گلوں میں رنگ بھرے، بادِ نو بہار چلے – فیض احمد فیض…

گلوں میں رنگ بھرے، بادِ نو بہار چلے – فیض احمد فیض

گلوں میں رنگ بھرے، بادِ نو بہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

قفس اداس ہے یارو، صبا سے کچھ تو کہو
کہیں تو بہرِ خدا آج ذکرِ یار چلے

کبھی تو صبح ترے کنجِ لب سے ہو آغاز
کبھی تو شب سرِ کاکل سے مشکبار چلے

بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی
تمہارے نام پہ آئیں گےغمگسار چلے

جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شبِ ہجراں
ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے

مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

The flowers are filled with colors, the new spring has gone – Faiz Ahmad Faiz

The flowers are filled with colors, the new spring has gone.
Come on, let's get the business of Gulshan

The cage is sad friends, say something to Saba
Somewhere O God, let's remember the beloved today.

Sometimes the morning should start with your lips.
Sometimes the night of Kakal should go to the end of the night

The relationship of pain is big, even if this heart is poor
We will come in your name, we will go away.

What happened to us has passed but the night of separation
May our tears improve your end.

The place of Faiz (RA) is not in the way.
If someone comes out of a friend, then he is sleeping.

Translated


جواب چھوڑیں