زمانے کو ہلا دینے کے دعوے باندھنے والو زمانے کو ہ…

زمانے کو ہلا دینے کے دعوے باندھنے والو
زمانے کو ہلا دینے کی طاقت ہم بھی رکھتے ہیں

جوؔش_ملسیانی کی برسی
27؍جنوری 1976

#پنڈت_لبھو_رام دنیائے ادب میں #جوشؔ_ملسیانی کے نام سے جانےگئے۔ یکم؍فروری 1884ء کو ملسیان، جالندھر میں پیدا ہوئے۔ دادا نہال چند گڑ کا کاروبار کرتے تھے۔ والد پنڈت موتی رام بھی ان پڑھ تھے۔پشاور کے قصہ خوانی بازار میں ان کی مٹھائی کی دکان تھی۔ والدہ نے بڑی محنت و مشقت سے جوشؔ کو تعلیم دلوائی۔ انہوں نے 1897ء میں ورنیکلر مڈل کا امتحان پاس کیا۔ جالندھر کے کئی اسکولوں میں درس و تدرس کا فریضہ انجام دیا۔ خانہ نشینی کے ایام میں شعرو شاعری اور شطرنج سے شغل فرماتے تھے۔شطرنج کے متعلق ایک بیاض بھی مرتب کی۔ شعر گوئی طالبعلمی کے زمانے میں ہی شروع ہوگئی تھی۔ مدتوں کلام پر اصلاح نہیں لی۔ جن دنوں وکٹر ہائی اسکول جالندھر میں پڑھاتے تھے کہیں سے داغؔ کے مشہور شاگرد سید شبر حسن نسیمؔ بھرتپوری کا دیوان ہاتھ لگ گیا۔ اس کے بعد زبان اور فن کی کوئی بھی حل طلب بات ہوتی تو خط کے ذریعے ان سے پوچھ لیتے۔ انہی کے توسط سے داغؔ کی شاگردی بھی اختیار کی۔ نثر میں ان کی سب سے اہم تصنیف دیوان غالب مع شرح 1950ء ہے۔ ایک زمانے میں اقبالؔ کے کلام پر ان کے مضامین کا ایک سلسلہ ہفتہ وار پارس لاہور میں جراح کے قلمی نام سے چھپا۔ ماہنامہ آجکل کی ادارت بھی کی۔ 1971ء میں ان کو پدم شری کے اعزاز سے نوازا گیا۔ پنڈت بال مکند عرشؔ ملسیانی ان کے اکلوتے بیٹے تھے۔ ان کی تصانیف میں ’بادۂ سرجوش‘، ’جنون وہوش‘، ’فردوس گوش‘ (منظومات وغزلیات)، ’نغمۂ سروش‘ (رباعیات)، ’دستورالقواعدفارسی‘،’مکتوبات جوش‘اور’منشورات جوش‘ قابل ذکر ہیں۔ 27؍جنوری 1976ء کو نکودر میں انتقال ہوگیا۔
…..
جوش ملسیانی کی برسی پر منتخب کلام

رہا پیشِ نظر حسرت کا باب اول سے آخر تک
پڑھی کس نے محبت کی کتاب اول سے آخر تک

اشارہ تک نہ لکھا کوئی اس نے ربط باہم کا
بہت بے ربط ہے خط کا جواب اول سے آخر تک

میسر خاک ہوتا زندگی میں لطف تنہائی
رہے دو دو فرشتے ہم رکاب اول سے آخر تک

خوشی میں بھی محبت دشمن صبر و سکوں نکلی
رہا دل میں وہی اک اضطراب اول سے آخر تک

غلط کوشی کی عادت نے اثر پیدا کیا ایسا
غلط نکلا گناہوں کا حساب اول سے آخر تک

مجھے لے آئی ہے عمر رواں کن خارزاروں میں
ہوا ہے چاک دامانِ شباب اول سے آخر تک

مجالِ گفتگو پائی تو اب کیوں مہر بر لب ہے
سنا دے او دلِ غفلت مآب اول سے آخر تک

اندھیرے میں تلاشِ دل اگر ہوتی تو کیا ہوتی
شبِ تاریک تھا دورِ شباب اول سے آخر تک

دہانِ زخم سے بھی جوشؔ حالِ دل سنا دیکھا
نمک پاشی ہی تھا ان کا جواب اول سے آخر تک

══━━━━✥•••✺◈✺•••✥━━━━══

وطن کی سر زمیں سے عشق و الفت ہم بھی رکھتے ہیں
کھٹکتی جو رہے دل میں وہ حسرت ہم بھی رکھتے ہیں

ضرورت ہو تو مر مٹنے کی ہمت ہم بھی رکھتے ہیں
یہ جرأت یہ شجاعت یہ بسالت ہم بھی رکھتے ہیں

زمانے کو ہلا دینے کے دعوے باندھنے والو
زمانے کو ہلا دینے کی طاقت ہم بھی رکھتے ہیں

بلا سے ہو اگر سارا جہاں ان کی حمایت پر
خدائے ہر دو عالم کی حمایت ہم بھی رکھتے ہیں

بہار گلشن امید بھی سیراب ہو جائے
کرم کی آرزو اے ابر رحمت ہم بھی رکھتے ہیں

گلہ نا مہربانی کا تو سب سے سن لیا تم نے
تمہاری مہربانی کی شکایت ہم بھی رکھتے ہیں

بھلائی یہ کہ آزادی سے الفت تم بھی رکھتے ہو
برائی یہ کہ آزادی سے الفت ہم بھی رکھتے ہیں

ہمارا نام بھی شاید گنہ گاروں میں شامل ہو
جناب جوشؔ سے صاحب سلامت ہم بھی رکھتے ہیں
…..
✍️ انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ

Those who claim to shake the world
We also have the power to shake the world

Death anniversary of Josh _ Malsiani
27 / January 1976

#Pandit _ Lubhu _ Ram known as #Josh _ Malsiani in world literature. Born on 1884st / February 1884 in Malsian, Jalandhar. Grandpa Nihal used to do the business of Chand Garh. Father Pandit Moti Ram also uneducated He had a sweet shop in Khawani Bazaar in Peshawar. His mother taught Josh with great hard work. He passed the Vernickler Middle examination in 1897 Teaching and teaching in many schools in Jalandhar Duty done. In the days of Khana Nashiini, poets used to engage with poetry and chess. Also arranged an anthem about chess. Poetry started in the age of student. There was no reform on the words for ages. In those days Victor High School In Jalandhar, the famous student of Dagh, Syed Shabar Hassan Naseem, Bharatpuri, used to teach from somewhere. After that, if there was any solution for language and art, they would have asked him through a letter. By his grace, the student of Dagh's Dagagh. Also adopted. His most important writing in prose is Diwan Ghalib with Rate 1950 In a time, a series of his articles on Iqbal's words were hidden weekly in Paras Lahore by the pen name of Jaraha. Monthly Aajkal He was also awarded the honor of Padma Shri in 1971 Pandit Bal Makand Arsh Malasiani was his only son. In his books, ' Bad Sarjosh ', ' Junoon Wahosh ', ' Firdous Gosh ' (Approval) Wagzaliat), ' Nagham Sarosh ' (Rabaayat), ' Dastoral Qawa Aadfarsi ', ' Maktubat Josh ' and ' Manishorat Josh ' are notable. Died in Nakodar on January 27, 1976
…..
Selected words on the death anniversary of Josh Malsiani

The chapter of desire was present from first to last.
Who read the book of love from first to last

He didn't even write a signal about the link between each other
The answer to the letter is very uncontrollable from the first to the end

Loneliness is available in life.
We are two angels from the first to the end.

Even in happiness, love turned out to be the enemy of patience and peace
The same disease remained in the heart from first to last

The habit of wrong koshi has created such an effect
The account of sins was wrong from first to last

My life has brought me to which thorns.
The chalk has happened from first to last.

If you have the courage to talk, why are you so kind now?
O heart of negligence, tell me from first to last

What would happen if there was a search of heart in darkness
The night was dark from the first time of youth to the end.

I have heard the heart's excitement even from the wound
His answer was from first to last.

══━━━━✥•••✺◈✺•••✥━━━━══

We also have love and affection for the land of our country.
We also have the desire that remains in the heart

We also have the courage to die if needed
We also have this courage, this bravery, this power.

Those who claim to shake the world
We also have the power to shake the world

If the whole world is on their support
O God, we also support every two worlds.

Spring garden of hope also get water
O cloud of mercy, we also have mercy

You have heard the complaint of no mercy from everyone.
We also complain about your mercy

It is good that you also love freedom.
Evil is that we also love freedom

Our name may also be among the sinners.
We also keep you safe from Josh.
…..
✍️ Selection: Ejaz Z H

Translated

جواب چھوڑیں