پھر رہِ عشق وہی زادِ سفر مانگے ہے وقت پھر قلب…

پھر رہِ عشق وہی زادِ سفر مانگے ہے
وقت پھر قلبِ تپاں، دیدۂ تر مانگے ہے

سجدے مقبول نہیں بارگۂ ناز میں اب
آستاں حسن کا سجدے نہیں، سر مانگے ہے

کس نے پہنچا دیا اس ہوش ربا وادی میں
کہ جہاں وحشتِ دل، زادِ سفر مانگے ہے

میری دنیا کے تقاضوں ہی پہ موقوف نہیں
دین بھی ایک نیا فکر و نظر مانگے ہے

عشق کو زاویۂ دید بدلنا ہوگا—–!!!
جلوۂ حسن، نیا ذوقِ نظر مانگے ہے

سب کی آنکھوں سے بچا کر جو کبھی لوٹے تھے
وقت ہر چور سے وہ لعل و گہر مانگے ہے

دین و دنیا ہو، کہ ہو عشق و ہوس اے ساغر
ہر کوئی خونِ جگر، خونِ جگر مانگے ہے

(ساغر نظامی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

Again the path of love asks for the same son of travel
Time is again asking for the warmth of the heart.

Prostration is not popular now in pride
It's not the prostration of beauty, it's asking for head

Who brought this senses to the valley of Riba?
Where the fear of heart, the son of travel asks for it.

I don't care about the requirements of my world
Religion also asks for a new thought and view

Love will have to change the angle of sight —–!!!
The beauty of beauty is asking for a new taste of sight

Saved from the eyes of everyone who had ever returned
Time asks every thief for red and pearl.

Be it religion and world, or love and lust, O Saghar
Everyone asks for blood of liver, blood of liver

(Saghar Nizami)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں