اتنا مانوس ہوں فطرت سے کلی جب چٹکی جھک کے میں نے…

اتنا مانوس ہوں فطرت سے کلی جب چٹکی
جھک کے میں نے یہ کہا مجھ سے کچھ ارشاد کیا؟
..
جوشؔ ملیح آبادی کا یومِ وفات
22؍فروری 1982

جوشؔ ملیح آبادی، نام شبّیر حسن خاں، اور تخلص جوشؔ تھا۔ 05؍دسمبر 1898ء کو ضلع ملیح آباد (یوپی) میں پیدا ہوئے۔ جوش نے شعری فضا میں آنکھ کھولی۔ جوش کی شاعری تیرہ سال سے شروع ہوگئی تھی۔ ابتدا میں عزیز لکھنوی سے اصلاح لی، مگر بعد میں اپنے وجدان و ذوق کو رہبر بنایا۔ والد کے انتقال کے بعد جوش سینیئر کیمبرج سے آگے تعلیم حاصل نہ کرسکے۔ جوش جامعہ عثمانیہ حیدرآباد دکن کے دار الترجمہ میں کافی عرصہ ملازم رہے۔ اس کے بعد دہلی سے اپنا رسالہ ’کلیم‘ جاری کیا۔ بعد ازاں حکومت ہند کے رسالہ ’’آج کل‘‘ کے مدیر اعلا منتخب ہوئے۔ آزادی کے بعد بھی جوش کچھ عرصہ ہندوستان میں رہے۔ اس کے بعد پاکستان آگئے اور اردو ترقیاتی بورڈ، کراچی کے مشیر خاص مقرر ہوئے۔ کچھ عرصے بعد ملازمت کا یہ سلسلہ منقطع ہوگیا۔
22؍فروری 1982ء کو انتقال کرگئے۔ ان کے شعری مجموعوں کے نام یہ ہیں:
’روحِ ادب‘، ’نقش و نگار‘، ’شعلہ وشبنم‘، ’فکرونشاط‘، ’جنون وحکمت‘، ’فرش وعرش‘، ’سیف وسبو‘، ’الہام و افکار ‘، ’رامش و رنگ ‘، ’آیات ونغمات‘، ’سرود وخروش‘ ،’سموم و صبا ‘۔
ان کا کچھ کلام غیر مطبوعہ بھی ہے۔ وہ ایک قادر الکلام اور عہد آفریں شاعر تھے۔ اقبال کے بعد جوشؔ نظم کے سب سے بڑے شاعر ہیں۔
جوشؔ ملیح آبادی کے منتخب اشعار
..
اب اے خدا عنایتِ بے جا سے فائدہ
مانوس ہو چکے ہیں غمِ جاوداں سے ہم
—–
اب تک نہ خبر تھی مجھے اجڑے ہوئے گھر کی
وہ آئے تو گھر بے سر و ساماں نظر آیا
—–
اب دل کا سفینہ کیا ابھرے طوفاں کی ہوائیں ساکن ہیں
اب بحر سے کشتی کیا کھیلے موجوں میں کوئی گرداب نہیں
—–
اتنا مانوس ہوں فطرت سے کلی جب چٹکی
جھک کے میں نے یہ کہا مجھ سے کچھ ارشاد کیا؟
—–
زیست ہے جب مستقل آوارہ گردی ہی کا نام
عقل والو ! پھر طوافِ کوئے جاناں کیوں نہ ہو
—–
ادھر تیری مشیت ہے ادھر حکمت رسولوں کی
الٰہی آدمی کے باب میں کیا حکم ہوتا ہے
—–
ﷲ رے حسنِ دوست کی آئینہ داریاں
اہلِ نظر کو نقش بہ دیوار کر دیا
—–
اس دل میں ترے حسن کی وہ جلوہ گری ہے
جو دیکھے ہے کہتا ہے کہ شیشے میں پری ہے
—–
اس کا رونا نہیں کیوں تم نے کیا دل برباد
اس کا غم ہے کہ بہت دیر میں برباد کیا
—–
انسان کے لہو کو پیو اذنِ عام ہے
انگور کی شراب کا پینا حرام ہے
—–
اک نہ اک ظلمت سے جب وابستہ رہنا ہے تو جوشؔ
زندگی پر سایۂ زلف پریشاں کیوں نہ ہو
—–
پہچان گیا سیلاب ہے اس کے سینے میں ارمانوں کا
دیکھا جو سفینے کو میرے جی چھوٹ گیا طوفانوں کا
—–
بہت جی خوش ہوا اے ہمنشیں کل جوشؔ سے مل کر
ابھی اگلی شرافت کے نمونے پائے جاتے ہیں
—–
دنیا نے فسانوں کو بخشی افسردہ حقائق کی تلخی
اور ہم نے حقائق کے نقشے میں رنگ بھرا افسانوں کا
—–
ذرا آہستہ لے چل کاروانِ کیف و مستی کو
کہ سطح ذہن عالم سخت نا ہموار ہے ساقی
—–
سوزِ غم دے کے مجھے اس نے یہ ارشاد کیا
جا تجھے کشمکشِ دہر سے آزاد کیا
—–
گزر رہا ہے ادھر سے تو مسکراتا جا
چراغِ مجلسِ روحانیاں جلاتا جا
—–
محفل عشق میں وہ نازشِ دوراں آیا
اے گدا خواب سے بیدار کہ سلطاں آیا
—–
وہ کریں بھی تو کن الفاظ میں تیرا شکوہ
جن کو تیری نگہِ لطف نے برباد کیا
—–
کام ہے میرا تغیر نام ہے میرا شباب
میرا نعرہ انقلاب و انقلاب و انقلاب
—–
کشتیٔ مے کو حکمِ روانی بھی بھیج دو
جب آگ بھیج دی ہے تو پانی بھی بھیج دو
—–
کسی کا عہد جوانی میں پارسا ہونا
قسم خدا کی یہ توہین ہے جوانی کی
—–
ہم گئے تھے اس سے کرنے شکوۂ دردِ فراق
مسکرا کر اس نے دیکھا سب گلا جاتا رہا
—–
دامنِ جوشؔ میں پھر بھر کے متاعِ کونین
خدمتِ پیرِ مغاں میں پئے نذرانہ چلیں

انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ

I am so familiar with nature when I pinch the bud
I bowed down and said this, did you say something to me?
..
Death anniversary of Josh Malih Abadi
22 / February 1982

Josh Malih Abadi, name Shabbir Hassan Khan, and Takhlis Josh. Born on 05 / December 1898 in Malihabad District (UP). Josh opened his eyes in the poetry of poetry. The poetry of Josh started from thirteen years. Initially, he took reform from Aziz Lucknowi, but later made his passion and taste a guide. After his father's death, Josh Senior couldn't study further from Cambridge. Josh was employed for a long time in the Usmania University of Hyderabad Deccan. Then released his magazine 'Kaleem' from Delhi. Later he was elected editor of the magazine ′′ Aaj Kal ′′ of the government of India. Josh remained in India for some time even after independence. Then came to Pakistan and Urdu developmental Board, Karachi's special advisor was appointed. After some time, the job series was disconnected.
Died on February 22, 1982 Here are the names of his poetry collections:
The spirit of politeness, the role of Nagar, the flame and shabnam, the thought of activity, the madness and wisdom, the carpet and the throne, the Saif Vesbu, the lam and the thoughts, the rams and the color, the verses and tones, ' The anthem and the roar ', ' Toxom and Saba '
Some of his words are unpublished. He was a Qadir Kalam and Ahad Afreen poet. After Iqbal, Josh is the greatest poet of the poem.
Selected poems of Josh Malih Abadi
..
Now, O God, benefit from the unnecessary blessings
We have become familiar with the sorrows of eternal life.
—–
Till now I was not aware of the ruined house
When he came, the house was seen without any reason.
—–
Now the heart's heart is so much, the winds of the storm are still stable.
Now the boat played from the ocean, there is no vortex in the waves.
—–
I am so familiar with nature when I pinch the bud
I bowed down and said this, did you say something to me?
—–
When life is the name of permanent wandering
Wise people! Then why shouldn't there be a beloved in the tawaf
—–
Here is your desire, here is the wisdom of the prophets.
What is the order of God in man?
—–
Allah, the mirror of a beautiful friend
They have turned the people of eyes into a wall.
—–
In this heart, your beauty has that glow.
The one who has seen says that there is a fairy in the glass
—–
He didn't cry why did you ruin my heart
He is sad that he ruined it in a long time.
—–
Drink the blood of a human being, it's public permission.
Drinking grape wine is forbidden
—–
When you have to stay connected to every darkness, then you are enthusiasm
Why don't you get confused on life?
—–
He recognized that there is a flood of desires in his chest
When I saw Safina, I missed the storm.
—–
I am very happy to meet Josh yesterday.
Now the next nobility samples are found.
—–
The world gave the fiction the bitterness of sad facts
And we have filled the colorful stories in the map of facts.
—–
Take the caravan of Kaif and masti slowly.
That level of mind is very hard and not smooth.
—–
He said this to me after giving me the pain of sorrow
Go and freed you from the conflict of darkness.
—–
It's passing from here so keep smiling
Keep lighting the lamp of the gathering of souls
—–
He came to the gathering of love.
O ass, wake up from the dream that the king came
—–
Even if they do, in what words do you complain
Those who were ruined by your joy
—–
It's my work, my change is my name, my youth.
My slogan revolution and revolution and revolution
—–
Send the order of flow to the boat as well.
When you have sent fire, send water too.
—–
Someone's promise to be pious in youth
I swear to God, this is an insult to youth
—–
We went to him to complain about the pain of separation
He smiled and saw everything was strangled
—–
In the heart of excitement, again full of enjoyment
Let's go to the service of Pir Mughan.

Selection: Ejaz Z H

Translated


جواب چھوڑیں