کبھی سایہ ہے کبھی دھوپ مقدر میرا ہوتا رہتا ہے یوں…

کبھی سایہ ہے کبھی دھوپ مقدر میرا
ہوتا رہتا ہے یوں ہی قرض برابر میرا

اطہرؔ نفیس کا یومِ ولادت
22؍فروری 1933

کنور اطہر علی خاں اور اطہرؔ تخلص تھا۔ 22؍فروری 1933ء کو علی گڑھ (بھارت) میں پیدا ہوئے۔ 1948ء میں پاکستان آگئے۔ اطہرؔ نفیس طویل عرصے تک روزنامہ ’’جنگ‘‘ سے وابستہ رہے۔ انہوں نے کالم بھی لکھے اورمختلف عہدوں پر کام کیا۔تمام عمر تنہا گزاری اور کسی کو اپنا شریکِ حیات نہیں بنایا۔اطہرؔ نفیس کی شاعری کا مجموعہ ’’کلام‘‘ کے نام سے 1975ء میں ’’فنون‘‘ لاہور سے شائع ہوا۔ وہ طویل علالت کے بعد 21؍نومبر 1980ء کو کراچی میں انتقال کرگئے۔
بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد دوم)،محمد شمس الحق،صفحہ:274
اطہرؔ نفیس کے چند اشعار

اس نے مری نگاہ کے سارے سخن سمجھ لیے
پھر بھی مری نگاہ میں ایک سوال ہے نیا
—–
اک آگ غم تنہائی کی جو سارے بدن میں پھیل گئی
جب جسم ہی سارا جلتا ہو پھر دامن دل کو بچائیں کیا
—–
اطہرؔ تم نے عشق کیا کچھ تم بھی کہو کیا حال ہوا
کوئی نیا احساس ملا یا سب جیسا احوال ہوا
—–
اک شکل ہمیں پھر بھائی ہے اک صورت دل میں سمائی ہے
ہم آج بہت سرشار سہی پر اگلا موڑ جدائی ہے
—–
با وفا تھا تو مجھے پوچھنے والے بھی نہ تھے
بے وفا ہوں تو ہوا نام بھی گھر گھر میرا
—–
بہت چھوٹے ہیں مجھ سے میرے دشمن
جو میرا دوست ہے مجھ سے بڑا ہے
—–
داستانِ شبِ ہجر ان کو سنانے کا دن یہ نہیں
محفلِ عشق میں آج ہی تو وہ کچھ مہرباں آئے ہیں
—–
خوابوں کے افق پر ترا چہرہ ہو ہمیشہ
اور میں اسی چہرے سے نئے خواب سجاؤں
—–
دروازہ کھلا ہے کہ کوئی لوٹ نہ جائے
اور اس کے لیے جو کبھی آیا نہ گیا ہو
—–
لمحوں کے عذاب سہ رہا ہوں
میں اپنے وجود کی سزا ہوں
—–
وہ دور قریب آ رہا ہے
جب دادِ ہنر نہ مل سکے گی
—–
کبھی سایہ ہے کبھی دھوپ مقدر میرا
ہوتا رہتا ہے یوں ہی قرض برابر میرا
—–
ہمارے عشق میں رسوا ہوئے تم
مگر ہم تو تماشا ہو گئے ہیں
—–
یہ دھوپ تو ہر رخ سے پریشاں کرے گی
کیوں ڈھونڈ رہے ہو کسی دیوار کا سایہ
—–
کیا وقت پڑا ہے ترے آشفتہ سروں پر
اب دشت میں ملتے نہیں ملتے ہیں گھروں پر
—–
مثل بادِ صبا تیرے کوچے میں اے جانِ جاں آئے ہیں
چند ساعت رہیں گے چلے جائیں گے سر گراں آئے ہیں
—–
پھر کوئی نیا زخم نیا درد عطا ہو
اس دل کی خبر لے جو تجھے بھول چلا ہو
—–
جس طرح دل آشنا تھا شہر کے آداب سے
کچھ اسی انداز سے شائستۂ صحرا بھی تھا

Sometimes it's a shadow and sometimes it's sunshine
This is how my debt is equal.

Birthday of Athar Nafis
22 / February 1933

Kanwar was Athar Ali Khan and Athar Taklis. Born in Aligarh (India) on 22 / February 1933 He came to Pakistan in 1948 Athar Nafis remained associated with the daily ′′ Jang ′′ for a long time. He also wrote columns and worked in different positions. Spent all his life alone and did not make anyone his life partner. A collection of Athar Nafis's poetry named ′′ Kalam ′′ in 1975 ′′ Arts ′′ Lahore Published from. He died in Karachi on 21 / November 1980 after a long illness.
Bahwal: Poetry of Ghazal (Soon II), Muhammad Shams ul Haq, Page: 274
Some poems of Athar Nafis

He understood all the words of my eyes.
Still there is a new question in my eyes.
—–
A fire of sorrow of loneliness that spreads all over the body
When the whole body is burning, then save the heart.
—–
Athar, you did love something, you also say how happened
Got a new feeling or got the same situation
—–
One face is my brother again and another face is in my heart
We are very dedicated today but the next turn is separation.
—–
When I was unfaithful, there were no one to ask me.
When I am unfaithful, my name is also in every house.
—–
My enemies are very small than me
Who is my friend is bigger than me
—–
This is not the day to tell them the story of the night of separation
Some kind people have come to the gathering of love today.
—–
May your face always be on the horizon of dreams
And I decorate new dreams with the same face
—–
The door is open so that no one returns
And for the one who has never come
—–
I am bearing the torment of moments.
I am the punishment of my existence
—–
He's getting closer and closer
When you will not be able to find the skill
—–
Sometimes it's a shadow and sometimes it's sunshine
This is how my debt is equal.
—–
You got disgraced in our love
But we have become a spectacle
—–
This sunshine will be disturbed from every direction
Why are you looking for the shadow of a wall?
—–
What a time it has been on your proud heads
Now we don't meet in the desert at home
—–
Like the rain of Saba, I have come to your street, my beloved.
We will stay for a few hours, we will go away, we have come with a big head
—–
Then give a new wound new pain
Take the news of the heart that has forgotten you
—–
The way the heart was familiar with the etiquette of the city
In the same way, the desert was also there.

Translated


جواب چھوڑیں