ترے سنگِ دَر نے بدل دیا ہے یہ پستیوں کو فراز میں …

ترے سنگِ دَر نے بدل دیا ہے یہ پستیوں کو فراز میں
کہ ہزار طُور جھلَک رہے ہیں مری جبینِ نیاز میں

مرا پیرَہن نہیں چاک ابھی،مجھے رحم کھا کے سنگھا بھی دے
یہ مہک جنوں کی بھری ہوئی ہے جو تیری زلفِ دراز میں

یہ وفا کا رنگِ شکستہ ہے، مری حسرتوں کا یہ خون ہے
یہ گلاب کی سی جو سرخیاں ہیں ترے تبسّمِ ناز میں

چمک اے حقیقتِ دلسِتاں!مجھے تازہ سانچے میں ڈھال دے!
میں وہ شمع ہوں جو پگھل چکی ہے تمام بزمِ مجاز میں

جو بہارِ عشق ہو دیکھنا، کبھی غزنوی پہ نگاہ کر
کہ شمیمِ گلشنِ خسروی ہے تباہ کُوئے ایاز میں

نظر آئینے پہ ہے، انکھڑیوں میں طلوعِ صبح کا رنگ ہے
وہ بجھا کے شمع سنور رہے ہیں سحر کو خلوتِ ناز میں

یہ ستارۂ سحری کی ضَو ہے افق کی سرخ بساط میں؟
کہ دلِ نیاز دھڑک رہا ہے کسی کے پہلوئے ناز میں؟

مجھے اِن کا محرمِ راز کر! اِنہیں میرے واسطے کھول دے!
یہ جو خط سے تیرے جبیں پہ ہیں، یہ جو خم ہے زلفِ دراز میں

(جوشؔ ملیح آبادی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

Your stone door has changed these turban in Faraz.
Thousands of mountains are shining in my Jabeen Niaz.

I haven't torn my feet yet, have mercy on me and give me a song
This fragrance of jinns is filled in your hair.

This color of loyalty is broken, this is the blood of my desires
These are the headlines of rose in your smile.

Shine o reality of heart! Shield me in a fresh mold!
I am the candle that has melted in all the authorized meetings

Look at the spring of love, sometimes look at Ghaznavi
That Shamim Gulshan-e-Khusroi is destroyed in Ayaz.

Eyes are on the mirror, eyes have the color of the rising morning
They are extinguishing the candle in the morning in the seclusion of pride

Is this star of Sehri in the red condition of the horizon?
Is the heart of Niaz beating in someone's first pride?

Make me their secret! Open them for me!
The letter that is on your lips, the one that is submissive in the drawer hair

(Josh Malih Abadi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں