احمر کاشی پوری شہر سے دُور، جو ٹُوٹی ہُوئی تعمیری…

احمر کاشی پوری

شہر سے دُور، جو ٹُوٹی ہُوئی تعمیریں ہیں !
اپنی رُوداد سُناتی ہُوئی تصویریں ہیں

میرے اشعار کو اشعار سمجھنے والو !
یہ مِرے خُون سے لِکھّی ہُوئی تحریریں ہیں

جانے کب تیز ہَوا کِس کو اُڑا کر لے جائے
ہم سبھی فرش پہ بِکھری ہُوئی تصویریں ہیں

ذہن آزاد ہے ہر قید سے اب بھی میرا
لاکھ ،کہنے کو مِرے پاؤں میں زنجیریں ہیں

آرزُو، کرب، اَلم ، شوق، تمنّا، حسرَت
زِیست وہ لفظ ہے، جس کی کئی تفسیریں ہیں

زندگی ہم کو وہاں لائی ہے احمر، کہ جہاں !
جُرم ہی جُرم ہیں، تعزیزیں ہی تعزیزیں ہیں

احمر کاشی پوری

Red Kashi Puri

Away from the city, the broken buildings!
These are the pictures telling their story.

Those who consider my poetry as poetry!
These are the writings written with my blood

Don't know when the strong wind will fly whom
We are all scattered pictures on the floor

My mind is still free from every prison.
Million, to say my feet have chains

Desire, pain, knowledge, passion, desire, beauty
Life is that word, which has many interpretations

Life has brought us there red, that world!
Crime is a crime, respects are respects.

Red Kashi Puri

Translated


جواب چھوڑیں