زبیر_الحسن_غافلؔ آج پٹنہ کے پارس ہاسپیٹل میں انتق…

زبیر_الحسن_غافلؔ آج پٹنہ کے پارس ہاسپیٹل میں انتقال کر گئے۔
إِنَّا لِلّهِ وَإِنَّـا إِلَيْهِ رَاجِعونَ
26؍جنوری 2021

نام #زبیر_الحسن اور تخلص #غافلؔ ہے۔ 07؍جنوری 1944ء کو گاؤں کملداہا، ارریہ صوبہ بِہار کے ایک متوسط زمیندار گھرانے میں پیدا ہوئے۔ والد ظہور الحسن حسنؔ بھی شاعر تھے۔ ابتدائی تعلیم گاؤں کے مکتب میں ہوئی۔ ہائی اسکول ارریا کے انگلش اسکول سے 1960ء میں فرسٹ ڈویژن سے پاس کیا۔ 1966ء میں پورنیہ کالج سے بی ایس سی کی ڈگری حاصل کی۔ 1968ء میں بی ایل کرنے کے بعد 1969ء میں ارریا سول کورٹ میں وکالت شروع کی۔ وکالت اور شاعری ساتھ ساتھ چلتی رہی۔ 1975ء میں مصنف کے مقابلہ جاتی امتحان میں کامیاب ہوئے، اور مصنف کے عہدے پر تقرری ہوئی۔ ملازمت کے دوران مختلف جگہوں و مختلف عہدوں پر فائز رہے۔ 2004ء کے جنوری ماہ میں بِہار کے ضلع مظفر پور سے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کے عہدے سے ریٹائر ہوئے۔ ان کا ایک شعری مجموعہ ”اجنبی شہر“ منظر عام پر آچکا ہے۔
زبیر الحسن غافلؔ آج 26؍جنوری 2021ء کو پٹنہ کے پارس ہاسپیٹل میں انتقال کر گئے۔
#بحوالہ_اجنبی_شہر

زبیر الحسن غافلؔ کے یومِ وفات پر منتخب کلام

شرم آنکھوں سے رخ سے حیا لے گئی
جانے تہزیب نَو اور کیا لے گئی

اب بچا ہی ہے کیا آشیاں میں مرے
چند تنکتے تھے وہ بھی ہوا لے گئی

گردشِ وقت کے دیکھیے تو ستم
ذہن انسان سے خوئے وفا لے گئی

اس قدر تیز آندھی حوادث کی تھی
سر سے آنچل بدن سے ادا لے گئی

رنگ پھولوں میں بھرے نسیم بہار
تیرے عارض کرنگ چرا لے گئی

زرد پتے بھی تھے رونق گلستاں
باد صرصر انہیں کیوں اڑا لے گئی
———-
بھولے سے نگاہ جب سوئے بام اٹھی تھی
تے اتنا ہی یاد ہے کہ کوئی بجلی گری تھی

کل شام لے گئی تھی مجھے بے خودی جہاں
یادوں کی اس گلی میں بڑی بھیڑ لگی ہے

دیوار دل پہ آج بھی ہلکا سا داغ ہے
شاید کبھی یہاں تری تصویر ٹنگی تھی

غافلؔ کے لبوں پر تو ہنسی دیکھتی ہم نے
کچھ لوگ مگر کہتے ہیں آنکھوں میں نمی تھی
….

✍️ انتخاب : شمیم ریاض

Zubair _ ul _ Hasan _ Negligence has passed away today in Patna's Paras Hospital.
ại̹nãạạ l ại̹nãạl ại̹nãạ ại̹nãạạ ại̹nãạl ại̹nãạ ại̹nãạạ ại̹nãạ
26 / January 2021

The name is #Zubair _ ul-Hasan and Takhlis #Gafl. Born on 07 / January 1944 in a middle landlord family in the village of Kamldaha, Arria Province of Bihar. Father Zahoor ul Hasan was also a poet. Early education of the village school I happened. Passed first division in 1960 from high school Arria's English school. BSC degree in 1966 from Purnia college. 1968 after doing BL in 1969 I started advocacy in Arria Civil Court. Advocacy and poetry went together. In 1975, he succeeded in competitive examination of the author, and was appointed as a writer. During the job, he was held at different places and different positions. He retired from Muzaffarpur district of Bihar in January 2004 as an Additional District and Session Judge. A collection of his poetry ′′ Ajni City ′′ has been revealed.
Zubair-ul-Hasan Negligence died today on 26 / January 2021 at Paras Hospital in Patna.
#بحوالہ_اجنبی_شہر

Selected words on the death anniversary of Zubair-ul-Hasan Gafl.

Shame took away modesty from the eyes
Don't know what else culture has taken away

Now what's left to die in Ashian
A few used to stare, she also took away the air

If you see the rotation of time, you will be tortured.
The mind took away the loyalty from the man

Such a strong wind was of accidents
The veil from the head took the pay from the body.

Naseem Spring filled with colors of flowers
Stole your aariz kirang

Yellow leaves were also a beautiful garden.
Why did bad sirsar take them away
———-
When the eyes were awake from the forgotten.
Do you remember that there was a lightning fall

Yesterday evening, the senseless world took me away.
There is a big crowd in this street of memories

There is still a light stain on the wall of the heart
Perhaps your picture was stuck here sometime

We saw the smile on the lips of negligent.
Some people say that there was moisture in the eyes
….

✍️ Selection: Shamim Riaz

Translated


جواب چھوڑیں