question

If the head is above the sky, then the dust is under the feet.
How much do I care about this rich man?

This is the moment that is covered in the world at this moment
There is a lonely example in this world of being

Finally, the defeat is on our own land.
It is difficult for me to get out of my body.

The sun is the ray of light, meet in this place.
The universe is a trap of darkness in dimension.

Translated


جواب چھوڑیں