تھا جوش و خروش اتّفاقی ساقی اب زندہ دِلی کہاں ہے …

تھا جوش و خروش اتّفاقی ساقی
اب زندہ دِلی کہاں ہے باقی ساقی
میخانے نے رنگ و روپ بدلا ایسا
میکش میکش رہا، نہ ساقی ساقی
….
مولانا ابوالکلام محی الدین احمد آزاد کا یومِ وفات
February 22, 1958

والد محترم مولانا خیر الدین (۱۸۳۱۔ ۱۹۰۸)نے انگریزوں کے ظلم و ستم سے بد دل ہو کر مکۂ معظمہ کی طرف ہجرت کی۔ جہاں عرب بیوی عالیہ مرحومہ کے بطن سے ۱۸۸۸ء میں مولانا ابوالکلام آزادؔ پیدا ہوئے۔ آپ کا تاریخی نام فیروز بخت تھا۔ مولوی خیرالدین نے ۱۸۹۸ء میں ہندوستان کو وطن ثانی بنایا اور کلکتہ میں سکونت اختیار کی۔ مولانا ۱۳سال کی عمر میں درس نظامی اور دیگر کتب متداولہ کی تدریس سے فارغ ہو چکے تھے اور آپ نے اسی عمر میں دینی علوم ، طب و فلسفہ وغیرہ میں قابل رشک استعداد پیدا کر لی۔
مولانا نے ابتداء عمری میں شاعری کی اور کچھ غزلیں کہیں۔ امیر مینائی اور داغ دہلوی سے اصلاح لی۔ ’’ارمغان فرخ ‘‘ممبئی میں مولانا آزاد کی پہلی غزل شائع ہوئی۔ مولانا بڑی خو بصورت نثر لکھتے تھے اتنی خوبصورت اور لاجواب نثر کہ شاعروں کو بھی شرمسار کر دیتی تھی۔ مولانا حسرت موہانی کا یہ شعر مولانا کی نثر کی تابناکیوں کا اندازہ لگانے کے لئے کافی ہے ؂
جب سے دیکھی ابوالکلام کی نثر
نظم حسرت میں کچھ مزا نہ رپا
آپ کا انتقال ۱۹۵۸ء کو ہوا۔
..
نشتر بہ دل ہے آہ کسی سخت جان کی
نکلی صدا تو فصد کھلے گی زبان کی
گنبد ہے گرد بار تو ہے شامیانہ گرد
شرمندہ مری قبر نہیں سائبان کی
آزاد بے خودی کے نشیب و فراز دیکھ
پوچھی زمین کی تو کہی آسمان کی

سب لوگ جدھر ہیں وہ ادھر دیکھ رہے ہیں
ہم دیکھنے والوں کی نظر دیکھ رہے ہیں

آزاد بے خودی کے نشیب و فراز دیکھ
پوچھی زمین کی تو کہی آسمان کی
..
ہے عکس روئے یار دل داغ دار میں
کچھ تیرگی نہیں ہے ہمارے مزار میں
کچھ ایسے محو ہو گئے اقرار یار میں
لطف انتظار کا نہ ملا انتظار میں
دوچند اس سے حسن پہ ان کو غرور ہے
جتنا نیاز و عجز ہے مجھ خاکسار میں
وہ پیاری پیاری شکل وہ انداز دل فریب
رہتا نہیں ہے دیکھ کے دل اختیار میں
ایسی بھری ہیں یار کے دل میں کدورتیں
نامہ لکھا ہے مجھ کو تو خط غبار میں
ہم کچھ وصف کاکل پیچاں نہ لکھ سکے
مضموں الجھ رہے ہیں قلم مشکبار میں
کچھ بھی نہ اس کی وعدہ خلافی کا رنج ہو
آ جائے موت ہی جو شب انتظار میں
اے موت تو ہی آنہ آئیں گے وہ کبھی
آنکھیں ہیں اک عرصے سے وا انتظار میں
سمجھو کہ کس کو کہتے ہیں تکلیف انتظار
بیٹھو کبھی جو دیدۂ خوننابہ یار میں
سودائے زلف و رخ میں غضب کا ہے انتظار
اب آ گئے ہیں گردش لیل و نہار میں
بیٹھے ہیں آج آپ تو پہلو میں غیر کے
ہم ہوں گے کل عروس اجل کے کنار میں
مٹ کر ہوں خاک سرمہ کی مانند بھی اگر
پھر بھی کبھی سمائیں نہ ہم چشم یار میں
کہنے لگے کہ آپ کی نیت تو ٹھیک ہے
بیتاب مجھ کو دیکھ کے بوس و کنار میں
شکوہ کریں تو کیا کریں جور و جفا کا ہم
سب عمر کٹ گئی ستم روزگار میں
مرنے کے بھی ہے وہی کشمکش خدا
میں قبر میں ہوں دل مرا ہے کوئے یار میں
تقدیر کے لکھے کو مٹانا محال ہے
کیا دخل ہے مشیت پروردگار میں
بجلی سی کوند جاتی ہے گھونگھٹ کی آڑ میں
کیا شوخیاں ہیں اس نگہ شرمسار میں
دعوائے عاشقی پہ یہ کہنے لگا وہ بت
اللہ کی شان !آپ بھی ہیں اس شمار میں
پامال کیجئے گا سمجھ کر خدا اسے
ہے آپ ہی کا گھر دل بے اختیار میں
سودا نیا ، جنوں ہے نیا ، ولولے نئے
اب اور ہی بہار ہے اب کے بہار میں
دل پر لگی وہ چوٹ کہ اف کر کے رہ گئے
ٹوٹا جو گرکے جام کوئی بزم یار میں
گر ان پہ اختیار نہیں ہے نہیں سہی
غم ہے یہی دل بھی نہیں اختیار میں
اے دل خدا کی یاد میں اب صرف عمر ہو
کچھ کم پھرے صنم کدۂ روزگار میں

The excitement and enthusiasm was a coincidence.
Where is the living heart now, the rest of the bartender
The bar has changed the color and face like this
I am not a bartender nor a bartender.
….
Death anniversary of Maulana Abul Kalam Mohiuddin Ahmed Azad
February 22, 1958

Father Maulana Khairuddin (1831) migrated to Makkah Muazma after being disrupted by the oppression of the British. Where Maulana Abul Kalam Azad was born in 1888 from the deceased Arab wife Alia. Your historic name was Feroz Bakht. Maulvi Khairuddin made India a second homeland in 1898 and settled in Calcutta. Maulana had been dismissed from the teaching of Nizami and other books at the age of 13 And at the same age, you have created a capable capacity in religious sciences, medicine and philosophy etc.
Maulana did poetry in the beginning of his age and said some lyrics. He took reform from Amir Minai and Dagh Dehlvi. ′′ Armughan Farrukh ′′ The first poem of Maulana Azad was published in Mumbai. Maulana used to write a very beautiful prose, such a beautiful and brilliant prose that Even poets were ashamed. This poetry of Maulana Hasrat Mohani is enough to assess the prose of Maulana's prose.
Ever since I saw the prose of Abul Kalam
Don't enjoy the poem of Hasrat
He died on 1958
..
Nishtar is the heart of a hard soul.
When the sound slipped, the percentage of the tongue will open.
The dome is around, the bar is around Syrian.
I am not ashamed of my grave but of my shadow.
Look at the lows of free senselessness.
Asked about the earth and said about the sky

Everyone is looking where they are
We are looking at the eyes of the beholders

Look at the lows of free senselessness.
Asked about the earth and said about the sky
..
The reflection of my friend is crying in the stained heart
There is no swimming in our shrine.
Some people have become obsessed in Iqrar Yar
Did not get the pleasure of waiting in waiting
They are proud of their beauty more than this.
I am as humble as I am.
That cute cute face that style heart deception
The heart doesn't stay in control after seeing
My friend's heart is filled with such pains
I have written a letter in dust.
We couldn't write some characteristic behind yesterday.
The pen is confusing in the pen of Mashkbar.
Let nothing be sad about breaking his promise
Death comes when the night of waiting
O death, they will come someday
Eyes are waiting for a long time
Understand what is called pain waiting
If you ever sit in the eyes of my beloved.
There is a wait of anger in the hair and face.
Now the rotation has come in the night and day
Today you are sitting beside a stranger
Tomorrow we will be in the banks of death.
Even if I am erased like a kohl's dust
Even then we never smile in the eyes of our beloved.
They said that your intention is right
Curious to see me in Boss and Kalar
If we complain, what should we do about courage and disloyalty?
All life has been spent in employment.
God has the same conflict even after death.
I am in the grave, my heart is dead in some friend.
It is difficult to erase the writing of fate.
What is the interference in the will of God
The lightning goes away under the guise of ghunghat.
What an elegance is there in this shame.
That idol started saying this on the prayer of love
The glory of Allah! You are also in this count
God will crush him after understanding him
Your home is in the heart of control
Deal is new, Jinn are new, exciting is new
Now there is another spring in this spring.
The heart was hurt and they left after getting hurt.
When the wine is broken in a gathering of beloved.
If you don't have control over them, then you will
This is sorrow, even the heart is not in control.
O heart, in the remembrance of God, now only age is there.
Some less wandered in employment

Translated


جواب چھوڑیں